ٹیگور کی 'باغبان' اور 'ننديا چور' کے بعد گلزار کی فہرست میں ہیں 270 مقامی ادیب

فلموں کی تاریخ میں گیت کے لئے آسکر جیتنے والے گلزار 20 سے زائد فلم فیئر اور انگنت قومی اور بین الاقوامی ایوارڈ جیت چکے ہیں۔ فلم پروڈکشن کے مختلف میدانوں میں بھرپورزورآزمائی کر چکے گلزار کا پہلا عشق آج بھی شاعری ہی ہے اور وہ اپنی شاعری کی وجه سے اپنا بڑا نام رکھتے ہیں۔ شاید یہی وجه ہے کہ وہ مقامی زبانوں میں چھپی شاعری کے راز کتاب در کتاب کھولنے میں لگے ہوئے ہیں۔

0

گزشتہ سات آٹھ سالوں سے مختلف ہندوستانی زبانوں کا ہم عصر ادیبوں کا مطالعہ کر رہے گیتکار گلزار کا دعوی ہے کہ ان کی فہرست میں 270 ادیب ہیں جن کا ترجمہ وہ ہندی ہندوستانی میں کرنا چاہتے ہیں۔ گلزار اپنی غزلوں گیتوں اور نظموں کے علاوہ فلموں کی کہانیاں لکھنے، ہدایت کاری اور پروڈکشن سے تو شہرت رکھتے ہی ہیں، وہیں ان دنوں وہ دوسری زبانوں کے ادب کے ترجموں کے لئے بھی جانے جاتے ہیں۔ ربندر ناتھ ٹیگور کی دو کتابیں بازار میں آنے کے بعد ان کا یہ روپ بھی کافی مقبول ہو رہا ہے۔ یہ دو کتابیں اس ان کے اس نئے پروجکٹ کی شروعات ہیں۔ گلزار نے بتایا کہ انہوں نے مختلف زبانوں کے ادب کو پڑھا اور ان کا ترجمہ کیا ہے، اس میں سے 270 کی فہرست بنائی ہے جس میں ایک ایک کرکے شائع کرنے کا ارادہ ہے۔

گلزار کے پتہ نہیں ابھی کتنے روپ ہیں، لیکن پورن سنگھ کالرا سے گلزار بنے اس پنجابی ہندوستانی گیتکار کا خیال ہے کہ ہندوستان کی دیگر زبانوں کا ادب انہیں اپنی طرف متوجہ کر رہا ہے اور وہ بنگلہ کے بعد آسامی، اوڈيا، پنجابی، مراٹھی، مليالي ، تیلگو اور تامل سمیت مختلف زبانوں کے ادیبوں کو ہندوستانی (ہندی -اردو) میں لانا چاہتے ہیں اور اس کے لئے کام تیزی سے جاری ہے۔

ہارپر كلينس پبلشر کی جانب سے شائع کتابوں 'باغبان' اور 'ننديا چور' کے پبلشر کی جانب سے منعقدہ خاص محفل میں حصہ لینے کے لئے گلزار جب حیدرآباد آئے تو ان کے ساتھ کئی سارے موضوعات پر کھل کر گفتگو ہوئی۔ سب سے پہلے تو بنگالی زبان سے انکی محبت کی بات نکلی۔ وہ ہنستے ہوئے مذاق میں کہنے لگے،

بنگلہ زبان شروع سے بہت اچھی لگتی ہے، پھر بنگالی بھی اچھے لگتے تھے، پھر بنگالی لڑکیاں بھی اچھی لگتی تھیں۔ مجھے جب بنگالن (راکھی گلزار) سے محبت ہوگئی تو بھلا بنگالی زبان سے کیوں نہیں ہوگی۔ میرے پہلے استاد بمل رائے تھے۔ جب ان کے ساتھ میں کام کرنے لگا تھا، تو خود بہ خود ہی بنگالی آتی گئی۔ بنگالی (زبان)، بنگال اور بنگالیوں نے مجھے اسی وقت اپنی طرف متوجہ کیا تھا، جب میں دلی کے یونائیٹڈ مشن اسکول میں گرودیو روندرناتھ ٹیگور کی چیزیں اردو میں پڑھ رہا تھا۔ وہیں پر شرتچندر، بنكمچدر اور منشی پریم چند جیسے ادیبوں کو پڑھا۔ یہیں پر غالب کو جاننے کا موقع ملا۔ یہ سب مولوی مجیب الرحمن رہنمائی کی وجه سے ہوا، کیونکہ انہوں نے بہت کچھ سکھایا ہے۔

بات جب بچپن کی نکلی تو گلزار صاحب نے اپنی پرانی یادوں کو بھی تازہ کیا، انہوں نے بتایا کہ وہ پنجاب میں بابا بلّےشا، بابا فرید اور نانک کو سنتے ہوئے بڑے ہوئے۔ ساتھ ہی پوجا میں گائے جانے والے سنسکرت کے شلوک سنتے ہوئے انہیں انجانے میں ہی موسیقی اور شاعری سے دلچسپی بڑھتی گئی۔ جب اسکول گئے تو وہاں غالب کو پڑھا۔ وہ بتاتے ہیں،

