کبھی ریت، اینٹوں اور سیمنٹ کے بورے ڈھونے والا مزدور اب ہے 20 کمپنیوں کا مالک

والد بندھوا مزدور تھے اور ماں تمباکو کی فیکٹری میں دہاڑی پر کرتی تھیں کام ۔۔۔ بھوک کی آگ آج بھی ہے ان کو یاد ۔۔۔ مدھوسودن راؤ نے محنت کے بل پر لکھی ہے کامیابی کی غضب کہانی ۔۔۔ ' انسان، مٹيريل اور منی ' کے صحیح استعمال سے بنے کامیاب کاروباری ۔۔۔ اپنی کمپنیوں کے ذریعہ ہزاروں لوگوں کو دے چکے ہیں روزگار ۔۔۔ گاؤں سے غربت مٹانے کا ہدف تاکہ کوئی دوسرا ان کی طرح تھپیڑے نہ کھائے۔

0

بچپن میں ایک لڑکا بہت حیران پریشان رہتا۔ اس کے ماں باپ ہر دن 18 گھنٹے کام کرتے۔ دن رات محنت مزدوری کرنے کے بعد بھی کئی بار ماں باپ اپنے بچوں کو بھر پیٹ کھانا نہیں کھلا پاتے۔ ماں باپ کے کسی دن کام پر نہ جانے کا مطلب ہوتا کہ اس دن سارا خاندان بھوکا رہے گا۔ گھر میں کل 10 لوگ تھے۔ والدین اور 8 بچے، جن میں یہ بچہ بھی ایک تھا۔ 8 بھائی بہنوں میں اس بچے مدھوسودن کا نمبر پانچواں تھا۔ بھائی بہن ہمیشہ پھٹے پرانے اور داغدار کپڑے پہنے رہتے۔ ننگے چلتے۔ یہ بچے خواب تو دیکھتے، لیکن گاڑی، بنگلہ، شاپنگ مال کے نہیں، بلکہ ان کا خواب ہوتا-بھر پیٹ کھانا، اچھے کپڑے اور پاؤں میں بار بار كاٹے چبھنے سے بچنے کے لئے چپپلیں مل جائیں بس۔ ان بچوں کے لیے یہ ایسی چیزیں تھی، جو اس وقت شاید ان کے نصیب میں ہی نہیں لکھی گئیں تھیں۔

10 افراد پر مشتمل یہ خاندان گاؤں میں ایک چھوٹی جھونپڑی میں رہتا تھا۔ مدھو سودن کو سمجھ نہیں آتا کہ جب گاؤں کے کافی لوگ اچھے اور پکے مکانوں میں رہتے ہیں، اس کا خاندان آخر جھونپڑی میں کیوں رہتا ہے؟ وہ اس بات کو لے کر بھی حیران رہتا کہ اس کے ماں باپ آخر کرتے کیا ہیں؟ وہ کہاں جاتے ہیں؟ اس حیرانی کی وجہ یہ تھی کہ ہر دن صبح ان کی نیند کھلنے سے پہلے ہی اس کے ماں باپ کہیں چلے جاتے۔ وہ جب تک لوٹ کر آتے بہت دیر ہو گئی ہوتی اور بچہ تھک ہار کر سو جاتا۔ جیسے جیسےوہ بڑا ہونے لگا اسے کئی چیزیں سمجھ آنے لگیں۔ اسے معلوم ہوا کہ اس کا خاندان غریب ہے اور ایک انتہائی پسماندہ ذات سے ہے۔ وہ یہ بات بھی سمجھ گیا کہ اس کے والد ایک زمیندار کے پاس بندھوا مزدور ہیں۔ دہاڑی پر کام کرتے ہیں۔ ماں تمباکو کی فیکٹری میں کام کرتی ہے اور ۔ گھر چلانے کے لئے بڑی بہن کو بھی ماں کے ساتھ کام پر جانے کے مجبور ہونا پڑتا ہے۔

