انکار سے شروع ہوا تھا ممتا بنانی کی کامیابی کا سفر

ممتا بنانی کے سسرال والوں نے کہا تھا کہ وہ اپنی تعلیم آگے جاری نہ رکھیں لیکن ایک دن خود سسرال کے لوگوں نے ہی انہیں آگے پڑھنے نے کے لئے کہا اور وہ آج انسٹیٹیوٹ آف کمپنی سیکریٹری آف اینڈیا کی چئیرپرسن ہیں۔ اسی لئے وہ کہتی ہیں کہ گھر سے ٹوٹ کر لڑکیاں قیادت کی خصوصیات نہیں پا سکتی۔

0

ممتا بنانی انسٹی ٹیوٹ آف کمپنی سیكریٹريز آف انڈیا کے قومی صدر ہیں۔ اس شعبے میں نامچین پیشیور خواتین میں ان کا نام آتا ہے۔ ائی سی ایس آئی کی 48 سالہ تاریخ میں وہ دوسری قومی خاتون صدر ہیں۔ کارپوریٹ اور پیشہ ورانہ مسائل پر ایک اچھی مقرر کے طور پر بھی انہیں تسلیم کیا جاتا ہے۔ ممتا بنانی کی پیدائش کولکتہ کے ایک راجستھانی خاندان میں ہوئی۔ ان کے والد کاسٹ ایكاونٹینٹ ہیں۔ کامرس میں ڈگری کے بعد ممتا نے انہوں نے سی ایس کا ڈاخلہ امتحان لکھا، لیکن نتیجہ آنے سے پہلے ہی ان کی شادی ہو گئی۔ سسرال میں بنیادی طور پر ان کے آگے پڑھنے کے امکانات صفر ہو گئے تھے، لیکن جب امتحان کا نتیجہ آیا تو انہوں نے ملک بھر کے خواتین امیدواروں میں پہلا مقام حاصل کیا تھا، جس سے ان کے مستقبل میں نئی روشنی جگمگائی اور پھر انہوں نے کمپنی سکریٹری کے پیشے میں ایک آزاد کاروباری کے طور پر کئی بڑی صنعتوں کو اپنی خدمات فراہم کیں۔ چیف مینیجر سطح کے افسران کے تربیتی پروگراموں میں انسٹرکٹر کے طور پر بھی ان کا نام کئی کمپنیوں کی فہرست میں شامل ہے۔ 2010 میں انہیں پہلی بار آئی سی ایس آئی کی صوبائی کونسل کا صدر منتخب کیا گیا۔ یہ عہدہ حاصل کرنے والی وہ پہلی خاتون رہیں۔ خاص بات ہے کہ گزشتہ دنوں جب حکومت ہند نے دیوالیہ کمپنی کے معاملات کو دیکھنے والا ایک بورڈ بنایا تو اس کے لئے منتخب ہونے والی پہلی رکن بننے کا کریڈٹ بھی انہیں رہا۔

اپنی کمپنی سیکریٹری بننے کی کہانی سناتے ہوئے وہ کہتی ہیں،

''میں نے یہ کورس 1995 میں جائن کیا تھا۔ 1993 میں اس کے بارے میں کچھ کچھ سنا تھا اور پھر دلچسپی بڑھتی گئی۔ شروع میں دلچسپی نہیں تھی، لیکن جیسے جیسے پڑھنا شروع کیا تو لگن بڑھتی گئی۔ در اصل ڈاخلہ امتحان کا نتیجہ ابھی آیا نہیں تھا کہ میری شادی ہو گئی۔ ساس سسر نے کہہ دیا تھا کہ تعلیم ختم کر دو۔ میں نے بھی کچھ نہیں کہا، لیکن جب نتائج آئے تو آل انڈیا فرسٹ تھی۔ اس سے ساس سسر نے ہی کہا کہ تعلیم جاری رکھو۔ ایک طرح سے امتحان کے نتائج نے ہی مستقبل کے دروازے کھولے تھے۔ اگر نتائج میں میرا اچھا مظاہرہ نہیں ہوتا تو شاید میں اپنی تعلیم آگے جاری نہیں رکھ پاتی۔''

