ایم بی بی ایس کی تعلیم درمیان میں چھوڑ ماحولیات کے ڈاکٹر بنے جہدکار پرشوتم ریڈی

تجرباتی اور عملی تجاویز سے  چلائی تحریکیں ۔۔۔ ماحولیاتی تحفظ کے لئے نوجوانوں کی فوج بنانے میں مصروف ہیں پرشوتم ریڈی

0


واقعہ 1996 کا ہے۔ تلنگانہ کے نلگونڈہ ضلع کے ایک گاؤں میں کسانوں کا اجلاس چل رہا تھا۔ کسان اور گاؤں کے لوگ فلوروسس کے مسئلے سے نجات حاصل کرنے کے اقدامات تلاش کرنے میں لگے تھے۔ ان دنوں نلگونڈہ ضلع کے کئی گاؤں میں فلورائیڈ کی مقدار زیادہ ہونے کی وجہ سے پانی پینے کے قابل نہیں رہ گیا تھا۔ ایک لحاظ سے پانی زہر بن گیا تھا۔ چونکہ لوگوں کے پاس پانی کے حصول کا کوئی اور ذریعہ نہیں تھا، وہ یہی پانی پینے پر مجبور تھے۔ نتیجہ یہ ہوا کہ ضلع میں بہت سے لوگ فلوروسس کا شکار ہو گئے۔ فلوروسس نے کئی لوگوں کو اپنی زد میں لے لیا تھا۔ بچے، بوڑھے، نوجوان اور خواتین ہر عمر کے لوگ اس سے متاثر ہوئے تھے۔ متاثرین کے دانت پیلے پڑ گئے۔ ہاتھوں اور پیروں کی ہڈیاں مڑ گئیں اور وہ معذور ہو گئے۔ بہت سے لوگوں کو جوڑوں کا درد اتنا ستانے لگا کہ وہ کوئی کام کرنے کے قابل ہی نہیں رہے۔ فلورائڈ ملا پانی پینے کی وجہ سے ہزاروں لوگ ہڈیوں، پٹھوں، کلیجے اور پیٹ سے متعلق طرح طرح کی بیماریوں کا شکار ہو گئے تھے۔ حاملہ خواتین پر بھی اس بیماری کا بہت برا اثر پڑا۔ آلودہ پانی پینے کی وجہ سے بہت سی خواتین کو اسقاط حمل ہو گیا۔ آب پاشی کے لئے مناسب پانی نہ ملنے کی وجہ سے لاکھوں ایکڑ زمین بیکار پڑ گئی تھی۔

فلوروسس میں مبتلا مریضوں کی تعداد مسلسل بڑھتی جا رہی تھی۔ لوگوں میں خوف و ہراس کا ماحول تھا، عجیب سا خوف انہیں ستانے لگا تھا۔ ریاستی حکومت سے کئی بار فریاد کیے جانے کے باوجود کوئی مدد نہیں ملی تھی۔ ضلع کے حکام خاموش تھے۔ تقریبا سارا نلگونڈہ ضلع سرکاری غفلت کا شکار تھا۔ ضلع میں بہت سے لوگ معذور ہو رہے تھے تو بہت سے نامرد۔ حکومت، افسر تمام مسئلہ کے بارے میں جانتے تھے۔ مسئلہ کا حل بھی جانتے تھے۔ حل صرف اتنا تھا کہ ان گاؤں میں پینے کے لئے محفوظ پانی مہیا کرایا جائے، لیکن ریاستی حکومت نے کوئی ٹھوس قدم نہیں اٹھائے۔ گاؤں والوں نے حکومت پر دباؤ ڈالنے کے مقصد سے بہت تحریکیں چلائیں۔ ان تحریکوں کا حکومت پر کوئی اثر نہیں پڑا۔ حکومت اس کو نظر انداز کرتی رہی۔

اب کسانوں اور دوسرے گاؤں والوں نے ٹھان لیا تھا کہ حکومت کے خلاف بڑی تحریک ۔ اس بڑے تحریک کی روپ-ریکھا فیصلہ کرنے کے مقصد سے ہی گاؤں میں میٹنگ بلائی گئی۔ اس اجلاس میں کسانوں کی مدد کے لئے شعبہء سیاسیات کے ایک پروفیسر بھی پہنچے ہوئے تھے۔ اجلاس میں مختلف لوگوں نے الگ الگ رائے دی۔ اتنا طے تھا کہ حکومت کے خلاف بڑی تحریک چلائی جائے۔ زیادہ تر کسان متاثر لوگوں کو بھاری تعداد میں جٹاكر دھرنا یا مظاہرہ کرنے کے حق میں تھے۔

