حیدرآباد کی مثبت تصویر کو ابھارنے میں مصروف محمد صفی اللہ

نادر تصاویر اور سکّوں کے کلکشن کے لئے معروف سرکاری افسر

0

محمد صفی اللہ ه تلنگانہ ریاست جینكو (توانائی پیداوار کارپوریشن) کے پروٹوکول افسر ہیں۔ اس عہدے سے ہٹ کر بھی وہ ایک مؤرخ، نایاب سکّوں اور حیدرآباد اور آصفجاہی تاریخی اہمیت کے تصاویر کے کلیکشن کے لئے اپنی شہرت رکھتے ہیں۔ دکن ہیریٹیج ٹرسٹ کے ایم ڈی ہیں۔ حیدرآباد پر کافی مہنگی کتاب `گلپسےس آف نذامس ڈومےنين 'کے پرپركاشن کا کریڈٹ بھی انہیں جاتا ہے انہوں نے توانائی کے شعبہ میں مختلف عہدوں پر کام کیا ہے۔ ایک کلرک سے کر اسسٹنٹ سیکرٹری کی سطح کے عہدے تک کا سفر کیا ہے۔ مؤرخ کے طور پر دنیا بھر میں اپنا تعارف رکھتے ہیں۔ ان کی ابتدائی تعلیم سینٹ پال اسکول میں اور سائنس سے گریجویشن کے بعد انہوں نے ایم بی اے کیا اور پھر تاریخ اور آثار قدیمہ میں پوسٹ گریجویٹ اور پی ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کی۔

یور اسٹوری کے لئے ان کے ساتھ بات چیت کے کچھ اقتباسات یہاں پیش ہیں۔

کیا پہلے سے طے تھا کہ آپ سرکاری نوکری ہی کریں گے؟

نہیں میرا سرکاری خدمت میں آنا اچانک اور اتفاق رہا۔ 1987 میں والد صاحب کے اچانک انتقال کے بعد محکمہ میں تقررہوا۔ والد انجینئر تھے۔ ان کے انتقال کے بعد حالانکہ یہ ضروری نہیں تھا کہ میں سرکاری نوکری ہی کروں، لیکن ان کے دوستوں نے مجھے مشورہ دیا کہ یہ ضروری ہے۔ سرکاری نوکری پر شروع میں سنجیدگی بھی نہیں تھی، لیکن آہستہ آہستہ میں نے اپنے کام سے شعبہ میں اپنی ساخت بنائی۔

پھر یہ سکّوں، تصاویر اور نادر کتابوں كا شوق کیسے پیدا ہوا؟

اس شوق کے کی بنیاد بچپن میں ہی پڑھ گئی تھی۔ اس کے لئے بچپن کے دو واقعات کا اثر میرے دماغ پر کافی گہرا رہا۔ میں گیارہ سال کا تھا۔ ایک دن گھر سے اسکول بیگ لے کر باہر نکلا تھا کہ ایک بزرگ سے ٹکرا گیا۔ میرے ٹکرانے سے وہ نیچے گر گئے۔ خیر میں نے ان کو اٹھایا، معافی مانگی اور ان کی لکڑی انہیں تھما دی۔ وہ نواب بسالت جاہ بہادر تھے ۔۔۔۔ ان سے ٹکرانے کا واقعہ میں نے گھر میں والد صاحب کو بتایا۔ انہیں حیرت ہوئی اور انہوں نے بتایا کہ وہ چھٹے نظام کے بیٹے تھے۔ بتایا جاتا ہے کہ ساتویں نطام بننے کے حقدار وہی تھے، لیکن تخت ان کے بجائے عثمان علی خان کو دیا گیا۔ اس دن کے واقعے کے بعد سے اکثر میری ملاقات بسالت جاہ سے ہونے لگتی۔ میں ان کے گھر پر بھی جانے لگا۔ ان کے پاس فوٹو گراف، کتابیں اور سکّوں کا کلکشن تھا۔ اسی دوران اسکول میں سکّوں کی ایک نمائش تھی، جسے دیکھ کر مجھے بھی سکّے جمع کرنے کا شوق ہوا اور اس وقت کے مشہور لوگوں نے میری رہنمائی بھی کی۔ بسالت جاہ کا جب انتقال ہوا تو انہوں نے اپنا سارا کلیکشن مجھے سونپ دیا۔

