نئے ڈیزائنرز کے لئے بہتر پلیٹ فارم 'بُٹِک آ ن كارٹ'

0

"مجھے ایسا لگتا تھا ، میں لوگوں کو بتا سکتی ہوں کہ وہ کس چیز کو کس طرح پہنیں- میں ان کے لئے ویسے کپڑے ڈیزائن کر سکتی ہوں جو ان پر اچھے لگتے ہیں"- یہ کہنا ہے 'بٹك آ ن كارٹ' کی بانی اور فیشن ڈیزائنر آرتی مشرا کا- آج آرتی اپنے آغاز (سٹارٹ اپ )کے ذریعے نہ صرف اپنے شوق کو پورا کر رہی ہیں بلکہ وہ نئے نئے ڈیزائنرز کو اپنے ساتھ شامل کر ان کی راہ آ سان بنا رہی ہیں-

آرتی نے الہ آباد یونیورسٹی سے فیشن ڈیزا ئننگ میں گریجویشن کیا - لیکن وہ اس شعبہ میں اپنا کیریئر بناتیں اس سے پہلے ہی ان کی شادی ہو گئی- شادی کے بعد آئی ذمہ داریوں کے باوجود آرتی نے فیشن ڈیزائننگ کے اپنے شوق کو مرنے نہیں دیا- تب ان کے شوہر نے مشورہ دیا کہ انہوں نے جس مقصد کے تحت تعلیم حاصل کی ہے وہ ضائع نہیں ہونا چاہئے- اسی بات کو ذہن میں رکھتے ہوئے آرتی مشرا نے 'بٹك آ ن كارٹ' قائم کی-

آرتی کے مطابق آج کے دور میں جتنے بھی پروفیشن ہیں ان میں کامیابی حاصل کرنے کے لئے ایک روڈ میپ ہوتا ہے- یہی وجہ ہے کہ کسی بھی شعبہ میں کام کرنے والے انسان کو پتہ ہوتا ہے کہ وہ آگے جاکر کیا بن سکتا ہے- لیکن ڈیزائن کے میدان میں ایسا نہیں ہے- اس شعبہ میں ڈیزائنر کے لئے کوئی روڈ میپ نہیں ہے- ان کا کہنا ہے کہ لوگ شوقیہ طور پر اس شعبہ میں آ تو جاتے ہیں لیکن ان کو یہ پتہ نہیں ہوتا کہ اس کام کو آگے کس طرح بڑھائیں- فیشن ڈیزا ئننگ کا کورس کرنے کے بعد کچھ لوگ فری لانسر کے طور پر کام کرتے ہیں، یا پھر کسی بڑے ڈیزائنر کے ساتھ شامل ہو جاتے ہیں اور کچھ لوگ اپنا چھوٹا سا بٹک کھول لیتے ہیں جو صرف محلہ میں چلتا ہے- ایسے میں وہ جو کرنا چاہتے ہیں نہیں کر پاتے اور ان کی پہچان سمٹ کر رہ جاتی ہے-

آرتی کا کہنا ہے کہ "نئے ڈیزائنرز کی اسی پریشانی کو دیکھتے ہوئے میں نے سوچا کہ کیوں نہ ایک ایسا پلیٹ فارم تیار کیا جائے جو فیشن ڈیزائنر کے لئے فائدہ مند ہو- جہاں پر وہ اپنے تیار شدہ ڈیزائن کا آن لائن نمائش کرسکیں اور آرڈر ملنے پر وہ اس کو ڈلوزر بھی کرسکیں - "

وہ بتاتی ہیں کہ اس کام کو کوئی بھی اپنے گھر سے بھی کر سکتا ہے- اتنا ہی نہیں ان کے اس کام میں فیشن ڈیزائننگ سیکھ رہے دوسرے اور تیسرے سال کے طالب علم بھی شامل ہو سکتے ہیں- 'بٹک آ ن كارٹ' پر ڈیزائنر اپنے برانڈ کے تحت سا مان فروخت کر سکتے ہیں- ایسے میں انہیں کسی خاص برانڈ یا کمپني کے لئے کام کرنے کی ضرورت نہیں ہوتی- جس کے بعد کوئی بھی نیا ڈیزائنر یہ بتا سکتا ہے کہ فلاں ڈیزائن کے کپڑے اس نے ڈیزائن کیے ہیں- اس ڈیزائنرکو الگ پہچان تو ملتی ہی ہے ساتھ ہی اس کے پروڈکٹ کے لئے بازار بھی تیار ہوتا ہے-