اس بچے کو جب اسکول بھیجا گیا، تب اسے یہ بھی پتہ چلا کہ اس کے ماں باپ ناخواندہ ہیں۔ ایک بھائی کو چھوڑ کر دوسرے سارے بھائی بہن بھی پڑھنا لکھنا نہیں جانتے۔ بڑی مشکل سے ماں باپ نے اپنے دو بچوں کو اسکول بھجوانا شروع کیا تھا۔ گھر خاندان میں غریبی کچھ اس طرح سے غالب تھی کہ دن بھر میں صرف ایک بار کھانا کھا کر ہی بچے خوش ہو جاتے تھے۔ بچے کو سب سے چونکانے والی بات تو تھی کہ گاؤں والے اس کے گھر والوں کے ساتھ بہت ہی گھناونا برتاو کرتے۔ گھٹنو کے بل پر زمین پر بیٹھ کر، دونوں ہاتھ پھیلانے پر ہی کوئی انہیں پینے کے لئے پانی دیتا۔ گاؤں والوں کے طے شدہ قوانین کے مطابق اس لڑکے کے خاندان میں کوئی بھی گھٹنوں کے نیچے تک دھوتی نہیں پہن سکتا تھا۔ عورتوں کے جیکٹ پہننے پر پابندی تھی۔ خاندان والے جہاں مرضی چاہے وجہ اٹھ- بیٹھ بھی نہیں سکتے تھے۔ اس بچے اور اس کے خاندان میں سے کسی کی پرچھائی پڑ جانے پر گاؤں کے کچھ لوگ اسے اپشگن مانتے اور ایسا ہونے پر اس شخص کو سزا دیتے۔

ایسے حالات میں جب بچہ اسکول جاکر پڑھنے لگا تو پڑھتے لکھتے اس کو احساس ہونے لگا کہ اسے اپنے خاندان کو غربت اور بندھوا مزدوری سے باہر لانے کے لئے اس قدر پڑھنا ہو گا کہ اسے اچھی نوکری ملے اور وہ اس گاؤں سے بہت دور اور وہ بھی کسی بڑے شہر میں۔ لڑكے نے اسکول میں بہت محنت کی۔ جم کر پڑھائی لکھائی کی۔ ٹیچروں نے جیسا کہا ویسے ہی کیا۔ پہلے دسویں اور پھر بارہویں کا امتحان پاس کیا۔ بارہویں کے بعد انٹرنس پاس کر پالٹیکنک کالج میں داخلہ لیا۔ ڈپلوما مکمل کیا۔ وہی بچہ اب جوان ہو چکا تھا۔ پڑھا لکھا بھی تھا، اس وجہ سے خاندان کی ساری امیدیں اسی پر آ ٹكی، لیکن ڈپلوما کرنے کے بعد جب کام نہیں ملا تو اپنے ماں باپ کی طرح ہی اجرت کی۔ شہر میں واچمین کا کام کیا۔ پھر ایک دن بڑا فیصلہ لیا۔ فیصلہ تھا کاروباری اور تجارتی بننے کا۔ خواب پورا کرنے کے لئے نوجوان نے خوب محنت کی۔ دن رات ایک کیا۔ در در ٹھوکریں کھائیں، لیکن ہار نہیں مانی۔ آخر کار ایک دن گاؤں کے ایک غریب دلت خاندان میں پیدا ہوا یہ نوجوان کاروباری بن گیا۔ اس نے سال بہ سال اپنے کاروبار کو وسعت دی۔ آج یہی شخص 20 کمپنیوں کا مالک ہے۔ اس نے ہزاروں لوگوں کو روزگار کا موقع دیا ہے۔ اس گنتی اب ملک کے انوکھے اور کامیاب کاروباریوں میں ہونے لگی ہے۔

مدھوسودن راؤ ایم ایم آر گروپ آف كمپنيز کے بانی اور ڈائریکٹر ہیں اور انہوں نے ٹیلی کام، آئی ٹی، الیکٹریکل، مکینیکل، فوڈ پروسیسنگ جیسے کئی شعبوں میں اپنی کمپنیاں کھولی ہیں اور ہر کمپنی اچھا کام کرتے ہوئے منافع کما رہی ہے۔مدھوسودن راؤ نے یور اسٹوری کو اپنی زندگی کے بہت سے واقعات بتائے۔ ذلت اور جدوجہد کے بعد کامیابی کی اپنی روداد زندگی کھل کر سامنے رکھی۔