لیکن اجلاس میں ایک شخص کی سوچ کچھ مختلف تھی۔ ان کا نظریہ کچھ اور تھا۔ اجلاس میں موجود اس شخص نے کسانوں کو ایک ایسی مشورہ دیا جسے سن کر سارے حیران ہو گئے۔ انہیں اس طرح کی تحریک کا احساس بھی نہیں تھا۔ سیاسیات کے اس پروفیسر نے کسانوں کو بتایا کہ لوک سبھا تحلیل کی جا چکی ہے۔ انتخابات جلد بعد ہونے والے ہیں۔ ایسی صورت میں صرف ریاست ہی نہیں بلکہ پورے ملک کی توجہ نلگونڈہ ضلع کے مسئلہ کی طرف متوجہ کرنے کا ایک بہترین اقدام ان کے پاس ہے۔ عالم نے مشورہ دیا کہ اس بار نلگونڈہ لوک سبھا سیٹ کے لیے ہونے والے انتخابات میں فلوروسس کی طرف سے متاثر کئی سارے کسان انتخابات لڑیں گے۔ زیادہ سے زیادہ لوگوں کے انتخابات لڑنے پر خبر ملک بھر میں پھیلے گی۔

کسانوں نے پروفیسر کا مشورہ مان لیا۔ بڑی تعداد میں نامزدگیاں داخل کی گئیں۔ نامزدگی-کاغذات کی جانچ کے بعد 540 نامزدگیاں درست پائی گئیں۔ یہ 1996 کے لوک سبھا انتخابات میں ایک حلقہ میں سب سے زیادہ نامزدگیا تھیں۔ اس سے پہلے کبھی بھی کسی بھی لوک سبھا سیٹ کے لئے اپنی ذیادہ نامزدگیاں نہیں داخل ہوئیں تھی۔ لازمی تھا کہ سارے ملک کی توجہ نلگونڈہ کی جانب متوجہ ہوا۔ ملک بھر نے جان لیا کہ نلگونڈہ کے کسان فلوروسس سے متاثر ہیں اور کسانوں نے ملک و دنیا کی توجہ حکومت کی ناکامی کی طرف متوجہ کرنے کے مقصد ہی اتنی نامزدگیاں داخل کی ہیں۔ اس کا نتیجہ یہ بھی ہوا کہ الیکشن کمیشن کے پاس سارے امیدواروں کو دینے کے لئے الیکشن نشان بھی نہیں تھے اور انتخابات کو ملتوی کرنا پڑا۔ سارا ملک جان گیا کہ نلگونڈہ میں انتخابات ملتوی ہونے کی کیا وجہ ہے۔ بہت سارے لوگ جان گئے کہ نلگونڈہ کے لوگ فلوروسس سے بہت زیادہ پریشان ہیں۔ ریاستی حکومت کی بھی خوب فضیحت ہوئی۔ بدنامی سے تلملا گئی ریاستی حکومت کو 3 لاکھ ایکڑ زمین کو آبپاشی-پانی اور 500 گاؤں کو محفوظ مشروبات-پانی مہیا کرانے کے انتظامات کرنے پڑے۔

کسانوں نے کئی سالوں تک تحریک چلائی تھی، لیکن نتیجہ نہیں نکلا تھا، لیکن سیاسیت کے پروفیسر کے مشورہ سے کچھ ہی دنوں میں سالوں پرانا مسئلہ کی حل ہو گیا۔ کسان سارے اس پروفیسر کے مرید ہو گئے۔

اس معروف شخصیت کو لوگ پروفیسر پرشوتم ریڈی کے طور پر جانتے ہیں۔

وہی پروفیسر پرشوتم ریڈی، جنہوں نے کئی تحریکوں کی قیادت کی اور انہیں کامیاب بنایا۔ کئی بار تحریکوں میں براہ راست حصہ نہ لیا ہو، لیکن انہوں نے اپنے تجرباتی اور عملی تجاویز، سوجھ بوجھ، سیاسی حکمت عملی کی مدد سے سے انہیں کامیاب بنانے میں اہم کردار ادا کیا ہے۔