کوئی بھی ہندوستانی تین چار زبانوں کے ساتھ سےبڑا ہوتا ہے۔ چاہے ماں کے کام کاج دوران گنگنانا ہو یا پھرپوجا میں گانا۔ دودھ والے اور چرواہے کا گانا، جیسا ماحول ہر جگہ کسی نہ کسہ طرح کی موسیقی کا اثر ہوتاہے اور شاعری ان سب چیزوں میں چھپی ہوتی ہے۔ میری جڑوں میں بھی وہی موسیقی اور شاعری رہی۔ ملک کے زیادہ تر لوگوں کو اسی طرح کا سیکولر ماحول وراثت میں ملتا ہے۔ اہم بات یہ ہے کہ وہ اپنی اس میراث کو بچائے رکھیں۔

گلزار مانتے ہیں کہ ہندوستانی زبانوں کا ترجمہ دوسری ہندوستانی زبانوں میں جتنا اچھا ہو گا، انگریزی میں نہیں ہو سکتا۔ کئی محاورے ایسے ہیں، جو ہندوستانی زبانوں میں ایک ہی تہذیب کے ساتھ رائج ہیں۔ وہ دوسری ہندوستانی زبان میں اس پوری تہذیب کے ساتھ چلے آتے ہیں۔ یہی بات انگریزی میں کہنے کے لئے مکمل حوالہ بتانا اور سمجھانا پڑے گا۔ کئیکئی اور کیتکی کا محاورہ بتانے کے لئے پوری رامائن سمجھانی پڑے گی۔ وہ آگے بتاتے ہیں، ہندی پورے ہندوستان میں سمجھی جاتی ہے، دوسری زبانیں اپنے علاقوں میں رہتی ہیں۔ ان علاقائی زبانوں کا ادب ہندوستانی میں لا کر پورے ملک کے لوگوں تک پہنچایا جا سکتا ہے۔ بالخصوص شمال مشرق کی زبانوں میں خوب لکھا جا رہا ہے۔

گلزار نے کہا کہ ہندوستان کے لئے آج بھی اگر کوئی لنک زبان ہے تو وہ ہندوستانی ہی ہے، چاہے اسے لوگ ہندی کہیں یا اردو۔ یہی سارے ملک اور ملک کی دوسری زبانوں کو ایک دوسرے سے جوڑ سکتی ہے۔ انہوں نے کہا، 'یہ ایک عظیم زبان ہے، جسے ہم سب بولتے ہیں۔ اس میں کوئی ایک زبان نہیں ہے۔ ایک جملہ مکمل کرنے میں اس میں دوسری زبان کا کوئی نہ کوئی لفظ آ ہی جاتا ہے۔ یہی ہندوستانی ہے۔ جو ملک کی ثقافتی مٹی سے گہرے منسلک ہے۔ '

گلزار ان دنوں ٹیگور کے ہندی ترجمہ کے ساتھ ہندوستان گھوم رہے ہیں۔ انہوں نے بات چیت کے دوران بتایا کہ انہوں نے ان کتابوں میں ٹیگور کے مختلف پہلو تلاش کرنے کی کوشش کی ہے اور جو ٹیگور اب تک ہندوستان اور دنیا کی دوسری زبانوں میں صرف گيتانجلی میں قید تھے۔ اب انہیں ان کی دوسری تحریروں میں بھی پڑھا جا سکتا ہے۔

گلزار کہتے ہیں،

- 50 سال تک ٹیگور کو وشوبھارتی نے اپنے قید میں رکھا اور پھر جوتی بابو( سابقہ چیف منسٹر مغربی بنگال) نے ٹیگور کی عمر 10 سال اور کم کر دی۔ ( ٹیگور تحریروں کے حقوق جو وشو بھارتی کے پاس تھے اس کو پہلے 50 سال اور بعد میں پھر 10 سال تک بڑھا دیا گیا) جب حقوق ان کے پاس نہیں رہے تو دنیا ٹیگور کی دوسری تخلیقات کو ترجمہ کے زریعہ سے دوسری زبانوں میں پڑھنے کو بے چین ہے۔ زیادہ تر لوت ٹیگور کی کتاب گيتانجلی کے بارے میں ہی جانتے ہیں۔ ٹیگور کا ادب کافی وسیع ہے۔ انہیں جاننا ہے تو ان کی دوسری تخلیقیں بھی پڑھنی پڑیں گی۔ کیا ٹیگور داڑھی والے چہرے کے ساتھ ساٹھ سال کی عمر میں ہی پیدا ہوئے تھے۔ وہ تو بچے بھی رہے، نوجوان بھی رہے اور زندگی کے مختلف پہلوؤں کو بہت خوبصورتی سے لکھا۔ وہ سب چیزیں صرف بنگالی میں قید تھیں، اب ایک ایک کر کے باہر آ رہی ہیں۔ ٹیگور نے بڑی باریک بینی سے مناظر کو اپنے ادب میں اتارا ہے۔ میں جب میں پڑھتا گیا تو اسے بہت گہرائی سے محسوس کیا۔ میں ان کے مزاج ان کا مطالب و مفہوم جاننے کے لئے ان کی زندگی کو پڑھتا گیا۔ بہت سارے حوالے آتے گئے۔ میں جب ان کو پڑھ رہا تھا تو مجھے مچھلی نہیں، بلکہ مچھلی کی آنکھ دیکھنا تھا، ٹیگو کا خیال ان کا ماحول ان کی تحریروں کا تراجم میں لانے کی کوشش کی۔

