مودی نے اندرا گاندھی جیسی سیاسی چال چلنے کی کوشش کی ہے، لیکن ناکام رہے ہیں: اشوتوش

نوٹبندي پر عام آدمی پارٹی کے رہنما اور سابق ایڈیٹر / صحافی اشوتوش کا تازہ مضمون

0

80 سے زیادہ لوگ مر چکے ہیں، عام آدمی پریشان ہے، لوگوں کی پریشانیاں مسلسل بڑھتی جا رہی ہیں، معیشت لڑکھڑا رہی ہے، بینکنگ نظام ختم ہونے کے دہانے پر ہے، ماہر اور ماہر اقتصادیات کہہ رہے ہیں کہ مستقبل بےرنگ نظر آ رہا ہے اور نوٹبنديی سے 'کالا دھن' ملنے کے امکانات نہ ہونے کے برابر ہے، لیکن پھر بھی وزیر اعظم نہ تو معذرت خواہ ہیں اور نہ ہی اس فیصلے کو واپس لینے کے حق میں۔ نوٹبندی، مودی کے وزارت عظمی کے زمانے میں اب تک کا سب سے زیادہ دلچسپ اور پہیلیوں سے بھرا فیصلہ ہے۔ اگر اس فیصلے کا مقصد کالے دھن اور اس سے منسلک دنیا کے لوگوں کا پردہ فاش کرنا ہے تو کم از کم ابھی تک تو دور دور تک ایسا ہوتا نظر نہیں آ رہا ہے۔ یہ سوال اٹھنا بھی لازمی ہے کہ وزیر اعظم نے نوٹبندی کے لئے یہی وقت کیوں چنا؟ اور اگر انہیں یہ کرنا ہی تھا تو یہ سب تیاری کے بغیر کیوں کیا؟ اس بڑے کام کے لئے کئی اقدامات اٹھائے جانے ضروری تھے، مضبوط منصوبہ بندی بننے کی ضرورت تھی، لیکن ایک ماہ سے زیادہ وقت گزر چکا ہے پھر بھی کوئی یہ نہیں کہہ سکتا کہ نوٹبندی کا کام صحیح تیاری کے ساتھ کیا گیا ہے۔ نوٹبندی کی اس سارے عمل سے کوئی فائدہ ہوتا نظر نہیں آتا اور یہ کام صرف دکھاوا اور منافقت نظر آ رہا ہے۔