‘'بٹک آ ن كارٹ' کا آغاز اس سال مئی میں ہوا تھا - الہ آباد کی رہنے والی آرتی بتاتی ہیں کہ ان کے اس پلیٹ فارم میں دہلی، ممبئی، سورت ، الہ آباد اور دوسرے شہروں کے ڈیزائنر موجود ہیں- آج ان کی ویب سائٹ کو ہر روز 50 سے زیادہ لوگ ہٹ کرتے ہیں- کمپنی کی آمدنی کے بارے میں آرتی کا کہنا ہے کہ وہ ڈیزائنرز کے کپڑوں کی مفت میں نمائش کرتی ہیں لیکن کسی بھی ڈیزائنر کے کپڑے فروخت ہونے پر وہ اس سے ایک طے شدہ رقم لیتی ہیں- اس میں کوریئرز، مقامی ٹیکس اور دوسری طرح کے تمام رقم شامل ہوتے ہیں-

آرتی کا منصوبہ فیشن ڈیزائن کے مختلف انسٹی ٹیوٹ کے طالب علموں کو بھی اپنے ساتھ شامل کرنے کی ہے- اس کے علاوہ اس ویب سائٹ پر بلاگ لکھنے کے لئے ایک خاص جگہ بنانے پر کام چل رہا ہے جہاں کوئی بھی شخص ڈیزائن سے منسلک بلاگ لکھ سکتا ہے اور کسی بھی ڈیزائن پر تبصرہ کر سکتا ہے- آرتی کا کہنا ہے کہ "میں چاہتی ہوں کہ یہ ایسا پلیٹ فارم بنے جہاں پر فیشن ڈیزائنر کے لئے ہر طرح کی سہولت دستیاب ہو" وہ بتاتی ہیں کہ یہ نئے ڈیزائنرز کے لئے شروع کیا گیا پلیٹ فارم ہے- جس کا حصہ بننے کے لئے کسی بھی ڈیزائنر کو ایک آن لائن فارم بھر نا ہوتا ہے جس کے بعد آرتی اور ان کی ٹیم کسی نئے ڈیزائنر کے ڈیزائن کو دیکھتی ہیں کہ وہ کس معیارکا ہے- جس کے بعد اس ڈیزائن کو فروخت کرنے کے لئے ویب سائٹ پر رکھ دیا جاتا ہے- اس کے علاو 'بٹك آ ن كارٹ'سے جڑنے کی اور کوئی دوسری شرط نہیں ہوتی ہے- کسی بھی مصنوعات کی قیمت ڈیزائنر ہی طے کرتا ہےاور اسے پوری آ زادی ہوتی ہے کہ وہ ‘بٹك آ ن كارٹ’ میں کس طرح کے کپڑے ڈالے -جیسے بالوں والی، ویسٹرن یا پھر پھكي اسٹائل- اس میں کسی طرح کی کوئی روک ٹوک نہیں ہوتی لیکن ڈیزائنرکو خیال رکھنا ہوتا ہے کہ اس کے ڈیزائن شدہ مصنوعات گاہکوں کو پسند آئیں اور ویب سائٹ کے مطابق ہوں-

'بٹك آ ن كارٹ' میں ملنے والے ملبوسات کی قیمت دو سو روپے سے شروع ہو کر 10 ہزار روپے تک ہے - اتنا ہی نہیں آرڈر کی ترسیل کے بعد آرتی خود ہر گاہک کو فون کر ان کی رائے جاننا چاہتی ہیں- آرتی کے مطابق 'بٹك آ ن كارٹ' میں یوں تو خواتین سے منسلک ہر طرح کے کپڑے مل جائیں گے لیکن سب سے زیادہ ڈیمانڈ انڈین کپڑوں کی ہوتی ہے- اس کے علاوہ کوئی خریدار چاہے کہ اس کے لئے کچھ خاص طرح کے کپڑے ڈیزائن کئے جائیں تو وہ ان کی ڈیمانڈ پر بھی کپڑے ڈیزائن کرتی ہیں- اب مستقبل میں ان کی منصوبہ بندی مردوں کے لئے بھی ڈیزائنر لباس پر کام کرنے کی ہے-

(یہ ہریش بشٹ کی کہانی کا اردو ترجمہ ہے۔)