مدھوسودن راؤ کی پیدائش اندھراپر دیش کے پرکاشم ضلع میں ہوئی۔ طرح طرح کی مصائب، مشکلات، توہین کے گھونٹ، غریبی کے تھپیڑوں سے بھرے اپنے بچپن کی یادیں تازہ کرتے ہوئے مدھوسودن راؤ نے کہا، "جب میں چھوٹا تھا تب اپنے ماں باپ کو دیکھ ہی نہیں پاتا تھا۔ وہ دونوں صبح کام پر چلے جاتے اور رات کو گھر لوٹتے تھے۔ وہ جب گھر میں ہوتے تو میں سو رہا ہوتا۔ ان دنوں مجھے ماں باپ کی محبت نہیں ملی۔ سالوں سے وہ ایک زمیندار کے پاس کام کرتے آ رہے تھے۔ مجھے بتایا گیا کہ میرے دادا اور پردادا بھی زمینداروں کے یہاں بندھوا مزدوری ہی کرتے تھے۔ زمیندار کے پاس 18 گھنٹے کام کرنا پڑتا۔ ان دنوں زمینداروں کے کھیتوں کا کام، ان کے جانوروں کی دیکھ بھال، گھر کی صفائی جیسے کام میرے والد جیسے بندھوا مزدور ہی کیا کرتے تھے۔ زمیندار بس حکم دیتے تھے۔ چونکہ گھر میں آٹھ بچے تھے، ان سب کا پیٹ بھرنے کے لئے ماں کو بھی اجرت کے لئے جانا پڑا۔ حالات ایسے خراب تھے کہ بڑی بہن کو چھوٹی عمر میں ہی ماں سے ساتھ 12 کلومیٹر دور پیدل چل کر تمباکو کی فیکٹری جاتیں اور گھنٹوں محنت کرنے کے بعد واپس پیدل ہی گھر لوٹتی تھی۔ اتنی محنت کرنے کے بعد بھی ہمیں کئی بار بھوکا ہی رہنا پڑتا تھا۔ "

بھوک کی اور کمزوری کی وجہ سے جسم کے الگ الگ حصوں میں درد کا ہونا مدھوسودن راؤ کو اب بھی یاد ہے۔

غریب مزدور ماں باپ نے فیصلہ کیا تھا کہ وہ اپنی 8 اولاد میں سے دو کو ضرور اسکول بھیجیں گے۔ مدھوسودن راؤ سے پہلے ان کے بڑے بھائی مادھو کو اسکول بھیجا گیا۔ پھر اسکول کے لئے مدھوسودن راؤ کو منتخب کیا گیا۔ دونوں بھائی - سرکاری اسکول جانے لگے۔ دونوں نے خوب دل لگا کر پڑھائی کی۔ مدھوسودن نے ہمیشہ امتحان میں اچھے نمبر لائے۔ آہستہ آہستہ تبدیلی کا دور شروع ہو چکا تھا۔گاؤں کے پاس ہی کے ایک سرکاری سوشل ویلفیئر ہاسٹل کے وارڈن لکشمی نرسييا کی وجہ سے ان کی زندگی میں ایک نیا موڑ آیا۔ لکشمی نرسييا نے مدھوسودن کے والد سے کہا کہ مدھوسودن کا داخلہ ہاسٹل میں کر دیا جائے۔ چونکہ ہاسٹل میں مفت میں رہنے، کھانے پینے کی سہولت تھی سو باپ مان گئے۔