حالانکہ ممتا کے خاندان کا تعلق راجستھان سے ہے، لیکن ان کے دادا ملک کی تقسیم سے پہلے لاہورمیں رہتے تھے۔ بعد میں وہ کولکتہ آکر بس گئے۔ یہیں پر بھوانی پور میں رہتے تھے اور پھر ممتا کی شادی بھی اسی شہر میں ہوئی۔ وہ دو بہنے تھیں۔ تعلیم پر کافی زور دیا جاتا تھا۔ ممتا کو بھی پڑھنے کا بہت شوق تھا۔ لیکن ڈگری کے فوری بعد انی کی شادی کر دی گئی۔ وہ بتاتی ہیں،

'' جب میری شادی ہوئی تو میں 40 افراد کے مشترکہ خاندان میں گئی تھی اور اب بھی ہم 14 لوگ ساتھ میں رہتے ہیں۔ میں خاندان میں سب سے بڑی بہو ہوں۔ ہم تین دیورانیاں جٹھانی ہیں۔ سب اپنے اپنے حساب سے کچن میں اپنی شرکت کرتے ہیں۔ بڑا اچھا لگتا ہے۔ میں اس بات میں یقین کرتی ہوں کہ جم جاکر پسینہ بہانے سے اچھا ہے گھر کا کام کروں۔ یہاں پسینہ بهاو۔ اس سے مجھے ایک الگ طرح کی طاقت ملتی ہے۔ اپنے خاندان کے ساتھ ہونے کی۔

ممتا آل انڈیا فرسٹ تھی تو انہیں ملازمتوں کی کمی نہیں تھی۔ بہت سارے آفر تھے۔ لیکن ہو چاہتی تھیں کہ میں اپنا ہی کچھ کاروبار کریں۔ پھر آزادانہ طور پر پریکٹس شروع کی۔ آغاز میں کچھ تکلیف رہی۔

شروع میں کام نہیں ملتا تھا۔ وہ بتاتی ہیں کہ انہی کو کام ملتا تھا، جن کے پاس پہلے سے کام ہے۔ پہلے سے جن کا نام ہے، لوگ انہی کو ترجیح دیتے ہیں۔ تین سال کی جدوجہد کے بعد انکی بھی حوصلہ افزائی ہونے لگی اور کام بڑھتا گیا۔ اس جدوجہد کے دور کی کچھ واقعات کا ذکر کرتے ہوئے وہ کہتی ہیں،

''بہت کم فیس میں کام کرنا پڑا۔ دو تین واقعات تو ایسے ہیں کہ جس کمپنی کے پاس گئے، وہاں گھنٹوں متعلقہ افسر سے ملنے کے لئے انتظار میں بیٹھنا پڑا۔ بات چیت کے بعد بھی صرف وعدہ ہی ملا۔ کام نہیں ملا۔ ایک آدھ بار ایسا بھی لگا کہ اپنا کام شروع کر غلطی تو نہیں کی، لیکن یہ احساس زیادہ دیر تک ٹک نہیں پاتا اور پھر کام پر لگ جاتے۔ کیونکہ ایک صبر بھی تھا کہ اپنا کام شروع کیا ہے، وقت تو لگے گا ہی۔ وہ صبر میرے بہت کام آیا۔ اس کے علاوہ میں نے کبھی بھی غلط کاموں میں ہاتھ نہیں ڈالا۔ ایسا نہیں کیا ہے کہ جو بھی کام مل گیا لے لو۔ اپنے نام اور شہرت کو کبھی بٹہ لگنے نہیں دیا۔ اپنے آپ کو سدھارنے کی کوشش کی۔ ہمیشہ لگا کہ مجھے بھیڑ سے الگ کھڑے ہونا چاہئے۔ بولنا سيكھو، اخبار پڈھو، اپنے آپ کو اپڈیٹ رکھوں۔ شروع میں جب سمیناروں میں بولنے کا موقع نہیں ملتا تھا تو فلور سے سوال پوچھا کرتی تھی۔ اس کے لئے تیاری کر جاتی۔ بعد میں مجھے خود کلاسیں لینے کا موقع ملا۔