گلزار پنجابی ہیں۔ ہندی اور اوردو میں شاعری کرتے ہیں۔ انگریزی سے اجنبی نہیں ہیں اور ان کی بنگالی محبت بھی کسی سے چھپی نہیں ہے۔ اس وجہ سے 'باغبان' اور 'ننديا چور' میں ٹیگور کی جو نظمیں گلزار صاحب نے پیش کی ہیں، وہ براہ راست بنگالی ہی سے ترجمہ کی گئیں ہیں، حالانکہ ان کتابوں میں خود رابندر ناتھ ٹیگور کی جانب سے کیا گیا ان نظموں کا انگریزی ترجمہ بھی شامل ہے، لیکن گلزار کا خیال ہے کہ وہ انگریزی ترجمہ ایک مترجم کا نہیں، بلکہ ایک ادیب کا ہے، لیکن ہندی میں جو گلزار نے ترجمہ کیا ہے، اس میں ٹیگور کے بنگالی ادب اور اس کے سیاق و سباق کو سمیٹنے کی کوشش ہے۔ ۔

گلزار کہتے ہیں کہ انہوں نے بہت سارے ترجمہ کئے ہیں، لیکن ٹیگور جیسے دانشور شاعر کی تخلیقات کا ترجمہ بڑی ہمت کا کام ہے۔ یہ آسان نہیں تھا، ان کی نظموں میں چھپے سیاق و سباق کو سمجھنے کے لیے انہوں نے ٹیگور کی زندگی کو خوب پڑھا۔ ایک حوالہ کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے بتایا کہ گاندھی جی نے ٹیگور سے کہا تھا کہ ملک کے نوجوانوں میں انقلاب لانے کا کام ضروری ہے۔ تب ٹیگور نے کہا تھا کہ ۔۔ میں ملک کی آزادی کے لئے اپنی نظموں میں ہی چركھا كاتونگا، اگر آپ کا چركھا كاتونگا تو بہت سارا دھاگا خراب کر دوں گا۔ ٹیگور نے جس رتھ کی بات اپنی تخلیقات میں کی تھی، وہ آزادی کا رتھا اور ٹیگور نے اپنےادب ہی کے زریعہ آزادی کی تحریک اپنے آپ کو وقف کف دیا تھا۔

ایک سوال کے جواب میں گلزار نے کہا، 'ہندی فلموں کی زبان ہمیشہ ہندوستانی رہی ہے، لیکن کچھ دنوں سے کانوینٹ سے پڑھے اور امریکہ سے واپس آئے فلم سازوں کو ہندوستانی زبان اور تہذیب کی خوشبو سے قریب سے رابطہ نہیں ہوا ہے، لیکن گلزار کو یقین ہے کہ ایک دن ایسے لوگ فلمی دنیا میں ضرور آئیں گے جو اپنی زبان خود گڑھیں گے، جس میں حال کے حقیقتوں کی جھلک ہوگی، جسے عوام بولتے ہیں اور زبان عوام سے ہی بنتی ہے۔ دیہات اور گاؤں کی حقیقی زبان اسی وقت فلموں میں آئے گی، جب انہی گاؤں سے نکل کر کوئی فلم ساز سامنے آئے گا، شیام بینیگل کی طرح۔ '

ہندی فلموں کی تاریخ میں گیت کے لئے آسکر جیتنے والے گلزار 20 سے زائد فلم فیئر اور انگت قومی اور بین الاقوامی ایوارڈ جیت چکے ہیں۔ فلم تعمیر کے مختلف علاقے میں بھرپور جی چکے گلزار کا پہلا عشق آج بھی شاعری ہی ہے اور وہ اپنی شاعری کی وجه سے اپنا بڑا قد رکھتے ہیں۔ شاید یہی وجه ہے کہ وہ مقامی زبانوں مے چھپی شاعری کے راز کتاب شرح کتاب کھولنے میں لگے ہوئے ہیں۔

كہانياں مجھے وراثت میں ملی ہیں. ماں، باپ، چچا، چاچی،خالہ، پھوپھی، نانی دادی، سب کی مختلف کہانیاں تھیں. اسی وراثت کو پاس پڑوس، دوست رشتہ دار، نکڑ، گلی، محلہ، شہر، ملک اور بیرون ملک کے چہروں میں چھپی کہانیوں کے ساتھ ملا کر پیش کر رہا ہوں۔ پسند آئے تو مسکرانا ضرور۔

Related Stories

Stories by F M SALEEM