نوٹبندی کے فیصلے کی ٹائمنگ کو لے کر بازار میں کئی طرح کی باتیں کی جا رہی ہیں۔ بہت سے لوگوں کو اس میں سازشوں کی بو آ رہی ہے۔ کچھ کا ماننا ہے کہ مودی نے دو بڑے صنعتی گھرانوں سے بڑے پیمانے پر دولت لی ہے اوراس بات کو چھپانے کے لئے یہ قدم اٹھایا گیا ہے۔ بڑی رقم لینے والی بات کے جگ ظاہر ہونے کی تشویش ہوئی تب مودی نے نوٹبندی کا اعلان کر دیا۔ کچھ لوگوں کا یہ بھی کہنا ہے کہ نوٹبندی کا فیصلہ اترپردیش میں ہونے والے انتخابات کو ذہن میں رکھ کر لیا گیا ہے۔ گزشتہ لوک سبھا انتخابات میں بھارتیہ جنتا پارٹی اور اس کی اتحادی جماعتوں نے مل کر 80 میں سے 73 نشستیں جیتی تھیں۔ خود مودی وارانسی سے لڑ کر لوک سبھا پہنچے تھے۔ چونکہ اب بھارتہ جنتا پارٹی کے ہارنے کا خدشہ ہے اور ہارنے سے مودی کی ساخت پر آنچ آ سکتی ہے، اسی وجہ سے نوٹبندی کا فیصلہ لیا گیا، تاکہ کسی حد تک پارٹی کے جیتنے کے امکانات بنے۔ قابل اعتماد ذرائع کے مطابق، مودی جانتے ہیں کہ وہ اب تک کے اپنے دور اقتدار میں اپنے بڑے- بڑے وعدوں کو پورا کرنے کے قابل نہیں ہیں، اسی بات سے لوگوں کی توجہ ہٹانے اور یہ جتانے کہ اپنے وعدوں کو پورا کرنے کی ان کی کوششیں جاری ہیں انہوں نے نوٹبندی کا فیصلہ لیا۔ مودی نے گزشتہ لوک سبھا انتخابات کے دوران کئی جلسوں میں کالے دھن کو واپس لانے کی بات کی تھی۔ انتخابات کے نتائج دیکھ کر یہی لگا تھا کہ لوگوں نے مودی کی باتوں پر یقین کر ان کے اور ان کی پارٹی کو ووٹ دیا ہے۔ لیکن گزشتہ ڈھائی برسوں میں مودی اپنے وعدوں کو پورا نہیں کر پائے، اور ان وعدوں میں کالے دھن کو بے نقاب کرنے کا وعدہ بڑا وعدہ تھا۔ لوگوں کا اعتماد مودی اور ان کی باتوں پر سے اٹھنے لگا تھا اور ایسی صورت میں مودی کو کچھ ایسا کرنے کی ضرورت تھی کہ جس سے وہ لوگوں کا اعتماد دوبارہ جیت سکیں۔ ان حالات میں انہوں نے ایک ایسا فیصلہ لیا جس سے کالا دھن تو آتا نظر نہیں آ رہا ہے لیکن لوگوں کی پریشانیاں بڑھ رہی ہیں اور بعض کی جان بھی جا رہی ہے۔ نوٹبندی پر ایک طبقے کا یہ بھی کہنا ہے کہ معیشت ٹھیک نہیں چل رہی ہے اور مودی اس کو ٹھیک کرنے میں کامیاب ہوتے بھی نہیں دکھائی دے رہے ہیں۔ 2019 میں ہونے والے لوک سبھا انتخابات کے دوران لوگوں کے سامنے پیش کرنے کے لئے مودی کے پاس کوئی بھی بڑی کامیابی نہیں ہے۔ ایسے میں مودی کو لگا کہ نوٹبندی سے انہیں لاکھوں کروڑوں کا کالا دھن ملے گا اور وہ اسے مختلف اسکیموں کے تحت لوگوں میں بانٹ کر پھر سے الیکشن جیت جائیں گے۔