"ہاسٹل میں میرے لئے سب کچھ اچھا تھا۔ دن میں تین بار بھر پیٹ کھانا ملتا تھا۔ کھانہ خراب ہوتا تھا، لیکن میں کسی طرح کھا لیتا۔ کھانے کے سوا کوئی شکایت نہیں رہی۔ ہاسٹل کے وارڈن لکشمی نرسييا اور ایک ٹیچر جےكے ۔ نے میری بہت مدد کی۔ وہ ہمیشہ حوسلاافزئی کرتے۔ اول نمبروں سے پاس ہونے کے لئے مسلسل حوصلہ افزائی کرتے۔ میں نے کبھی بھی انہیں مایوس نہیں کیا۔ میں ہمیشہ کلاس میں ٹاپ 5 میں ایک ہوتا۔ کبھی سیکنڈ رینک تو کبھی تھرڈ۔ "

سوشل ویلفیئر ہاسٹل ہی مین مدھوسودن نے 12 ویں کا امتحان پاس کر لی۔ بڑے بھائی مادھو نے بی ٹیک کا کورس کیا تھا۔ مدھوسودن بھی بی ٹیک ہی کرنا چاہتے تھے۔ لیکن، بھائی اور کچھ دوسرے لوگوں نے پالٹیکنک کرنے کی صلاح دی تھی۔ اس مشورہ کے پیچھے بھی ایک خاص وجہ تھی۔ ان دنوں لوگوں کی یہ خیال تھا کہ کسی اور کورس سے روزگار ملے نہ ملے، پولی ٹیکنیک کورس پر ضرور ملے گا۔ مدھوسودن کو بھی بھائی کا مشورہ اور دلیل پر یقین ہو گیا۔ انہوں نے پھر انٹرنس لکھا اور کوالیفائی کر تروپتی کے سری وینكٹیشورا یونیورسٹی میں داخلہ لیا۔ مدھوسودن نے 2 سال تروپتی اور ایک سال اونگول میں پڑھائی کر پالٹیکنک ڈپلوما حاصل کر لیا۔

جیسے ہی مدھوسودن کو ڈپلوما کا سرٹیفکیٹ مل گیا، گھر خاندان والوں کی امیدیں بڑھ گئیں۔ والدین، بھائی بہنوں کو لگا کہ اب مدھوسودن کو اچھی نوکری مل جائے گی اور اس کی آمدنی سے گھر کی غریبی ہمیشہ کے لئے دور چلی جائے گی۔

مدھوسودن پر جلد سے جلد نوکری حاصل کرنے اور تنخواہ خاندان کو دینے کا دباؤ بڑھ گیا۔ کام کے لئے مدھوسودن نے کئی جگہ عرضياں دی۔ در در جا کر نوکری مانگی، بہت کوششوں کے بعد بھی مدھوسودن کو نوکری نہیں ملی۔ وہ ایک بار پھر اداس اور غمگین ہو گئے۔ والدین، بھائی بہنوں کی امیدیں بھی دم توڑنے لگی تھیں۔

یہ پوچھے جانے پر کہ پولی ٹیکنیک کے بعد بھی انہیں نوکری کیوں نہیں ملی، مدھوسودن نے کہا، "میں جہاں کہیں بھی جاتا لوگ ریفرنس پوچھتے میرے پاس کوئی ریفرنس نہیں تھا۔ دیہی علاقے سے ہونے کی وجہ سے بھی مجھے کئی بار رجیکٹ کر دیا گیا تھا۔ کئی بار تو مجھے اس وجہ سے کام نہیں دیا گئی کیونکہ میرے خاندان میں زیادہ تر لوگ ناخواندہ تھے۔ "

مدھوسودن نے کہا،

"میں خاموش نہیں بیٹھ سکتا تھا۔ میری تعلیم کے لئے گھروالوں نے بہت تکلیفیں سہیں تھی۔ ماں باپ، بھائی بہن سب کو یہی لگتا تھا کہ ڈگری حاصل كر میں ملازمت کروں گا۔ روپے كماؤ ںگا۔ مجھ پر ہی آکر ان امیدیں ٹکی تھیں۔ میں انہیں مایوس بھی نہیں کر سکتا تھا۔ انہی حالات میں میں نے کچھ بھی کرکے روپے کمانے کا فیصلہ لیا۔ "

