بریكجٹ میں ہندوستان کے لئے بہت سے اشارے

نقل مکانی دو طرح کی ہوتی ہے۔ ایک اپنے علاقہ کے اندر اور ایک بیرونی علاقہ میں۔ ہندوستانیوں نے بہتر روشن مستقبل اور نئی امکانات کی تلاش میں اپنے محفوظ علاقے چھوڑ کر باہر کی راہ لی۔ اتر پردیش اور بہار سے لوگ صرف لکھنؤ اور پٹنہ ہی نہیں گئے۔ بلکہ یہ لوگ کیرالہ کے سمندری کناروں اور بنگلور کی سڑکوں پر بھی نظر آتے ہیں۔ وہ پہلے ہی ممبئی اور دہلی کی بھیڑ کا حصہ ہیں۔ اسی طرح تمل ناڈو اور کیرالہ کے لوگ دہلی کے خان مارکیٹ میں بٹر چکن اور ڈومبيولی ممبئی میں وڑا پاو سے لطف اٹھا تے دکھائی دیتے ہیں۔

0


بریكجٹ کا واقعہ ہندوستان کے لئے اقتصادی نتائج سے زیادہ سماجی ضرورتوں سے منسلک ہے۔ جہاں بڑا خطرہ منڈلا رہا ہے۔

گریٹ بریٹن نے ایک ملک گیر ریفرنڈم میں یورپی یونین سے الگ ہونے کا فیصلہ کیا ہے۔ یہ برلن کی دیوار کے گرنے کے بعد سب سے خوفناک واقعہ ہے۔ اگرچہ یہ ایک خالص جیت ہے۔ پھر بھی نرد پھیكا جا چکا ہے اور برطانیہ کے لئے حالات پھر کبھی پہلے کی طرح نہیں ہوں گے۔ اس کا اثر یقینی طور پر دنیا کی معیشت پر پڑے گا؛ اور ایک نئی کساد بازاری کے امکانات سے بھی انکار نہیں کیا جا سکتا۔ دنیا پہلے ہی دہشت اور خوف کے ماحول میں ہے؛ ماہرین اس بڑی مصیبت کی پیشن گوئی کر رہے ہیں۔ مستقبل غیر یقینی لگ رہا ہے۔ کوئی وقت اس سے خراب نہیں ہو سکتا۔ مسلسل تین دہائیوں کی ترقیاتی رفتار کے بعد چین کی معیشت میں کمی دکھائی دے رہی ہے۔ برازیل ایک سنگین سیاسی بحران سے گزر رہا ہے اور ہندوستان میں بڑے بڑے دعووں کے باوجود۔ زمینی سطح پر مثبت ترقی دکھائی نہیں دے رہا ہے۔

اس ریفرنڈم کی وجہ اقتصادی کم اور سیاسی زیادہ ہیں۔ اس سے تین باتیں واضح طور پر اجاگر کی جا سکتی ہیں -

1۔ عالمی نقل مکانی ایک سنگین مسئلہ ہے اور یہاں تک کہ سب سے ترقی یافتہ معاشروں کے بارے میں جو سمجھا جا رہا تھا وہ بھی اتنی جامع نہیں بن پائی ہیں۔

2۔ غریب اور امیر کے درمیان ایک واضح تقسیم ہے۔ لندن اپنی رفتار سے آگے چلے گا۔ لیکن کم ترقی یافتہ اور اقتصادی طور پر کمزور علاقوں کا یورپی یونین کے ساتھ کوئی مستقبل نظر نہیں آتا ہے؛

3۔ قوم پرستی ایک سیاسی ضرورت کے طور پر گلوبلائزیشن کے عمل سے کہیں زیادہ متاثر کرنے والی ہے۔ جب معیشت امید کھو دیتی ہے تو مصنوعی طور پر بنایا گیا سپرا-نیشنلزم اپنے میں کوئی کشش نہیں رکھتا۔