ایک خاص ملاقات میں پرشوتم ریڈی نے فلوروسس میں مبتلا نلگونڈہ ضلع کے کسانوں کی تحریک کی یادیں تازہ کرتے ہوئے بتایا کہ ان دنوں غیر منقسم اندھراپردیش کے چیف منسٹر چندر بابو نائیڈو اور اس وقت کے چیف الیکشن کمشنر ٹی این شیشن خود کو بہت ہی زیادہ ماہر سمجھتے تھے۔ انہیں لگتا تھا کہ کوئی بھی ان کے آگے ٹک نہیں سکتا، لیکن عوام اور جمہوریت کی طاقت کے سامنے انہیں جھکنا پڑا۔ شیشن الیکشن نہیں کروا پائے اور چندر بابو نايڈو کو شرمشار ہوکر مجبوراً نلگونڈہ کے عوام کو محفوظ پانی دستیاب کروانا پڑا۔ پرشوتم ریڈی نے کہا، 

"نلگونڈہ کے لوگوں کا اعتماد سیاسی جماعتوں اور سیاست دانوں پر سے اٹھ چکا تھا۔ اور جب میں نے انہیں لوک سبھا انتخابات میں بڑی تعداد میں کاغذات نامزدگی داخل کر ملک اور دنیا کی توجہ اپنی طرف مبزول کرنے کا مشورہ دیا تب انہیں تعجب تو ہوا، لیکن وہ ہر طرح کے روایتی تحریک چلا چکے تھے اس وجہ سے کسان بھائیوں نے نئی طرح سے مخالفت جتانے اور تحریک چلانے کا میرا مشورہ مان لیا۔ مجھے خوشی ہوئی لیکن میرے دل میں ایک تشویش تھی۔ کیا کسان بھائی، 500 روپے خرچ کر نامزدگی ڈالیں گے۔ سب جانتے تھے کہ انتخابات جیتا جائے گا تو نہیں اور الٹے ضمانت ضبط ہو جائے گی۔ لیکن اس وقت میری خوشی اور بڑھ گئی جب کسان بھائیوں نے کہا کہ 500 روپے دے کر لوک سبھا انتخابات کے لئے کاغذات نامزدگی بھرنے میں انہیں کوئی اعتراض نہیں ہے۔ کسانوں نے کہا کہ کئی بار وہ کھاد کا استعمال بھی کرتے ہیں تب بھی فصل برباد ہو جاتی ہے۔ اس بار اگر نتیجہ نہیں نکلا تو یہی سمجھیں گے کہ کھاد بیکار چلی گئی۔ "

پرشوتم ریڈی اس تحریک کی کامیابی کو یاد کر پھولے نہیں سماتے۔

ایک سوال کے جواب میں پروفیسر ریڈی نے بتایا کہ راجیو گاندھی کے وزیر اعظم ہونے کے دور میں ناگارجن ساگر کے پاس مجوزہ جوہری بھٹی (نیوکلیئر ری ایکٹر) کو بننے سے روکنا ہی ان کی اب تک کی سب سے بڑی کامیابی ہے۔ پرشوتم ریڈی کے مطابق،

"کرشنا دریا پر بنا ناگارجن ساگر کافی بڑا اور اہم پروجکٹ ہے۔ مرکزی حکومت نے اسی ساگر کے پاس ایک جوہری بھٹی لگانے کا فیصلہ لیا تھا۔ پلانٹ کے لئے زمین بھی الاٹ کر دی گئی تھی۔ کام بھی شروع ہو گیا۔ جب مجھے اس بات کا پتہ چلا تب میں نے خود ہی فیصلہ کیا کہ میں پوری قوت لگا کر اس جوہری بھٹی کی مخالفت کروں گا۔ مجھے کسی نے نہیں کہا تھا کہ مجھے جوہری بھٹی کی مخالفت کرنا چاہئے۔ مجھے لگا کہ ماحول اور عوامی مفاد کی نظر سے یہ کافی نقصان دہ ہے اور میں نے اس کی پرزور مخالفت کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔ میں جوہری بھٹی کی مجوزہ سائٹ پر گیا اور وہاں معائنہ کیا۔ اس بات کا یقین ہو گیا کہ اگر ساگر کے قریب جوہری بھٹی بنی تو بہت سے لوگوں کی جان خطرے میں پڑ سکتی ہے۔ "