سرکاری خدمت میں رہتے ہوئے آپ خاص چیلنجز اور کامیابیاں؟

جیسا کہ میں نے بتایا کہ شروع میں میں نے کام کو زیادہ سنجیدگی سے نہیں لیا۔ محکمہ میں والد صاحب کے دوست تھے، انہوں نے مجھے سنبھالا اور میں شوق کی طرف آگے بڑھتا گیا، لیکن محکمہ میں کام کرنے کا میرا مختلف انداز تھا۔ افسر خوش رہتے تھے۔ انتظامی محکمہ میں پی اے (پرسنل افسر) کے کے طور پر میں نے کوشش کی کہ کسی بھی قسم کی فائل پر جس دن کام شروع ہوا ہو، سرکاری احکام بھی اسی دن جاری ہو۔ فائلوں کی بحالی کو بہتر بنایا۔ پھر جب پروٹوکول افسر کی ذمہ داری ملی تو توانائی کے شعبہ سے متعلق کاموں کی ذمہ داری تھی۔ حکام اور وزراء کی ملاقاتوں کے علاوہ ملک بیرون ملک سے اس سلسلے میں آنے والے نمائندوں کو مناسب خصوصیات پہنچانے سمیت ان کا سارا انتظام پروٹوکول محکمہ کی ذمہ داری ہوتی ہے۔ مجھے لگتا ہے کہ جب ہمیں اچھی تنخواہ مل رہی ہے تو پھر اچھا کام کیوں نہ کریں۔

تلنگانہ بننے کے بعد حکومت نے بجلی کے بحران پر کس طرح سے کنٹرول کیا، اس سے قبل آندھرا حکومت میں کیا خامياں تھیں؟

جب 2 جون 2014 کو نئی حکومت نے ذمہ داری سنبھالی تھی، تو ترقی ان کا بنیادی مقصد تھا اور ترقی توانائی کے بغیر ممکن نہیں ہوتی۔ اس بات کو حکومت نے سنجیدگی سے لیا اور صرف باتیں کرنے کی بجائے 50000 کروڑ روپے نئے منصوبوں کے لئے جاری کئے۔ اس طرح ایمانداری سے کام ہوا اور لوگوں نے دیکھا کہ بجلی کے شعبہ میں بہتری آئی ہے۔ جہاں تک سابق حکومتوں کا مسئلہ ہے، یہ بات طے تھی کہ ان کے پاس صوبائی تعصب تھا، جتنے بڑے بجلی کے منصوبے تھے سب آندھرا کے علاقے میں ہی بنائے گئے۔ اس لئے تلنگانہ اور خاص طور پر حیدرآباد میں بھی مسئلہ بنا رہا۔ اب تو تلنگانہ حکومت 6000 میگاواٹ بجلی کی پیداوار کے منصوبے پر کام کر رہی ہے۔

کبھی ایسا محسوس نہیں ہوا کہ نوکری چھوڑ کر پوری طرح تاریخ کی تحقیق میں نکل جائیں؟

ایک بار ایسا خیال ضرور آیا تھا، لیکن اس کی وجہ سرکاری سروس کی احساس کمتری اور شوق کو زیادہ اہمیت دینا نہیں تھا۔ جب میرا ٹرانسفر راماگنڈم میں کر دیا گیا تھا، اچانک ہارٹ اٹیک کی شکایت ہوئی۔ اس دوران سوچا کہ زیادہ تناؤ لینے کے بجائے ملازمت چھوڑنا چاہئے، لیکن جب ہسپتال میں دیکھا کہ میرے اعلی افسر مجھے ملنے آئے ہیں تو میری سمجھ میں آیا کہ دفتر میں میری مقبولیت ہے اور کام چھوڑنے کا خیال دل سے نکال دیا۔ ڈاکٹر نے جو مشورہ دیا تھا، وہ آج بھی یاد ہے۔ انہوں نے کہا تھا، 'اپنے آپ کو کبھی بیمار مت سمجھو۔ خون کی شریانوں میں بہاؤ رک گیا تھا، جسے صاف کر دیا گیا ہے۔ '

تاریخی دستاویزات کی شناخت میں کافی ماہر اور اور اس کے خریدنے میں کافی روپیہ لگتا ہے؟

جہاں تک نظر کی بات ہے، کچھ لوگوں کی دوستی اور رہنمائی نے کافی کچھ سکھا دیا تھا۔ کوئی بھی چیز پر جب تک مکمل اطمینان نہیں ہوتا، اسے نہیں لیتا۔ اب میرے پاس 1350 لے کر 1950 تک کے حیدرآباد میں چلنے والے سکّے موجود ہیں۔ ان سے متعلقہ کیٹ لاگ تقریبا 7000 ہیں۔ 1991 میں میں نے هرموذ قاضی سے سکّوں ذخیرہ 17000 روپے میں خریدا تھا، اس کی قیمت اب کروڑوں میں ہے۔ 4000 سکّے اور 1200 فوٹو گراف میرے کلیکشن میں ہیں۔ خورشيدجاہی تاریخ سے متعلق ایک کتاب 35 ہزار روپے میں تھی، وہ بھی میرے ذخیرہ کا حصہ ہے۔