جیسا کہ ہندوستانی اسٹیبلشمنٹ ہندوستان کے بارے میں سب سے تیزی سے ترقی کی طرف بڑھتی ہوئی معیشت ہونے کے دعوی کر رہے ہیں۔ اس واقعہ سے یقینی طور پر بھارت بھی متاثر ہوگا۔ یہ ایسے وقت میں ہو رہا ہے جب ریزرو بینک کے گورنر نے اعلان کیا ہے کہ وہ ایک اور مدت کے لئے نہیں رہیں گے اور انہوں نے پھر سے "خیالات کی دنیا میں ' (تعلیم کے شعبے میں) واپس جانے کو ترجیح دی ہے۔ رگھو رام راجن کا بینکنگ کے سب سےبڑے عہدےپر نہ رہنا اچھی خبر نہیں ہے۔ میری رائے میں بھارت کو کہیں زیادہ سنجیدگی سے بریكجٹ کو سمجھنے کی ضرورت ہے۔ ہندوستانی تناظر میں منقسم کرنے والی طاقتیں اور غلط سمتوں کی علاماتیں بركجٹ سے لی جا سکتی ہیں۔ بریكجٹ کا واقعہ ہندوستان کے لئے اقتصادی نتائج سے زیادہ سماجی ضرورتوں سے منسلک ہے۔ جہاں سے بڑا خطرہ منڈلا رہا ہے۔ میں ماہرین کی اس بات سے متفق نہیں ہوں۔ جو اس واقعہ کو بڑی آسانی سے صرف نفرت اور انتہائی قوم پرستی کے اظہار کے طور پر دیکھ رہے ہیں۔ یہ ایک بہت ہی پیچیدہ سماجی و سیاسی مسائل کی سب سے سیدھی تشریح ہے؛ تشریح کی فطرت میں نہ صرف تیکھاپن ہے۔ بلکہ بہت ہی تلخ حقیقت کی عکاسی کرتے ہوئے دنیا کی طرف تاک رہی ہے۔

بریكجٹ گہری بے چینی کی صرف ایک الگ تھلگ مثال نہیں ہے۔ ریپبلکن پارٹی کے اعلی حکام کی مخالفت کے باوجود امریکہ میں ڈونلڈ ٹرمپ کا عروج بھی اسی طرح کے ایک واقعہ سے منسلک ہے۔ فرانس میں دائیں بازو کی میرین لی پین اگلے صدر کے عہدے کے امیدوار کے طور پر ابھر رہی ہیں اور اگر قسمت نے ساتھ دیا تو وہ اگلے صدر ہو سکتی ہیں۔ بھارت کی قیادت آر ایس ایس کے ہاتھ میں ہے۔ یہ دائیں بازو کی طاقت سے ہندوستان کو ایک ہندو راشٹر بنانا چاہتی ہے۔ ميڈل ایسٹ میں آئی ایس آئی ایس کے کٹر تجربات سے دنیا پہلے ہی مجروح ہے۔ کوئی بھی ملک اور کوئی بھی شہری محفوظ نہیں ہے۔ ان سب میں ایک بات یکساں ہے۔ وہ سب 20 ویں صدی کی دنیا کی شناخت۔ مساوات۔ آزادی اور بھائی چارے کی عمدہ علامت " تنوع میں اتحاد " سے نفرت کرتے دکھائی دے رہے ہیں۔

نقل مکانی کو انسانی ترقی کا انجن مانا گیا ہے۔ دنیا میں نہ صرف سستے لیبر کی ہی نقل مکانی ہوا ہے۔ بلکہ نئے خیالات بھی اسی سے دنیا کے ایک حصہ سے دوسرے حصہ میں آئے ہیں۔ نئے خیال جینے کی نئی راہ بتاتے ہیں۔ خیالات کے میلاپ سے نئی کامیابیاں حاصل کی جا سکتی ہیں۔ جو سماج کو نہ صرف زیادہ مسابقتی بناتے ہیں۔ بلکہ نئے چیلنجز کا سامنا کرنے کا حوصلہ بھی دیتے ہیں۔

نقل مکانی دو طرح کی ہوتی ہے۔ ایک اپنے علاقہ کے اندر اور ایک بیرونی علاقہ میں۔ ہندوستانیوں نے بہتر روشن مستقبل اور نئی امکانات کی تلاش میں اپنے محفوظ علاقے چھوڑ کر باہر کی راہ لی۔ اتر پردیش اور بہار سے لوگ صرف لکھنؤ اور پٹنہ ہی نہیں گئے۔ بلکہ یہ لوگ کیرالہ کے سمندری کناروں اور بنگلور کی سڑکوں پر بھی نظر آتے ہیں۔ وہ پہلے ہی ممبئی اور دہلی کی بھیڑ کا حصہ ہیں۔ اسی طرح تمل ناڈو اور کیرالہ کے لوگ دہلی کے خان مارکیٹ میں بٹر چکن اور ڈومبيولی ممبئی میں وڑا پاو سے لطف اٹھا تے دکھائی دیتے ہیں۔