لوگوں کی باتوں کو سننے کے بعد بھی کسی نتیجے پر پہنچنا مشکل ہے۔ کوئی بھی پورے اعتماد کے ساتھ اس سوال کا جواب نہیں دے سکتا کہ مودی نے کس مقصد سے نوٹبندی کا فیصلہ لیا ہے۔ لیکن ایک بات تو طے ہے کہ جس طرح کا فیصلہ اندرا گاندھی نے اپنی سیاسی زندگی اور وزیر اعظم ہونے کے زمانے کے ابتدائی دنوں میں دکھایا تھا اسی طرح کا حوصلہ اور اسی طرح کی دلیری ان دنوں مودی بھی دکھا رہے ہیں۔ اندرا گاندھی بھی سوچی سمجھی حکمت عملی کے تحت کام کرتی تھیں۔ بہادر اور بڑے فیصلے لیتی تھیں۔ کافی فیصلہ کن ہوتے تھے ان کے فیصلے۔ مودی بھی کچھ ایسے ہی کر رہے ہیں۔ دلچسپ بات یہ بھی ہے کہ جب اندرا گاندھی کو کانگریس پارٹی نے 'وزیر اعظم' کے عہدے کے لئے منتخب کیا تب رام منوہر لوہیا جیسے مخالفین نے ہی نہیں بلکہ انہی کی پارٹی کے کئی دوسرے رہنماؤں نے انہیں 'گونگی گڑیا' کہا۔ وزیر اعظم کے پرنسپل سکریٹری ایل کے جھا کے مطابق "شروع شروع میں اندرا گاندھی انتہائی خاموش تھیں اور ایک رہنما کے طور پر غیر فعال بھی۔" انہیں اس وجہ سے انہیں وزیر اعظم نہیں بنایا گیا تھا کیونکہ وہ نہرو کی بیٹی تھیں بلکہ انہیں پارلیمانی پارٹی کا لیڈر اس وجہ سے بنایا گیا تھا کیونکہ وہ علاقائی پارٹیوں کی بات سنیں گی اور ان کے کنٹرول میں رہیں گی۔ لیکن مودی کی موجودہ حالت اندرا گاندھی جیسی نہیں ہے، نہ ہی انہیں ایسی کوئی پریشانی ہے جیسی اندرا گاندھی کو ابتدائی دنوں میں تھی۔ مودی جب گجرات کے وزیر اعلی تھے تبھی سے ایک رہنما کے طور پر ان کی خاص شناخت رہی ہے۔ رہنما کے طور پر وہ کافی مضبوط اور طاقتور بھی رہے ہیں۔ اپنی پارٹی کے کچھ بڑے لیڈروں اور آر ایس ایس کے ایک حلقے کی مخالفت کے باوجود مودی کو 2014 کے انتخابات کے لیے بی جے پی کی جانب سے وزیر اعظم کا امیدوار بنایا گیا۔ مودی کے بارے میں یہ کہا جاتا ہے کہ وہ مخالف حالات میں جنگ کرنا پسند کرتے ہیں۔

انہیں چیلنجس کا سامنا کرنے میں مزہ آتا ہے۔ وہ اندرا گاندھی کی طرح نہ کبھی 'گونگی گڑیا' کی طرح رہے ہیں اور شاید رہیں گے بھی نہیں۔ مودی بڑے فیصلے لینے والے بڑے لیڈر ہیں۔ وہ ایک ایسے لیڈر بھی ہیں جو کبھی بعض کی نظر میں سیاست کے سب سے بڑے کھلنائک تھے۔ ایک وقت ایسا بھی تھا جب بہت سے ممالک نے انہیں ویزا دینے سے بھی صاف انکار کر دیا تھا۔ لیکن، مودی نے اپنی کھلنائک والی تصویر کو ہیرو کی تصویر میں تبدیل کیا۔ کام آسان نہیں تھا، لیکن مودی نے لوگوں کے درمیان 'ترقی کرنے والا' کی تصویر بنائی۔ وزیر اعظم کے طور پر مودی کا کام شاندار ہے لیکن شک وہ بطور وزیر اعظم دوسری اننگز کے لئے قطعی قابل قبول نہیں ہے۔ ایسا لگتا ہے کہ اندرا گاندھی کی طرح ہی مودی نے بھی مستقبل میں آنے والی مصیبتوں کو دیکھتے ہوئے ایک داؤ کھیلا ہے، ایک بہت بڑا داؤ۔

