کھیل كھیل میں بچوں کو پڑھانے کا انوکھا طریقہ

'سپاسٹونس' 15 مہینوں کی محنت کے بعد تیار ہوا پہلا ہندوستگانی وسیع ملٹی پلیئر آن لائن کھیل ہے، جسے خاص طور پر 6 سے 12 سال کی عمر کے بچوں کے لئے تیار کیا گیا ہے.

0

آن لائن کھیل یا سادہ الفاظ میں کہیں تو گیمنگ کی اپنی ایک دلچسپ دنیا ہے اور تعلیم کے ساتھ اس کا میل  کچھ حیرت انگیز نتائج لے کر سامنے آ رہا ہے۔  مطالعہ کے عمل کو کھیلوں سے  مدد مل  رہی ہے، جس میں کھیل انجنیرنگ کے استعمال  سے سیکھنے کے عمل کو اور بھی مزیداراور پہلے سے زیادہ مؤثر بنا دیا ہے۔

آئی 2 انڈیا اور وینچر فیکٹری نام کی اسٹارٹ اپ کمپنی کی جانب سے لایا گیا آئی 2 پلے پہلا  ہندوستانی وسیع ملٹی پلیئر آن نلائن کھیل (ایم ایم اوجی) ہے جس میں بچے کھیل کے ساتھ علم کی باتیں بھی سیکھتے ہیں۔ تقریبا تین سال  پرانا عمر آئی 2 پلے  اب 6 سے 12 سال کی عمر کے بچوں کو ذہن میں رکھ کر آن لائن ملٹی پلیئر ورچوء ل گیمز 'سپاسٹونس' کو لے کر آیا ہے۔ 'سیکھنے کا عمل گیمفکیشن' پر مبنی ہے۔اس کھیل کو بین الاقوامی مدد سے تیار کیا گیا ہے اور دنیا کے مشہور نیویارک یونیورسٹی، مشی گن اسٹیٹ یونیورسٹی، اور امپیریل کالج اس کے ساتھ نالیج پارٹنر کے طور پر جڑے ہوئے ہیں۔

گیمفكیشن کے ذریعے 'اسپاسٹونس' نوجوان صارفین کو مختلف سرگرمیوں میں لگا کر ان کی تعلیمی  اور سماجی مہارت کو تراشنے کا کام کرتا ہے وہ بھی پہلے ہی دن کے کھیل سے۔ 'اسپاسٹونس' پر سیکھنے کا عمل ہمارے ملک میں صدیوں سے رائج رٹنے کے طریقہ سے الٹا ہے۔ 'اسپاسٹونس' بچوں کو روایتی تعلیمی نظام کے ساتھ ساتھ تجرباتی مشقوں کا بھی موقع دستیاب کرواتاہے۔

آئی 2 انڈیا اور وینچر فیکٹری کا بنیادی مقصد سیکھنے کے تجربے کوہنسی  مذاق بنانے کے ساتھ ساتھ تعلیم کو بہتر کرنے اور  بچوں میں قیادت، ٹیم ورک اور شراکت کا احساس بڑھانا ہے۔ 'اسپاسٹونس' پر کھلاڑی لفظ  کی تعمیر، ریاضی پہیلی، خزانہ ہنٹ کے علاوہ کئی دیگر آن لائن کھیل پر دیگر کھلاڑیوں کے ساتھ ہاتھ آزما سکتے ہیں اور پوائنٹس حاصل کر سکتے ہیں۔

روی، سی ای او، آئی 2 پلے

شروع میں آئی 2 پلے کی ٹیم کا خیال جگہ کے موضوع پر مبنی کھیل بنانے کا تھا جس میں محدود پلاٹ ہونے کی وجہ سے انہیں اپنے ہاتھ واپس کھینچنے پڑے۔ جلد ہی اس ٹیم نے اور زیادہ دلچسپ خیال کو منتخب کیا اور 'اسپاسٹونس' کا جنم ہوا۔ ایک طرف جہاں دیگر ایم ایم اوجي کو تیار ہونے میں 2 سال سے زیادہ کا وقت لگتا ہے وہیں  یہ ٹیم رات دن ایک کر کے محض 15 ماہ میں اس نئے تصور کے ساتھ دنیا کے سامنے آئی۔ ڈیزائن، اہل اور پلاٹ سمیت کھیل کے ہر تفصیلات پر ٹیم نے بچوں، والدین اور اساتذہ کی مدد سے مکمل تحقیقات کے بعد ہی اسے لانچ کیا گیا۔

'اسپاسٹونس' کی دلچسپی اور انوكھاپن دیکھتے ہوئے مشہور زمانہ کمپنی برٹینيا نے اس میں دلچسپی دکھائی اور ان برٹینيا  کی حمایت سے  فروری ۲۰۱۵  میں اسے لانچ کیا گیا۔ جلد ہی اس کھیل نہ شہرت کی چوٹی کو چھو لیا اور موجودہ میں روزانہ 500 سے زائد کھلاڑی اس آن لائن کھیل کا لطف اٹھا رہے ہیں۔ پہلے پانچ ہفتوں کے دوران ہی 25 ہزار سے زائد صارفین نے ان میں دلچسپی جتائی ۔   کمپیوٹر کے ساتھ ساتھ  اس کا موبائل ورژن بھی پرستار کے لئے دستیاب ہو جائے گا۔

'اسپاسٹونس' اس فورم کو بچوں کے لیے مفت رکھنا چاہتا ہے۔ انہیں امید ہے کہ اس کی مقبولیت سے متاثر ہوکر کتابوں اور دیگر اشیاء کے بیچنے والے 'اسپاسٹونس' کا استعمال اپنے اشتہارات کے لئے کریں ، جس سے انہیں آمدنی کی  ہوگی۔ 

Related Stories