پرشوتم ریڈی جانتے تھے کہ وہ اکیلے اس بڑے منصوبے کو لے کر مرکزی حکومت سے لڑ نہیں سکتے تھے۔ وہ اپنی طاقت کو اچھی طرح سے سمجھتے تھے۔ پرشوتم ریڈی جوہری بھٹی سے متاثر ہونے والے گاؤں گئے اور وہاں لوگوں کو جوہری بھٹی سے ہونے والے خدشہ نقصان کی اطلاع دی۔ لوگوں میں بیداری لائی۔ دیہی عوام اور کسانوں کو آگاہ کیا۔ ایسا کرنے کے لئے پرشوتم ریڈی کو بہت سے لوگوں سے ملنا پڑا۔ بہت گاؤں گھومنے پڑے۔ بہت چھوٹی بڑی ریالیاں کرنی پڑیں۔ یہ سب اس لئے کہ عوام خوشحال رہ سکے۔ ان کے سر پر منڈلا رہا جوہری بھٹی کا خطرہ ٹل سکے۔ ماحول محفوظ رہے۔ پانی زمین، جنگل جانور محفوظ رہیں۔

بے لوث انداز سے عوام کے مفاد میں پرشوتم ریڈی نے جوہری بھٹی کے خلاف تحریک کو کھڑا کیا۔ پرشوتم ریڈی کی محنت رنگ لائی۔ لوگ بیدار ہوئے۔ انہیں خطرے کا احساس ہوا۔ وہ سمجھ گئے کہ جوہری بھٹی ان کی زندگی تباہ کر سکتی ہے۔ پرشوتم ریڈی سے تحیرک حاصل کر لوگوں نے اپنی اپنی سطح پر جوہری بھٹی کی مخالفت کرنا شروع کر دیی۔ لوگوں نے ٹھان لیا کہ جب تک جوہری بھٹی کی تجویز واپس نہیں لی جاتی وہ چین کی سانس نہیں لیں گے۔ ان کی وجہ سے شروع ہوئی یہ عوامی تحریک مسلسل بڑھتی گئی۔ پروفیسر شیو جی راؤ، گووردھن ریڈی اور ڈاکٹر کے۔ بالگوپال جیسے بڑے نامی افراد بھی اس جنگ میں کود پڑے۔ آخر کار حکومت کو بڑے پیمانے پر تحریک کے سامنے جھکنا پڑا۔ اس وقت کے وزیر اعظم راجیو گاندھی نے گووردھن ریڈی کو چٹی لکھ کر اطلاع دی کہ ناگارجن ساگر کے قریب نوكلير ری ایکٹر کی تجویز منسوخ کر دیی گئی ہے۔ چہرے پر مسکراہٹ کے ساتھ پرشوتم ریڈی نے کہا، 

"ایک بار جب ہم نے شروع کیا تھا تو پھر پیچھے مڑ کر نہیں دیکھا۔ یہ بڑی-تحریک تھی۔ کامیابی بھی اتنی ہی بڑی تھی۔"

 پروفیسر ریڈی کے مطابق، دوسری ریاستوں میں لوگ نوكلير ری ایکٹر کو روک نہیں پائے۔ کوٹہ، کیگا، كڈنكلم میں لوگوں نے تحریک تو شروع کی، لیکن وہ کامیاب نہیں ہوئے۔ انہوں نے کہا،

''میں نے لوگوں کو سمجھایا کہ اگر جوہری بھٹی میں کوئی حادثہ ہو جاتا ہے اور اس کا اثر پچاس سے سو کلومیٹر کے دائرے میں رہنے والے لوگوں کو محفوظ مقام پر لے جانے کے لئے صرف چوبیس گھنٹے کا ہی وقت رہے گا۔ لاکھوں لوگ متاثر ہوں گے۔ اگر لوگوں کو محفوظ مقامات پر پہنچابھی دیا گیا تو مویشیوں کا کیا ہوگا؟ ناگارجن ساگر پر کام کرنے والے ملازمین کا کیا ہوگا؟ رساؤ سے ہر حال میں ساگر میں جمع پانی آلودہ ہو جائے گا۔ اور پانی کے آلودہ ہونے کا مطلب پھر بربادی ہی ہوگی۔ میں نے لوگوں کو ان کی زبان میں جوہری بھٹی کے خطرات سے آگاہ کیا تھا یہی وجہ تھی کہ میں ان میں بیداری لانے میں جلد ہی کامیاب ہو گیا۔ "