مدھوسودن کا فیصلہ تھا کہ وہ اپنے دوسرے بھائی بہنوں کی طرح ہی اجرت کریں گے۔ ان کا ایک بھائی حیدرآباد میں مستری کا کام کرتا تھا۔ مدھوسودن نے اپنی بھائی کے یہاں ہی اجرت کرنی شروع کردی۔ عمارتوں اور بنگلوں کی تعمیر کے لئے مٹی اور پتھر ڈھوئے۔ دیواروں پر پانی ڈالا۔ چونکہ اجرت زیادہ نہیں ملتی تھی، مدھوسودن نے دوسرے کام بھی ڈھونڈنے شروع کر دئے۔ مدھوسودن نے بتایا، "دن میں مزدوری کرنے پر مجھے پچاس روپے ملتے تھے۔ جب مجھے پتہ چلا کہ رات میں کام کرنے پر ایک سو بیس روپے ملتے ہیں، تب میں نے رات میں بھی کام کرنا شروع کر دیا۔ میں نے واچمین کی طرح بھی کام کیا۔ "

ارادے نیک تھے اور ایمانداری سے پوری قوت لگا کر کام کرتے تھے اسی وجہ سے شاید زندگی نے انہیں ایک اور بہترین موقع دیا۔زندگی میں اہم تبدیلی لانے والا اہم واقعہ سناتے ہوئے مدھوسودن نے کہا، "ایک دن میں ٹیلی فون کا ایک ستون گاڑھنے کے لئے کھدائی کر رہا تھا۔ ایک انجنیئر میری طرف آیا اور اس نے پوچھا کیا تم پڑھے لکھے ہو۔ میں نے جواب میں کہا - جی ہاں، میں نے پولی ٹیکنیک کیا ہوا ہے۔ اس جواب کے بعد اس انجینئر نے کہا کہ تمہارے کام کرنے کے طریقے کو دیکھ کر ہی سمجھ گیا تھا کہ تم پڑھے لکھے ہو۔ کوئی دوسرا مزدور ہوتا تو اس طرح سلیقے سے ناپ لے کر کھودنے کا کام نہیں کرتا۔ تم نے ناپ لیا اور سائنٹیفک طریقے سے کھدائی کی۔ "

تعریف کرنے کے بعد اس انجینئر نے مدھوسودن سے پوچھا، "کام کرو گے؟"

یہ سوال سنتے ہی مدھوسودن خوشی سے بے قابو ہو گئے۔ مدھوسودن اس انجنیئر سے گڑگڑانے لگے۔ کہنے لگے، "مجھے نوکری کی سخت ضرورت ہے۔ میرا خاندان مجھ پر امیدیں لگائے بیٹھا ہے۔ میں صرف کام کے انتظار میں ہوں۔"

وہ انجینئر انہیں اپنے دفتر لے گیا۔ مدھوسودن کا انٹرویو شروع ہوا۔ ایک طرف انٹرویو جہاں چل رہا تھا، وہیں دوسری طرف ایک بڑے ٹھیکیدار اور اور چھوٹے ٹھیكیدار کے درمیان ایک معاہدے کو لے کر بحث چل رہی تھی۔ چھوٹا ٹھیكیدار زیادہ رقم مانگ رہا تھا۔ یہ دیکھ کر مدھوسودن نے بڑے ٹھیکیدار سے وہ ٹھیکہ انہیں دے دینے کی گزارش کی۔ مدھوسودن نے بڑے ٹھیکیدار کو بھروسہ دلایا کہ وہ مزدوروں سے کام لینے کے معاملے میں ایکسپرٹ۔ پہلے تو اس بڑے ٹھیکیدار نے مدھوسودن سے اپنے انٹرویو پر توجہ دینے کو کہا، لیکن جب اس چھو ٹھے ٹھیكیدار سے اس کی بات نہیں بنی تو اس نے مدھو سودن کو وہ ٹھیکہ دے دیا۔