60 کی دہائی میں اندرا گاندھی کو جب یہ احساس ہوا کہ اگر نیلم سنجیو ریڈی صدر بنیں گے تو انہیں وزیر اعظم کے عہدے سے ہٹا دیا سکتا ہے۔ تب اندرا گاندھی نے ایک بڑا داؤ کھیلا۔ انہوں نے صدارتی انتخابات میں ووٹروں یعنی سے اپنی ضمیر کی آواز سنیں اور آزاد امیدوار وی وی گری کو ووٹ دینے کی اپیل کی۔ یہ اندرا گاندھی کی اپنی ہی پارٹی کے خلاف کھلی بغاوت تھی۔ اس طرح کی بغاوت کی امید کسی نے نہیں کی تھی۔ اندرا گاندھی نے بڑا فیصلہ لیا اور یہ فیصلہ ساہسک بھی تھا۔ اس فیصلے کے بعد جب گری پہلا راؤنڈ ہار گئے تب اندرا گاندھی اور ان کی ٹیم مایوس ہوئی لیکن انہوں نے اپنے ساتھیوں سے کہا "فکر مت کرو، ہماری جنگ مشکل ہو گی، لیکن میں تیار ہوں۔" آخر کار گری جیت گئے اور کانگریس میں پھوٹ پڑ گئی۔ اندرا گاندھی کو وزیر اعظم کے عہدے سے ہٹانے کی بھی کوشش کی گئی لیکن انہوں نے نہ صرف کانگریس پارلیمانی پارٹی کی اکثریت حاصل کی بلکہ پارلیمنٹ میں اعتماد کا ووٹ بھی اکثریت سے جیت لیا۔ خاص بات یہ رہی کہ اندرا گاندھی کو جتنا تیز طرار مانا جا رہا تھا وہ اس سے کہیں زیادہ تیز طرار ثابت ہوئیں۔

اندرا گاندھی نے پارٹی کے سینئروں سے اپنی لڑائی کو ایک 'آدرشوادی' رنگ بھی دیا۔ اس وقت کے زیادہ تر سینئر کانگریسی لیڈر 'رايٹسٹ' (دائیں بازو) تھے۔ مرارجی دیسائی، نجلگپا، کامراج، ایس۔ کے۔ پاٹل، اتولیہ گھوش تمام بڑے قاید تھے، لیکن ماضی میں۔ اندرا گاندھی نے ایک مختلف ماسک اوڑھ رکھا تھا۔ وہ جانتی تھیں کہ جواہر لال نہرو کی بیٹی ہونے کے ناطے بائیں بازو دانشوروں میں ان کے تئیں ہمایت کا جزبہ تھا، محبت تھی اور ہمدردی بھی۔ وہ وقت 'سرد جنگ' کا وقت بھی تھا۔ دنیا دو حصوں اور دو نظریات میں بٹ گئی تھی۔ سوویت یونین کی قیادت میں کمیونسٹوں کا غلبہ بھی مسلسل بڑھ رہا تھا۔ بھارت میں بائیں بازو اور کمیونسٹوں کے اثرات بڑھنے لگے تھے۔ ایسی صورت میں اندرا گاندھی نے 'سماجواد'كا راستہ منتخب کیا۔ انہوں نے دو مسائل کو ہتھیار بنایا - بینکوں کو قومی اور مراعات کے خاتمے۔ اور، ان دو بڑے فیصلوں کے بعد بھی وزیر اعظم کے عہدے سے انہیں ہٹانے کی سازشیں نہیں ركی تب انہوں نے پارلیمنٹ کا اجلاس ختم ہونے کا انتظار بھی نہیں کیا اور پارلیمنٹ تحلیل کر دی اور الیکشن کروائے، جس میں انہیں دو تہائی اکثریت حاصل ہوئی۔ ان کا نعرہ تھا - "وہ کہتے ہیں اندرا ہٹاؤ، میں کہتی ہوں غربت ہٹاو۔ "انتخابات میں کامیابی کے بعد اندرا گاندھی بہت طاقتور ہو گئیں، غیر یقینی صورتحال کا دور ختم ہو گیا، وہ اپنی قسمت کی مالک خود بن گئیں۔