ستيا نڑےلا اور سندر پچائی جیسے لوگ آج مائیکروسافٹ اور گوگل کے دور میں سب سے بڑی ٹیکنالوجی کمپنیوں کے سربراہ ہیں۔ اگر اندرا نوری پیپسی کی سربراہ ہیں، تو نكیش ارورہ کچھ دن پہلے تک تین سب سے زیادہ تنخواہ پانے والے افسران میں سے ایک اور ایک جاپانی کمپنی کے گولڈن گولڈن بوائے تھے۔ یہ سب نقل مکانی کی وجہ سے ہی ممکن ہو پایا ہے۔ مشرق اور مغرب دونوں نے اس مرکب سے فائدہ اٹھایا ہے۔ امریکہ نے گزشتہ دو صدیوں پر راج کیا۔ یہ تارکین وطن کا ملک ہے۔ بدقسمتی سے بریكجٹ نے ایک نئی کہانی بنی ہے۔ یہ پوری دنیا کہہ رہی ہے کہ نقل مکانی اچھی نہیں ہے اور تارکین وطن کا خیر مقدم نہیں ہونا چاہئے۔ ریفرنڈم میں بریكجٹ کے حامیوں میں یورپی یونین میں تارکین وطن کی آزادی کی بھی بنیادی شکایت کی گئی ہے۔ جب دنیا لندن کے میئر کے طور پر ایک مسلمان کے منتخب ہونے کا جشن منا رہی تھی تو معاشرے کے ایک طبقے کے اندر اس کے تئیں مخالفت بھی تھا۔

یہ کہانی  شیوسینا اور راج ٹھاکرے کی قیادت والیمہاراشٹر نونرمان سینا کے کئی سال میں بنائے گئے مضبوط پلاٹ کی طرح ہے۔ بالا صاحب ٹھاکرے نے کھلے طور پر 60 اور 70 کی دہائی میں جنوبی ہندوستانیوں کی مذمت کی اور پھر شمالی ہندوستانیوں کو نشانہ بنانا شروع کر دیا۔ راج ٹھاکرے اور اس کے حامیوں نے کھلے طور پر تشدد پھیلايا۔ بھارتی آئین اپنے شہریوں کو ملک بھر میں آزادانہ نقل و حرکت کی اجازت دیتا ہے اور ہر شہری ملک کے کسی بھی حصے میں رہنے بسنے کے لئے آزاد ہے۔ لیکن ہر وقت "ہم بمقابلہ وہ" کا مسئلہ چھڑ جاتا ہے۔ سیاستدان دہلی میں بگڑتے قانون نظام کے لئے کئی بار شمالی ہندوستانیوں کو مجرم قرار دیتے رہے ہیں۔ ملک کے باقی حصوں میں بھی شمال مشرقی ریاستوں کے شہریوں اور اصل باشندوں کے درمیان تصادم ایک نئے بحران کے طور پر ابھر رہا ہے۔ ہم اس کو پیچھے ہٹنا قرار دے سکتے ہیں اور منتقل بھی کر سکتے ہیں۔ لیکن ہمیں ایسا اپنے جوکھم پر کر کرنا پڑے گا۔

گلوبلائزیشن کے اس دور میں "اپنی زمین سے محبت اور باشندوں کا احترام" کے معملے میں سچائی یہ ہے کہ آج بھی "شناخت" انسان کے لئے واحد وضاحت کرنے والی خصوصیت ہے۔ میل ملاپ اس حد تک قابل قبول ہے کہ اس سے اجتماعی طور پر معاشرے اور خاص طور پر شخص کے لئے کوئی خطرہ نہ ہو۔ مشکل اقتصادی حقیقت اور عدم اطمینان کے اشارے ہیں۔ تنوع کو اچانک خطروں کا سامنا ہے۔ کبھی کبھی تکثیریت بھی سب سے ترقی یافتہ معاشرے کے لئے ایک لعنت بن جاتا ہے۔ تنوع ہندوستان کی سب سے بڑی طاقت ہے۔ لیکن شناخت کی طاقتیں اسے سیاسی وجوہات کی بنا پر یا نفسیاتی وجوہات سے سب سے بڑے لعنت میں تبدیل کر سکتے ہیں۔ ایک قوم کے طور پر۔ ہم بریكجٹ سے پیدا خطرے سے کامیابی کےساتھ نمٹنے کے لئے اسے بہتر طور پر سمجھنے کی کوشش کرتے ہیں۔

(یہ مضمون عام آدمی پارٹی کے لیڈر آشوتوش نے لکھا ہے)