ٹھیکہ تو مل گیا لیکن مدھوسودن کے پاس مزدوروں کو ایڈوانس دے کر انہیں کام شروع کروانے کے لیے ضروری پانچ ہزار روپے بھی نہیں تھے۔ مدھوسودن نے اپنے بھائی بہنوں سے مدد مانگی۔ اس مدد کو ان کی زندگی میں انقلابی تبدیلی لانے والا بتاتے ہوئے مدھوسودن نے کہا، "میری ایک بہن نے مجھے نو سو روپے دیے۔ یہی رقم لے کر میں مزدوروں کے پاس گیا اور انہیں میرے لئے کام کرنے کو منایا۔ نو سو روپے سے کام شروع ہو گیا۔ مجھے پہلے ہی دن بیس ہزار روپے کی آمدنی ہوئی۔ میرے دن بدل گئے۔ "

کام سے خوش ہوکر بڑے ٹھیکیدار نے مدھوسودن کو ایک لاکھ روپے اڈوانس بھی دیئے۔ اس کے بعد مدھوسودن نے پھر پیچھے مڑ کر نہیں دیکھا۔ کام سے خوش ہوکر بڑے ٹھیکیدار نے مدھوسودن کو ایک لاکھ روپے اڈوانس بھی دیئے۔ پھر آگے انہیں ایک کے بعد ایک نئے معاہدوں ملتے گئے۔ جب ان کے ہاتھ میں ایک لاکھ روپے آ گئے تو انہوں نے اپنے گاؤں کی طرف رخ کیا۔

گاؤں واپسی کا واقعہ یاد کرتے ہوئے مدھوسودن نے کہا،

"نوکری نہیں تھی۔ روپے نہیں تھے۔ کیا منہ لے کر میں گاؤں جاتا۔ شرم کے مارے میں دو سال تک گاؤں نہیں گیا تھا۔ جب میرے پاس ایک لاکھ روپے آ گئے تب میں نے گاؤں واپس جانے کا فیصلہ لیا۔ اس سے پہلے میں نے کبھی بھی ایک لاکھ روپے نہیں دیکھے تھے۔ میں بہت خوش تھا۔ جب میں گاؤں گیا اور ماں باپ کو ایک لاکھ روپے دیے تو وہ حیران رہ گئے۔ انہیں یقین ہی نہیں ہوا۔ سب نے حیرت سے پوچھا - آخر اتنا پیسہ آیا کہاں سے؟ تو نے کیا کیا؟ کہاں سے لایا اتنا سارا پیسہ؟ "

یہ رقم مدھوسودن کے گھر والوں کے لئے کافی کام آئی۔ اسی رقم کی وجہ سے ان کی ایک بہن کی شادی ہو پائی۔ بہن کی شادی کرنے کے بعد جب وہ دوبارہ حیدرآباد لوٹے۔ معاہدے ملتے چلے گئے، کمائی بڑھتی چلی گئی۔ اب سب کچھ تبدیل ہونے لگا تھا۔ غربت دور ہو گئی تھی۔ مسلسل ترقی ہو رہی تھی۔ لیکن، اسی درمیان ایک ایسا واقعہ ہوا جس سے مدھوسودن پھر خالی ہاتھ ہو گئے۔ ساری کمائی ایک جھٹکے میں چلی گئی۔

اس واقعہ کا ذکر کرتے ہوئے مدھوسودن نے کہا، "میں نے جن لوگوں پر اعتماد کیا تھا ان ہی لوگوں نے مجھے دھوکہ دیا۔ مجھ سے بے وفائی کی۔ پیٹھ میں چھرا بھوپا۔ کچھ ساتھیوں کے کہنے پر ان کے ساتھ مل کر ایک کمپنی شروع کی تھی۔ کمپنی نے کام بھی اچھا ہی کیا، لیکن میرے ساتھیوں نے ایسا دھوکہ دیا کہ میری ساری کمائی ختم ہو گی۔ "

یہ بھی ان کی زندگی کا ایک بڑا سبق تھا۔ انہوں نے کہا، "اچھا ہی ہوا جو یہ واقعہ ہوا۔ اس واقعہ نے مجھے اور بھی سمجھدار بنایا اور اس کے بعد ہی میں بہت ہی تیزی سے آگے بڑھا۔"