بڑی بات یہ ہے کہ مودی بھی اندرا گاندھی جیسی ہی چال چلنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ وہ یہ دکھانے کی کوشش کر رہے ہیں کہ وہ کالے دھن کے خلاف لڑ رہے ہیں اور اپوزیشن اس جنگ میں ان کے خلاف ہے۔ وہ بدعنوانی مٹانا چاہتے ہیں اور اپوزیشن انہیں ایسا کرنے نہیں دے رہی ہے۔ لیکن اندرا گاندھی کے برعکس، مودی خوش قسمت ہیں کیونکہ ان کی پارٹی ان کے ساتھ ہے ۔اور تو اور، مودی کے خلاف بغاوت کی کوئی آواز نہیں ہے اور عدم اطمینان کا کوئی سُر بھی نہیں ہے۔ نوٹبندی کو لے کر جہاں اپوزیشن متحد ہے اور مودی پر سنگین الزام لگ رہے ہے وہیں پارلیمنٹ کے اندر اور باہر بی جے پی کے لوگ جم کر اپنے لیڈر مودی کی پرزور حمایت کر رہے ہیں۔ فی الحال تو انہیں اپنی پارٹی سے کوئی پریشانی نہیں ہے۔

لیکن، مودی کی چالیں اور ان کی ترکیب کامیاب ہوتی نظر نہیں آ رہی ہے۔ مودی نے لوگوں سے کہا ہے کہ 50 دنوں میں سب کچھ ٹھیک جائے گا۔ انہوں نے عوام سے یہ بھی کہا ہے کہ ان کی یہ پہل 'قومی احیا' کا آغاز ہے۔ مودی نے بڑی ہوشیاری سے نوٹبندی کے منفی اثرات کو ملک کی ساخت سے جوڑ دیا ہے۔ ان سب کے درمیان لوگوں کی پریشانیوں کو ختم نہیں کیا جا سکا ہے، بلکہ دقتیں بڑھ رہی ہیں۔ حکومت ہر روز اپنے فیصلے اور ہدف بدل رہی ہے۔ ہر دن نئی بات کی جا رہی ہے۔ اب مودی ایک نقد سے آزاد سوسائٹی کی باتیں کر رہے ہیں۔ پہلے کچھ خواب دکھایا اور اب کچھ دکھا رہے ہیں۔

مودی یہ بات سمجھنے میں ناکام رہے ہیں کہ وہی خواب بیچے جا سکتے ہے جوکہ حقیقت میں بدلے جا سکیں، اور ان خوابوں کو دکھانے والے کی نیت صاف ہو اور وہ خود ایماندار ہو۔ نوٹ بندی ناکام ہوئی ہے۔ نوٹبندی کا استعمال ناکام ہے۔ اس سے ایک دوسرے متوازی نظام کی تخلیق ہوئی ہے، بدعنوان بینک حکام اور بروکرز کی ایک نئی فوج کھڑی ہوئی ہے۔ بدعنوان سیاست دانوں اور ان کے ساتھیوں نے نئے سپاہی تلاش لیے ہیں جو ان کے کالے دھن کو آسانی سے سفید کر رہے ہیں اور حکومت بے بس نظر آ رہی ہے۔ مودی خود کو بدعنوانی کے خلاف ایک یودھا 'لڑاکا' کے طور پر پیش کرنے کی کوشش میں ہیں لیکن ان کی اپنی ہی پارٹی سپریم کورٹ کے حکم کے بعد بھی اپنے فنڈز میں سے اسی فیصد کا صحیح ذریعہ بتانے میں ناکام ہے۔ مودی 'لوک پال' بھی مقرر نہیں کرنا چاہتے ہیں اور اب سپریم کورٹ بھی اس پر سوال کرنے لگا ہے۔ مودی پارلیمنٹ کا سامنا کرنے کی ہمت نہیں جٹا پا رہے ہیں اور وہ ایوان کے باہر ہی باتیں کر رہے ہیں۔ ان کے حامی قطار میں گھنٹوں کھڑے عام آدمی کا مذاق کر رہے ہیں۔ اندرا گاندھی کامیاب ہوئیں اور دوبارہ بھی انتخابات جیتیں کیونکہ ان کے ساتھ عام آدمی کا اعتماد اور حمایت تھی۔ بدقسمتی سے، مودی نے عوام کے اعتماد کے ساتھ دھوکہ کیا ہے۔