کسی کو بھی خون کی کمی نہ ہو، اس کے لیے 'دی سیوير' نام سے مہم چلا رہا ہے ایک نوجوان

0

آج کی تیز رفتار زندگی میں کسی کو بھی، کسی بھی خون کی ضرورت پڑ سکتی ہے۔ اس بات کا احساس ہمیں اس وقت ہوتا ہے جب کوئی خون کیلئے زندگی اور موت کے درمیان جوجھتا ہے۔ جس کے بعد ہماری نیند اڑ جاتی ہے اور خون جمع کرنے کے لئے کافی بھاگ دوڑ کرنی پڑتی ہے. تب کسی بلڈ بینک سے کسی انجان شخص کا دیا خون ہی ہمارے اپنوں کی زندگی بچانے میں مددگار ثابت ہوتا ہے۔ لیکن ایک شخص ہے جو جانتا ہے کہ کسی کی زندگی بچانے کے لئے خون کتنا قیمتی ہے۔ اس لیے وہ رات دن اسی کوشش میں رہتا ہے کہ جہاں بھی خون کی کمی ہو، وہاں وہ اپنے ساتھیوں کی مدد سے اسے پورا کرے۔ کولکتہ میں رہنے والے کنال نے باقاعدہ اس کے لئے ایک تنظیم بنائی ہے 'دی سیوير'۔ ان کا یہ تنظیم کولکاتا کے علاوہ دہلی این سی آر، بنگلور، ممبئی اور دوسرے شہروں میں کام کر رہا ہے۔

 کنال نے اپنی گریجویشن کی تعلیم دہلی میں رہ کر پوری کی. جب وہ گریجویشن کے دوسرے سال میں تھے تو انہوں نے بی بی اے جیسے موضوعات پر کتاب لکھنا شروع کر دیا تھا۔ اس کے علاوہ کنال نے سیوير پبلی کیشن نام سے ایک کمپنی قائم کی۔ اس کے تحت یہ خود ہی کتاب لکھتے تھے، اس چھپواتے تھے اور خود ہی اسے فروخت کرنے کا کام کرتے تھے۔ خاص بات یہ کی ان لکھی کتابیں دہلی کے اندرپرستھ یونیورسٹی کے طالب علم پڑھتے تھے۔ کنال کے مطابق "میں نے 'سیوير' نام اپنی دادی کے نام سے لیا ہے جن کا نام ساویتری تھا اور ڈکشنری میں اگر ایس اے وی نام سے کوئی لفظ ڈھونڈھا جائے تو پہلا لفظ سےوير ہی ہوتا ہے۔"

پڑھائی میں ہوشیار کنال جہاں اپنی تعلیم کے ساتھ ساتھ بی بی اے جیسے موضوعات پر کتاب لکھ رہے تھے وہیں اس دوران انہوں بزرگوں کے لئے ایک اپلی کیشن بھی بنایا اور اس کا نام رکھا 'نو مور ٹینشن'۔ یہ اپلی کیشن اب بھی گوگل پلے اسٹور میں موجود ہے۔ اس اپلی کیشن کے ذریعے بزرگ کسی بھی ویب سائٹ کو چند سیکنڈ میں کھول سکتے تھے۔ اس اپلی کیشن کو 24 کیٹیگریز میں تقسیم کیا گیا تھا اور ہر کیٹیگری میں بہت سے ویب سائٹ ہوتی تھیں جس کے بعد صرف دو کلک میں کوئی بھی شخص اپنی حسب منشا ویب سائٹ پر پہنچ سکتا تھا۔

دہلی میں گریجویشن کی تعلیم مکمل کرنے کے بعد ان کو واپس کولکتہ لوٹنا پڑا۔ لیکن اس سے پہلے انہوں نے ایک ناول لکھنا شروع کر دیا تھا اور اس کا نام تھا "ہاؤ این آئی فون میڈ می دی يگسٹ بلینير". یہ ناول صرف ادیدوستا سے منسلک تھا اور اس میں کاروباریت سے متعلق ہر ان سوالات کا جواب تھا جو لوگ جاننا چاہتے ہیں۔ ناول لکھنے کے دوران ان کے دادا جی کی ایک حادثے میں پاؤں پر چوٹ آ گئی تھی۔ جس کے بعد ان کا آپریشن کرنا پڑا۔ کنال کے مطابق "اس دوران ہمیں بی پازیٹو خون کی ضرورت پڑی لیکن ہسپتال کے پاس یہ خون نہیں تھا اس لیے ہمیں یہ خون جمع کرنے کے لئے کافی دقت ہوئی۔ تب مجھے احساس ہوا کہ ملک میں خون کی کمی تب ہے جب 63 کروڑ لوگ خون دینے کے قابل ہیں۔ اس کے باوجود ایک کروڑ لوگوں سے بھی خون نہیں ملتا۔ "کنال بتاتے ہیں کہ انہوں نے کہیں پڑھا تھا کہ ملک میں ہر سال تیس لاکھ یونٹ خون کی کمی پڑ جاتی ہے۔ جس سے کئی لوگوں کی جان چلی جاتی ہے۔