گاندھیجی کا لکھا اردو خظ.. صفی اللہ کے کلکشن میں
گاندھیجی کا لکھا اردو خظ.. صفی اللہ کے کلکشن میں

یہ کتنا صحیح ہے حیدرآباد میں لوگوں نے غریبی کی وجہ سے بہت سے تاریخی اہمیت کی نایاب چیزیں بازار میں اونے پونے بیچ دی؟

یہ ٹھیک ہے۔ اس طرح کے کئی واقعات ہیں۔ میں دو مختلف واقعات کا ذکر کرنا چاہوں گا۔ ایک واقعہ حال حال کا ہے۔ بقرعيد کے لئے بکرے لا کر میں گاڑی کی صفائی کر رہا تھا۔ اسی دوران ایک شخص آیا۔ اس کی حالت سے ایسا لگتا تھا کہ کوئی سائل ہے۔ میں نے کچھ روپے اس کے ہاتھ میں رکھ کر اسے جانے کے لئے کہا، لیکن اس نے پیسے لینے کے بجائے کہا کہ میرے پاس کچھ ہے، جسے میں آپ کو فروخت کرنا چاہتا ہو۔ اس کو بقرعيد میں قربانی کے لئے بکرا خریدنے تھا۔ اس کے ہاتھ میں کچھ لفافے تھے، جن میں کچھ نایاب تصاویر تھیں۔ ان تصاوير کی قیمت بین الاقوامی مارکیٹ میں لاکھوں میں ہوگی، لیکن ان کے بدلے وہ صرف اتنے پیسے چاہتا تھا کہ بکرا خرید سکے۔

ایک اور واقعہ لوگوں کی زبان پر برسوں رہی۔ بتایا جاتا ہے کہ ایک نوکرانی نے نظام کے گھر سے ایک انگوٹھی چرائی تھی، اسے بازار میں فروخت کرنے آئی تو کئی دکانوں پر اسے کہا گیا کہ وہ نقلی ہے اور اس کی قیمت سوا روپے سے زیادہ نہیں ہے، جبکہ اس انگوٹھی کی قیمت سوا لاکھ روپے کی ہوگی۔ اس کے دوسری دکان پر پہنچنے سے پہلے ہی اس کے بارے میں معلومات وہاں پہنچ گئی، انگوٹھی کے نقلی ہونے کی بات کہیں اور مشکل سے وہ انگوٹی 2 روپے میں خریدی گئی اور اس سے ہوئی آمدنی زیورات فروشوں نے آپس میں بانٹ لی۔

آج نایاب اشیاء کی بین الاقوامی بازار کی حالت کیا ہے؟

تیل اور دفاع سے منسلک مصنوعات کے بعد دنیا کا سب سے بڑا تیسرا بازار نایاب اشیاء کا ہے۔ منشیات کی تجارت چوتھے مقام پر ہے۔

مستقبل میں آپ کی زندگی کا بنیادی مقصد؟

حیدرآباد کی مثبت تصویر کو ابھارنا ہی میرا بنیادی مقصد ہے۔ یہاں کی تاریخ کافی سنہری رہی ہے، میں چاہتا ہوں، اس کی صحیح تصویر لوگ دیکھیں۔ مستقبل بھی اسی شوق سے منسلک ر ہوں گا۔

--------------------------------

کامیابی کی منزل تک پہنچنے والے ایسے ہی حوصلہ مند افراد کی کچھ اور کہانیاں پڑھنے کے لئے ’یور اسٹوری اُردو‘ کے فیس بک پیج پر جائیں اور ’لائک‘ کریں۔

FACE BOOK

کچھ اور کہانیاں پڑھنے کے لئے یہاں کلک کریں۔

کشمیر میں ہزاروں یتیموں اور بے سہاروں کا سخی... سخاوت سنٹر

ایک پیسے کے انعام سے مولانا آزاد چیئر تک کا سفر

پچھلی صدی کے آخری دہے میں کہانیاں لکھنے کے مقصدسے صحافت میں قدم رکھا تھا۔ وہ کہانیاں جو چہروں پر پہلے اور کتابوں میں بعد میں آتی ہیں۔ اس سفر میں ان گنت چہروں سے رو بہ رو ہوا، جتنے چہرے اتنی کہانیاں، سلسلہ جاری ہے۔ पिछली सदी के आखरी दशक में कहानियाँ लिखने के उद्देश्य से पत्रकारिता में क़दम रखा था। वो कहानियाँ, जो चेहरों पर पहले और किताबों में बाद में आती हैं। इस सफर में अनगिनत चेहरों से रू ब रू हुआ, जितने चेहरे उतनी कहानियाँ, सिलसिला जारी है।

Related Stories

Stories by F M Saleem