انہیں یاد ہے کہ اپنے پہلے کلائنٹ سے انہیں ہزار روپے ملے تھے، لیکن انہونے ان دنوں ایک مقصد کے ساتھ کام کیا ہر دن کم از کم ہزار روپے کا کام ہو اور اگر ایک دن وہ ہدف پورا نہیں ہوتا تو دوسرے دن پہلے دن اور دوسرے دن دونوں ہدف سامنے ہوتے۔ یہ ہدف پورا ہو بھی جاتا۔ وہ کہتی ہیں عورت ہونے کی وجہ سے ہمارے سامنے روزی روٹی کا مسئلہ نہیں تھا، پھر بھی انہیں لگتا کہ ٹارگٹ مقرر نہیں کرتے ہیں تو ہم اتنی محنت نہیں کر پاتے، جتنی کرنا چاہئے۔

کیا کبھی انہوں نے سوچا تھا کہ ایک کمپنی سیکریٹری کے طور پر ادارے کی قومی صدر بنیں گی؟ اس سوال کے جواب میں وہ کہتی ہیں،

''خواب تو لےکے چل رہی تھی۔ پانچ چھ سالوں سے یہ سوچ رہی تھی۔ پہلے ایسٹرن زون کی صدر رہی۔ پھر چار سال اس سے الگ رہی، کیونکہ مخالفت کافی رہی۔ کونسل ممبر کے طور پر بھی ادارے میں داخل ہونےکا موقع نہیں دیا گیا۔ سب کو لگنے لگا تھا کہ یہ عورت قومی کونسل میں داخلے کی ریس میں ہے۔ مجھے لائملائٹ میں بھی آنے نہیں دیتے تھے، لیکن میں آج ان کو مبارکباد دیتی ہوں، جنہوں نے مجھے روکنے کی کوشش کی تھی۔ کیونکہ چار سال باہر رہ کر میں نے اپنے کام پر زیادہ دوگنے، تگنے بلکہ چوگنے توانائی کے ساتھ کام پر توجہ دی اور اپنے ووٹروں پر خوب محنت کی۔ جب میں ووٹنگ ہوکے مرکزی کونسل میں آئی تو مجھے قومی سطح پر سب سے زیادہ ووٹ ملے تھے۔ میں نے ملک کے 50 سالوں کے سارے ریکارڈ توڑ دیے تھے۔ در اصل میری اگر کوئی حقیقی طاقت ہیں تو وہ میرے شوہر ہیں۔ 22 سال ہو گئے ہیں میری شادی کو۔ انہوں نے ہی مجھے ہمیشہ آگے بڑھنے کی ترغیب دی۔ ساتھ دیا۔

ممتا بتاتی ہیں کہ زندگی میں بہت سے مشکل لمحے رہے، لیکن انہیں کبھی ڈر نہیں لگا۔ کبھی ایسا نہیں لگا کہ رجیكشن ہو رہا ہے۔ منفی رد عمل سے بھی انہیں طاقت ہی ملتی رہی۔ وہ کہتی ہیں،