اپنے ساتھ ہوئے اس واقعہ کے بعد کنال نے اگست، 2014 میں 'دی سیوير' نام سے فیس بک پر اپنی اس مہم کو شروع کیا. شروع شروع میں انہونے اپنے ساتھ 4-5 ایسے لوگوں کو شامل کر لیا، جو ضرورت پڑنے پر خون دینے کے لئے تیار تھے۔ جس کے بعد آہستہ آہستہ انہونے اور لوگوں کو اپنے ساتھ شامل کیا اور گزشتہ ڈیڑھ سال کے اندر ان کی ایک بڑی ٹیم تیار ہو گئی ہے۔ جس کے رکن نہ صرف کولکتہ میں بلکہ دہلی، بنگلور، ممبئی اور دوسرے شہروں میں ہیں۔ ان جگہوں پر 'دی سیوير' کے رکن نہ صرف بلڈ کیمپ لگاتے ہیں بلکہ لوگوں کو خون عطیہ دینے کے لئے بیداری مہم بھی چلاتے ہیں۔ کنال کے مطابق ہر مہینے مختلف جگہوں پر 4-5 مختلف طرح کے پروگرام ہوتے ہیں۔ اس کے علاوہ ہنگامی صورت حال میں ان کی ٹیم ضرورت مندوں کو خون پہنچانے کا کام کرتی ہے۔

خاص بات یہ ہے کہ فیس بک کے ساتھ ساتھ ان کا واٹس اپ میں اپنا ایک گروپ ہے۔ جہاں پر کسی بھی ضرورتمند کی معلومات ایک دوسرے کو دی جاتی ہے اور جب ڈونر کا انتظام ہو جاتا ہے تو اس کے بعد جسے خون کی ضرورت ہوتی ہے اس سے ملاقات کرائی جاتی ہے۔ اتنا ہی نہیں ڈونر کو 'دی سیوير' کی ٹیم ایک سارٹفكیٹ بھی دیتی ہے اور اس کی معلومات یہ لوگ فیس بک پر بھی شیئر کرتے ہیں۔ کنال کے مطابق اب تک 15 ہزار بلڈ ڈونر ان کے ساتھ رجسٹرڈ ہو چکے ہیں۔ دہلی میں 'دی سیوير' کے کام کو منیشا جین دیکھتی ہیں۔ کنال کے مطابق "میں اکیلے اتنے بڑے کام کو نہیں کر سکتے تھے لیکن منیشا جین اور سرن تھامبی نے ہماری اس مہم میں کافی ساتھ دیا ہے۔"

'دی سیوير' کی ٹیم لوگوں میں خون کا عطیہ کے بارے میں شعور بلند کرنے کے لئے تہوار جیسے موقعوں کی کافی استعمال کرتی ہے۔ یہ لوگ ہولی، دیوالی، کرسمس اور دوسرے موقعوں پر مختلف طرح کے پروگرام کرتے ہیں اور وہاں آنے والے لوگوں میں خون کا عطیہ کو لے کر آگاہ کرتے ہیں۔ بیداری سے منسلک تمام پروگراموں کی معلومات یہ فیس بک میں بھی اشتراک کرتے ہیں۔ کنال کے مطابق "ہماری ٹیم اپنا کام ایک خاص فلسفے کے تحت کام کرتی ہے اور وہ فلسفہ ہے کہ جب آپ دوسروں کی مدد کرتے ہیں تو کائنات بھی آپ کی مدد کرنے میں لگ جاتی ہے۔"

گزشتہ 4-5 مہینے میں اب تک تقریبا سات سو یونٹ خون جمع کر چکے ہیں۔ 'دی سیوير' کی کور ٹیم میں 60 سے زیادہ اراکین شامل ہیں جو کہ ملک کے مختلف حصوں میں اس مہم کے ساتھ جڑے ہوئے ہیں۔ اس کے علاوہ ان کے پاس کافی تعداد میں والٹير بھی ہیں۔ جو ان کے اس کام میں مدد کرتے ہیں۔ کنال کا کہنا ہے کہ اگر کسی ضرورت مند کو خون کی ضرورت ہو تو وہ ان سے فیس بک، ویب سائٹ اور ان کے اپنے نیٹ ورک کے ذریعے رابطہ کر خون حاصل کر سکتا ہے۔

ویب سائٹ: www.thesaviours.org