اہم بات یہ ہے کہ گزشتہ کئی سالوں سے، بلکہ تقریبا پانچ دہائیوں سے پروفیسر پرشوتم ریڈی ماحولیاتی تحفظ کے تئیں عوامی شعور بیدار کرنے اور حکومتوں کی توجہ اپنی طرف مبزول کرنے کا کام کر رہے ہیں۔ معاشرے سروس ان کا مذہب ہے۔ عوام مفاد اور ماحولیاتی تحفظ سے منسلک کوئی بھی کام ہو وہ اس میں اپنا تعاون دینے میں کبھی پیچھے نہیں ہٹھتے۔ پرشوتم ریڈی بتاتے ہیں کہ بچپن میں جو تلقین انہیں اپنے ماں باپ سے ملی اسی کی وجہ سے انہوں نے اپنی زندگی معاشرے اور ماحولیات کے لئے وقف کرنے کا فیصلہ کر لیا تھا۔

پرشوتم ریڈی کی پیدائش 14 فروری، 1943 کو تلنگانہ کے ایک کسان خاندان میں ہوئی۔ ان کے والدین كوسليا دیوی اور راجا ریڈی آریہ سماجی تھے۔ آچاریہ ونوبھا بھاوے سے متاثر ہو کر راجا ریڈی نے ایک ہزار ایکڑ زمین کو بھودان تحریک میں عطیہ دے دیا تھا۔ اس کے بعد انہوں نے لوگوں کی مدد کے لئے اور تین ہزار ایکڑ زمین عطیہ دے دی۔

بچپن کی یادیں تازہ کرتے ہوئے پرشوتم ریڈی نے بتایا،

"ماں باپ اور گھر کے ماحول کا مجھ گہرا اثر پڑا۔ میرے والد نے مجھ سے ایک بار کہا تھا کہ زمین اور جائداد کی کوئی قیمت نہیں رہنے والی ہے۔ تعلیم حاصل کرو اور اسی سےفائدہ ملے گا۔"

اپنے والد کی بات مانتے ہوئے پرشوتم ریڈی نے تعلیم پر خوب توجہ دینا شروع کیا۔ وہ ہمیشہ بہترین اور ذہین طالب علم رہے۔ ہمیشہ اول نمبر لاتے۔

پرشوتم ریڈی نے میڈیکل کالج میں بھی داخلہ حاصل کر لیا۔ انہیں میرٹ کی بنیاد پر ان دنوں کے عثمانیہ میڈیکل کالج میں ایم بی بی ایس کورس میں سیٹ مل گئی۔ دو سال تک انہوں نے خوب محنت کی۔ امتحان میں اچھے نمبر لائے۔ وہ ڈاکٹر بننے سے محض دو سال دور تھے۔

دو سال تک ڈاکٹری کی تعلیم حاصل کرنے کے بعد اچانک پرشوتم ریڈی نے بڑا فیصلہ لیا۔ انہوں نے ڈاکٹری کی تعلیم چھوڑنے اور سوشل سروس کرنے کا من بنایا۔ چونکہ تعلیم بھی ضروری تھی انہوں نے ڈاکٹری کی تعلیم درمیان میں چھوڑ کر سوشل سائنس کو اپنی تعلیم کا بنیادی موضوع بنایا۔

سب کو حیرانی میں ڈالنے والے اس فیصلے کے بارے پرشوتم ریڈی نے کہا،

"نہ جانے کیوں مجھے لگا کہ میں ڈاکٹر بن کر لوگوں کی صحیح طرح سے خدمت نہیں کر پاؤں گا۔ مجھے لگا کہ سوشل سائنس اور سیاسیات کا پنڈت بن کر میں لوگوں کی زیادہ سے زیادہ مدد کر سکتا ہوں۔ ڈاکٹری کی تعلیم اچھی تھی۔ ایم بی بی ایس کا کورس بھی شاندار تھا لیکن میرا دل سیاسیات پر آ گیا تھا، اسی وجہ سے میں نے بی اے جوائن کیا اور سوشل-سائنس کو اپنی تعلیم کا بنیادی موضوع بنایا۔'

