عالمی مارکیٹ میں اتھل پتھل سے ہندوستان کو بچنا ہوگا: موڈيز سروے

0

موڈيز کے ایک سروے میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ ہندوستتانی معیشت کے سامنے سب سے بڑا چیلنج عالمی معاشی شعبے میں جاری اتھل پتھل ہے، جس سے امریکہ میں سود کی شرح میں اضافہ اور چین میں نرمی ہے اور یہ خطرہ گزشتہ ایک سال سے بڑھا ہوا ہے۔

موڈيز کا یہ سروے مارکیٹ سے وابستہ لوگوں اور سرمایہ کاروں کے درمیان کیا گیا ہے۔ سروے کے مطابق تقریباً 75 فیصد افراد نے مانا کہ ہندوستان کی اقتصادی ترقی کی شرح اگلے 12 سے 18 ماہ میں 6.5 سے 7.5 فیصد کے دائرے میں رہنے کا امکان ہے۔

یہ حقائق 110 مارکیٹ شرکاء کے درمیان کئے گئے سروے پر مبنی ہیں۔ اس میں ہندوستان کے کچھ بڑے سرمایہ کار شامل ہیں۔ اس سروے موڈيز انویسٹرس سروس نے اس ماہ کے آغاز میں کیا.

سروے میں 35 فیصد لوگوں نے مانا کہ عالمی سطح پر اتار چڑھاو معیشت کے سامنے سب سے بڑا چیلنج ہے جبکہ گزشتہ سال مئی میں کئے گئے اسی طرح کے سروے میں 10 فیصد لوگوں نے ایسی رائے ظاہر کی تھی۔

وہیں 32 فیصد کا خیال ہے کہ بہتری کی رفتار سست ہے اور 19 فیصد افراد بنیادی ڈھانچے کو رکاوٹ مانتے ہیں۔2015 کے سروے میں ایسے ماننے والے بالترتیب 47 فیصد اور 38 فیصد تھے۔

موڈيز نے 'ہرڈ فرم دی مارکیٹ: انڈین ناٹ امیون ٹو ایكسٹرنل رسک' عنوان سے جاری رپورٹ میں کہا ہے، ''ہندوستان کی اقتصادی ترقی کے امکان کو لے کر لوگ پرامید ہیں۔ تین چوتھائی سے زیادہ وقت سے مارکیٹ کے شرکاء کے درمیان کئے گئے سروے میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ جی ڈی پی کی ترقی کی شرح اگلے 12 سے 18 ماہ میں 6.5 سے 7.5 فیصد کے دائرے میں رہے گی۔ '' مئی 2015 میں کئے گئے گزشتہ سروے کے مقابلے میں 14 فیصد شرکاء کواب لگتا ہے کہ اقتصادی ترقی کی شرح 7.5 سے 8.5 فیصد کے درمیان رہے گی۔ سابق میں ایسے لوگ 36 فیصد تھے۔ موڈيز نے کہا، '' اگرچہ سروے میں شامل لوگ اضافہ کو لے کر پرامید ہیں لیکن ہندوستان کے گرینڈ اقتصادی منظر نامے کے معاملے میں خطرہ توازن میں تبدیلی دیکھا گیا ہے۔ ''

رپورٹ کے مطابق، '' مارکیٹ کے شرکاء میں اب امریکہ میں سود کی شرح میں اضافہ اور چین میں نرمی کے ہندوستان پر پڑنے والے اثرات کو لے کر فکر بڑھ رہی ہے۔ ان کا خیال ہے کہ اس سے ملک کی ترقی پر اثر پڑے گا۔ '' اس میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ اگرچہ ہندوستان اب بھی ابھرتی ہوئی مارکیٹوں میں بہتر پوزیشن میں ہے۔ خانگی شعبے کی سرمایہ کاری میں تیزی لانے کے لئے موڈيز نے مشورہ دیا ہے کہ حکومت کو اہم اصلاحات کی پہل کو آگے بڑھانا چاہئے اور جی ایس ٹی جیسے اہم بلوں کو منظور کیا جانا چاہئے۔