''مجھے کسی بھی چیز سے گھبراہٹ نہیں ہوتی۔ جب مجھے کوئی کہتا ہے کہ تم یہ کام نہیں کر سکوگی تو مجھے وہ کام کرنے میں لطف آتا ہے۔ جب مجھے لوگوں نے سینٹرل کونسل میں آنے سے روکنا شروع کیا اور بہت سے لوگوں نے یہاں تک کوشش کی کہ اسے الیکشن ہی لڑنے نہیں دینا ہے تو میرے ذہن میں اس چیلنج کا سامنا کرنے کا حوصلہ پیدا ہوا- حالانکہ میرے خلاف چٹھياں بھی نکالیں۔ لوگوں نے مجھے اس کا جواب دینے کے لئے بھی کہا، میں نے کسی کا جواب نہیں دیا۔ اپنا کام کرتی رہی۔ لوگ اگر میرے بارے میں بات کر رہے ہیں تو مجھے لگتا ہے کہ میں کام کر رہی ہوں۔ میں ہر چیز میں مثبت پہلو تلاش کرتی ہوں اور یہی میری طاقت ہے۔ ممی پاپا نے مجھ سیکھ دی تھی کی کام میں دل لگاؤ اولل جلول باتوں کی طرف توجہ مت دو۔''

وہ بتاتی ہیں کہ ہر ماہ کی 18 تاریخ کو اپنے اسٹوڈنٹ اور ارکان کے لئے ایک پروگرام چلاتی ہیں، جہاں پانچ سے چھ ہزار لوگوں کے متعلق جانتے ہیں۔ کوئی بھی شخص ویب میں اس سے رابطہ قائم ہو سکتا ہے۔ میں ہمیشہ لوگوں کو بتاتی ہوں کہ میں گھریلو عورت ہوں، کھانا بھی بنا لیتے ہوں، کپڑے بھی دھو لیتی ہوں اور دنیاداری میں بھی آگے ہوں۔ اس سے لڑکیوں کو یہ سمجھنے میں آسانی ہوتی ہے کہ یہ سب کرتے ہوئے ایک پیشہ ورانہ زندگی گزاری جا سکتا ہے۔ وہ کہتی ہیں،

''آج کی نسل میں ایک کمزوری میں دیکھتی ہوں، بہت جلد ہار جاتے ہیں۔ شادی ہو گئی تو کام چھوڑ دیا، بچے ہو گئے تو کام چھوڑ دیا۔ اتوار کو فلم دیکھنی ہے، اس لیے کام نہیں کیا۔ اس طرح کی ثقافت سے قیادت کی خصوصیات کو فروغ نہیں ملتا۔ سنڈے نئی فلم دیکھنے کے بجائے میں کہوں کہ آج اگر قانون میں کوئی نئی ترمیم ہوئِ ہے تو اسے پڑھنا چاہیے۔ زنگی میں اگر کچھ کرنا ہے تو کچھ قربانياں ضرور دینی پڑتی ہے۔ ایک دوسری بات میں بتانا چاہوں گی، آج کے ماحول میں لڑکیاں دوستی کے چکر میں خاندان سے ٹوٹتی جا رہی ہیں۔ در اصل خاندان جس طرح آپ خصوصیات کی حوصلہ افزائی کر سکتا ہے۔ خاندان کے سائے میں شخصیت میں جو نکھار آتا ہے، وہ دوستوں میں رہ کر نہیں آ سکتا۔ کیونکہ دوستوں میں باہمی حوصلہ افزائی کا اتنا اچھا ماحول پنپ نہیں پاتا۔ چاہے جتنی اچھی دوستی ہو، حسد کا جذبہ وہاں کچھ نہ کچھ رہتا ہے۔ میں نے نئی نسل کے لوگوں سے کہنا چاهوں گی کہ وہ اپنے خاندان سے جڑ کر ترقی کریں۔

اپنے مستقبل کے بارے میں وہ بتاتی ہیں کہ انہیں سیاست میں دلچسپی ہے۔ اس لئے وہ بہت جلد سیاست میں قدم رکھیں گی۔ 

कहानियाँ मुझे विरासत में मिली हैं। माँ, बाप, चाचा, चाची, मासी, बुआ, नानी दादी, सब की अलग अलग कहानियाँ थीं। उसी विरासत को पास पड़ोस, दोस्त रिश्तेदार, नुक्कड, गली, मुहल्ला, शहर, देश और विदेश के चेहरों में छुपी कहानियों के साथ मिलाकर पेश कर रहा हूँ।

Related Stories