اس غداری کی مار مدھوسودن پر کچھ اس طرح سے پڑی تھی کہ انہوں نے معاہدوں اور کاروبار کا کام چھوڑ کر نوکری کرنے میں ہی اپنی بھلائی سمجھی۔ مدھوسودن نے ایک انجینئرنگ ادارے میں نوکری کرنی شروع کر دی۔ یہیں نوکری کرتے وقت انہوں نے شادی بھی کر لی۔

دلچسپ بات یہ ہے کہ مدھو سودن کی بیوی پدم لتا اور ان کی بہنوں کو یہ بات معلوم تھی کہ مدھوسودن کے ساتھ کاروبار میں دھوکہ کیا گیا ہے۔ اسی وجہ سے بیوی نے مدھوسودن کے سامنے یہ شرط رکھی کہ وہ پھر کبھی کاروبار نہیں کریں گے اور صرف نوکری ہی کریں گے۔ مدھوسودن شرط مان گئے، لیکن انہیں لگتا تھا کہ ان میں ایک کامیاب کاروباری بننے کے سارے خصوصیات ہیں اور یہ خصوصیات نوکری کرنے میں بیکار جا رہے ہیں۔

مدھوسودن نے بیوی کو بتائے بغیر ایک کمپنی شروع کر دی۔ کمپنی کو ٹھیکے ملنے لگے اور کام چل پڑا۔ اسی درمیان ایک دن بیوی نے گھر پر آئی ایک چٹی پڑھ لی، جس سے انہیں پتہ چل گیا کہ مدھوسودن دوبارہ کاروبار کرنے لگے ہیں۔ ناخوش اور ناراض بیوی نے مدھوسودن سے بہت سارے سوال کئے۔ اپنا غصہ ظاہر کیا۔ کاروبار بند کر نوکری پر توجہ دینے کو کہا لیکن، مدھوسودن نے اپنی بیوی کو یہ کہہ کر وضاحت کی، "میری تنخواہ 21 ہزار روپے ہے۔ تمہاری تنخوا بھی تقریبا 15 ہزار روپے ہے۔ اور گھر میں ہر مہینہ 30 سے 32 ہزار روپے ہی آتے ہیں تم مجھے کاروبار کرنے کی چھوٹ دو تو میں تمہیں ہر مہینے کم از کم تین لاکھ روپے دوں گا۔ پھر کیا تھا میری بات مان لی گئیں۔ "

اپنی بیوی کی تعریف میں مدھوسودن نے کہا، "ہر بار مجھے میری بیوی سے مدد ملی۔ ان کا ساتھ میرے لئے بہت ہی فائدہ مند اور خوشحالی بھرا رہا ہے۔ وہ میری طاقت ہیں۔"

مدھوسودن نے ایک کے بعد ایک کرتے ہوئے اب 20 کمپنیاں قائم کیں۔ آئی ٹی سے لے کر فوڈ پروسیسنگ تک اب ان کمپنیوں کی دھاک ہے۔ مدھوسودن راؤ اپنی کامیابی کی وجہ سے اب بھارت میں ہی نہیں، بلکہ دنیا کے کئی ممالک میں مشہور ہو گئے ہیں۔ وہ دلت انڈین چیمبر آف کامرس کی اندھراپردیش شاخ کے صدر بھی ہیں۔

یہ پوچھے جانے پر کہ وہ بیس کمپنیوں کو اکیلے ہی کس طرح سنبھال رہیں ہیں، مدھوسودن نے کہا، "میں اکیلا تھوڑے ہی ہوں۔ میرا پورا خاندان میرے ساتھ ہے میرے بھائی میری مدد کرتے ہیں۔ خاندان کے دوسرے رکن بھی کمپنی کا کام کرتے ہیں۔ وہ سب کے سب الگ الگ ذمہ داری سنبھالے ہوئے ہیں۔ میں نے ہر کمپنی میں ایکسپرٹس کو ہیڈ بنایا ہے۔ تمام اپنا- اپنا کام بخوبی کر رہے ہیں۔ میں ہر روز ہر کمپنی کے سربراہ سے بات کرتا ہوں۔ میری کوشش موقعوں کی تلاش میں رہتی ہے۔ جہاں موقع ہے اس کا فائدہ اٹھانے کی پوری کوشش کرتا ہوں۔ میرے لئے ٹائم مینجمنٹ کوئی بڑی بات نہیں ہے۔ "