پرشوتم ریڈی نے آگے چل کر عثمانیہ یونیورسٹی میں تقریبا تین دہائی سے زیادہ وقت تک ہزاروں طالب علموں کو سیاسیات کا سبق پڑھایا۔ وہ کئی سالوں تک عثمانیہ یونیورسٹی میں سیاسیات-کے پروفیسر، صدر شعبہ اور بورڈ آف اسٹڈیز کے چیئرمین بھی رہے۔ دو ٹرم کے لئے وہ عثمانیہ یونیورسٹی ٹیچرس یونین کے صدر بھی رہے۔

عثمانیہ یونیورسٹی میں لیکچرر اور پروفیسر رہتے ہوئے بھی پرشوتم ریڈی نے سماج کی بھلائی کے لئے عوام تحریکوں میں مسلسل حصہ لیا۔ وہ کسانوں کی آواز اور عوام کی نفسیات کے تحریک کے طور پر پہچانے جانے لگے۔ دور دور سے لوگ مسائل لے کر حل کے لئے ان کے پاس پہنچنے لگے۔ موضوع کی سنجیدگی کو دیکھ کر پرشوتم ریڈی یہ فیصلہ کرتے کہ انہیں مسئلہ کے حل کے لئے تحریک میں کس طرح کے کردار ادا کرنا ہے۔ وہ کبھی ہیرو بن جاتے تو کبھی مشیر۔ انہوں نے عوامی مفاد کے لئے قانونی لڑاييا بھی لڑیں۔ ماحولیاتی تحفظ اور انسانی فلاح و بہبود کے لئے پرشوتم ریڈی نے کئی بار خود الگ الگ کورٹ میں اپنی آواز پر زور طریقے سے اٹھائی۔

پرشوتم ریڈی نے بتایا کہ دو واقعات نے ان کی زندگی کو تبدیل کر دیا تھا۔ یہ واقعات ایسے تھے جن سے وہ کافی دہل گئے تھے۔ انہیں بہت دکھ اور تکلیف ہوئی تھی۔

پہلا واقعہ بھوپال گیس سانحہ تھا جس میں کئی لوگوں کی جان گئی۔ دوسرا واقعہ ان کے گھر خاندان سے منسلک تھا۔ پرشوتم ریڈی کے بھائی بھی کسان تھے اور نامیاتی کاشتکاری (ارگینك فارمنگ) کرتے تھے۔ ان کھیتوں کو سرورنگر جھیل سے پانی ملتا تھا۔ لیکن ارد گرد کی صنعتی یونٹس اور فیکٹریوں نے جھیل کو "ویسٹ مواد" ڈمپ کرنے کی جگہ بنا دی۔ کیمیائی مادہ جھیل میں چھوڑا جانے لگا۔ سرورنگر جھیل آلودہ ہو گئی۔ جھیل کے پانی کی وجہ سے پرشوتم ریڈی کے بھائی کی فصل بھی برباد ہو گئی۔ فصل اور زمین خراب ہونے کا براہ راست اثر آمدنی پر پڑا۔ خاندان کو بہت نقصان ہوا۔ ۔ اس خاندانی بحران کے وقت ہی پرشوتم ریڈی نے ماحولیاتی تحفظ کے لئے اپنی زندگی وقف کر دینے کا فیصلہ کیا۔ان کی پہلی تحریک سرورنگر جھیل کا احیا تھا۔ جھیل کو بچانے کے لئے تحریک چلائی۔ ان کے ایک رشتہ دار اور پیشے سے ریڈيولاجسٹ گووردھن ریڈی نے ان کی اس تحریک میں مدد کی۔ پرشوتم ریڈی پر کچھ اس طرح کا جنوں سوار تھا کہ انہوں نے سرورنگر جھیل کو بچانے کے لئے ہر ایک متعلقہ افسر کو کام کرنے پر مجبور کر دیا۔ ایک دن بھی وہ خاموش نہیں بیٹھے۔ مسلسل کام میں لگے رہے۔ ان کی محنت کا ہی نتیجہ تھا کہ تحریک جلد کامیاب ہو گئی اور سرورنگر جھیل ختم ہونے سے بچ گئی۔

