ہندوستان میں 19،400 اسٹارٹپ: اقتصادی جائزہ

0

اقتصادی جائزے میں کہا گیا ہے کہ ہندوستان میں ٹیکنالوجی کی بنیاد پر19،400 نئی كپنيا یعنی اسٹارٹپ ہیں، لیکن ان سرمایہ کاروں کے لئے واپسی کی شرح اب بھی بہت کم ہے جو کہ ایسے اقدامات میں شروعاتی سرمایہ لگا کر کمائی کرنا چاہتے ہیں۔

وزیر خزانہ ارون جیٹلی نے اقتصادی جائزہ 2015-16 پارلیمنٹ میں پیش کیا۔ اس میں کہا گیا ہے کہ ملک میںاسٹارٹپ علاقے میں 'غیر معمولی نقل و حرکت' دیکھنے کو مل رہی ہے جو کہ ای کامرس و مالی خدمات پر مرکوز ہے۔

جائزے کے مطابق، ہندوستانی اسٹارٹپ کمپنیوں نے 2015 کی پہلی ششماہی میں فینانسنگ کے لئے 3.5 ارب ڈالر کی رقم جٹائی اور ہندوستان میں سرگرم سرمایہ کاروں کی تعداد 2014 میں بڑھ کر 490 ہو گئی جو کہ 2014 میں 220 تھی۔' اس کے مطابق 2010 کے بعد سے تقریبا 2000 اسٹاٹرٹپ میں وینچر کیپٹل: انجل سرمایہ کاروں کا پیسہ لگا ہے اور ان میں سے 1005 اسٹارٹپ تو 2015 میں ہی بنے ہیں۔

اس کے مطابق، 'یہ ضروری ہے کہ اسٹارٹپ میں بھی آمدنی ہوتی ہے، جو کہ ان کمپنیوں کے درج ہونے کے طور پر ہو سکتا ہے اور اس سے بنیادی نجی سرمایہ کاروں کے پاس اپنے شروعاتی سرمایہ کاری پر کمائی کرنے کی اجازت ملتی ہے اور وہ اس دولت کو اسی طرح کی دوسرے کاروباروں میں لگا سکتے ہیں۔ ہندوستان میں واپسی کی شرح اب کم ہے۔

سیبی کی فہرست کے مطابق نئ پالسی آنے کے بعد شرح واپسی میں اضافے کی اميد ہے۔