مدھوسودن نے مزید کہا،

"میرے ماں باپ ہی میری تحریک ہیں۔ میں نے انہیں ہر دن 18 گھنٹے کام کرتے دیکھا ہے، میں بھی انہی کی طرح ہر دن 18 گھنٹے کام کرتا ہوں۔ میری کمپنیوں میں کام کرنے والے تمام ملازمین بھی ذہن لگا کر کام کرتے ہیں۔ کوئی یہ نہیں کہتا کہ میں صرف اتنے گھنٹے ہی کام کروں گا۔ مقصد پورا ہونے تک آرام نہیں کرتے "

مدھوسودن راؤ نے کہا، "میں جب تک زندہ ہوں میرے ماں باپ ہی میرے لئے مثالی رہیں گے۔ میں جب کبھی کسی مسئلہ سے گھر جاتا ہوں تو ماں باپ کو ہی یاد کرتا ہوں۔ مجھے احساس ہوتا ہے کہ میرا مسئلہ میرے ماں باپ کے مسائل سے بڑا ہو ہی نہیں سکتا۔ انہوں نے جو تکلیفیں سہی ہیں، ان کے مقابلے میں میری تکلیفیں کچھ بھی نہیں ہیں۔ "

ان کی کامیابی کے منتر کے بارے میں پوچھے گئے ایک سوال کے جواب میں مدھو سودن نے کہا،

"انسان، مٹيريل اور منی (آدمی، اشیاء اور کرنسی) ۔۔۔ یہ تین آپ کے پاس ہیں اور آپ ان کا صحیح استعمال کر رہے ہیں تو آپ کو کامیاب ہونے سے کوئی نہیں روک سکتا۔ میں نے ان تینوں کے مینجمنٹ میں مکمل توجہ دی اور اسی وجہ سے کامیاب رہا۔ "

مدھوسودن نے کہا، "اگلے پانچ چھ سالوں میں میں دیہی-علاقوں کے نوجوانوں کو ایسی ٹریننگ دینا چاہتا ہوں، جس سے انہیں نوکری حاصل کرنے، کاروباری بننے میں آسانی ہو۔ دیہی علاقے سے آنے کی وجہ سے میں اچھی طرح جانتا ہوں کہ گاؤں کے نوجوانوں اور طلباء کی کیا مسئلہ ہے۔ دیہی علاقوں کے نوجوان مواصلات میں کافی کمزور ہیں۔ ان میں مہارت کی ترقی کی ضرورت ہے۔ میں نے ٹھان لی ہے کہ میں اگلے 5 سالوں میں دیہی علاقوں سے آنے والے کم از کم پانچ ہزار نوجوانوں کو یا تو کاروباری بناوںگا یا پھر انہیں اچھی ملازمت حاصل کرنے کے قابل بناؤں گا۔ ہم سب جھونپڑی میں رہتے تھے۔ آج ہم سب کے پاس پکے مکان ہیں۔ میرے خاندان میں اس وقت 65 لوگ ہیں اور تمام کام پر لگے ہوئے ہیں۔ میں یہی چاہتا ہوں کہ تمام نوجوانوں کو روزگار ملے۔ کوئی بھی غریب نہ رہے۔ "

Dr Arvind Yadav is Managing Editor (Indian Languages) in YourStory. He is a prolific writer and television editor. He is an avid traveler and also a crusader for freedom of press. In last 19 years he has travelled across India and covered important political and social activities. From 1999 to 2014 he has covered all assembly and Parliamentary elections in South India. Apart from double Masters Degree he did his doctorate in Modern Hindi criticism. He is also armed with PG Diploma in Media Laws and Psychological Counseling . Dr Yadav has work experience from AajTak/Headlines Today, IBN 7 to TV9 news network. He was instrumental in establishing India’s first end to end HD news channel – Sakshi TV.

Related Stories