آپ پہلے تحریک میں ہی بڑی کامیابی نے پرشوتم ریڈی کے حوصلے بلند کر دیے۔ اب انہوں نے ماحولیات کو نقصان پہنچا رہے صنعتوں اور فیکٹریوں کے خلاف جنگ چھیڑ دی۔ وہ آندھرا پردیش اور تلنگانہ میں کئی جھیلوں کو ہمیشہ کے لئے ختم ہونے سے بچانے اور بعض کا احیا کرنے میں کامیاب رہے۔ ہوا اور پانی کو آلودہ کر رہی صنعتی یونٹس اور فیکٹریوں کے خلاف انہوں نے جنگ چھیڑ دی۔

پرشوتم ریڈی نے عوام کی مدد کرنے کے مقصد سے ماحولیات سےمتعلقہ تحقیقی کتابیں پڑھنا شروع کیں اور لوگوں کو اس سے متعارف کروایا

پرشوتم ریڈی ان دنوں نوجوانوں پر خاص توجہ دے رہے ہیں۔ وہ مانتے ہیں کہ اگر ملک کا نوجوان ماحولیات کے مسائل کو سمجھ جائے اور ماحولیات کے تحفظ کے لئے کام کرے تو نتائج اچھے آئیں گے اور فوری طور بھی۔ یہی وجہ ہے کہ پرشوتم اب بھی گاؤں اور اسکول کالجوں میں جا کر لوگوں خاص طور پر طلباء میں ماحولیاتی تحفظ کے تئیں بیداری لانے کی ہر ممکن کوشش کر رہے ہیں۔ وہ کہتے ہیں،

"میری ساری امیدیں نوجوانوں پر ہی ٹکی ہیں۔ اگر ہم ماحولیات کو بچانے کے لئے کام کریں گے تو ملک کو بچا لیں گے۔ '

پرشوتم ریڈی کو اس بات کی بھی شکایت ہے کہ ابھی تک ملک میں کسی بھی حکومت نے ترقی کی تعریف طے نہیں کی۔ ان کے مطابق ساری حکومتیں خطرناک صنعتوں، فیکٹریوں، سڑکوں اور عمارتوں کی تعمیر کو ہی ترقی مان رہی ہیں جو کہ غلط ہے۔ ماحول کو نقصان پہنچانے والا کوئی بھی کام ترقی نہیں ہو سکتا۔

پرشوتم ریڈی سے جب یہ پوچھا گیا کہ ملک کے الگ الگ حصوں میں ماحولیاتی تحفظ کے لئے کئی تحریکیں کیوں کامیاب نہیں ہو رہی ہیں، انہوں نے کہا،

''تحریکوں کی قیادت کرنے والے لوگ مسائل کو عوام تک لے جانے میں اتنی توجہ نہیں دیتے جتنی اپنا نام کمانے میں۔ میں نے بہت لوگوں کو دیکھا ہے کہ وہ مسئلے اٹھاتے ہیں اور جیسے ہی ان کا نام ہو جاتا ہے وہ مسئلے کو بھول جاتے ہیں اور ایسے معاملے کی تلاش میں لگ جاتے ہیں جو انہیں اور زیادہ پبلسٹی دیگا۔ اسی چکر میں تحریکیں ناکام ہو رہی ہیں۔ 

Dr Arvind Yadav is Managing Editor (Indian Languages) in YourStory. He is a prolific writer and television editor. He is an avid traveler and also a crusader for freedom of press. In last 19 years he has travelled across India and covered important political and social activities. From 1999 to 2014 he has covered all assembly and Parliamentary elections in South India. Apart from double Masters Degree he did his doctorate in Modern Hindi criticism. He is also armed with PG Diploma in Media Laws and Psychological Counseling . Dr Yadav has work experience from AajTak/Headlines Today, IBN 7 to TV9 news network. He was instrumental in establishing India’s first end to end HD news channel – Sakshi TV.

Related Stories

Stories by ARVIND YADAV