خلیل احمد، جنہوں نے کاروباری بننے کے لئے چھوڑی مرسڈيز کار اور چھوڑا عالی شان بنگلہ

کاروباری بننے کے لئے چھوڑی آرام والی زندگی ... عمان میں نوکری سے ہوئی کمائی کی موٹی رقم لگا دی کمپنی میں ... خطرے اٹھائے اور بہت کچھ داؤ پر لگایا ... بالکل برعکس حالات اور ہر قدم پر تھا چیلنج ... توہین سہی، دھکے کھائے، لوگوں نے حوصلہ شکنی کی... لیکن جی چھوٹا نہیں کیا اور کوششیں جاری رکھیں ... خلیل احمد نے شانتا بايوٹیكنكس کو کامیاب بننے میں نبھایا اہم رول ... بطور کاروباری اور تجارتی لکھی کامیابی کی نئی کہانی ... دولت اور شہرت کما لینے کے بعد اب معاشرے خدمت کے لئے کیا خود کو وقف

0

کہتے ہیں کہ ہندوستان میں بايوٹیکنالوجی کی کہانی شانتا بايوٹیكنكس سے شروع ہوتی ہے۔ حیدرآباد کی اس کمپنی نے جو شاندار کام کیا، اس سے ہندوستان میں نیا اور مثبت انقلاب آیا۔ ملک ہی نہیں بلکہ دنیا بھر میں کروڑوں غریب اور ضرورت مند لوگوں کو شانتا بايوٹیكنكس کے ٹیکوں سے فائدہ ہوا۔ شانتا بايوٹیكنكس کی وجہ سے ہی خطرناک اور جان لیوا بیماریوں سے بچانے والے ویکسین عام آدمی کی پہنچ میں آ پائے تھے۔ اس حیدرآبادی کمپنی کے بازار میں اترنے سے پہلے یہ ویکسین بہت مہنگے بکتے تھے اور صرف امیر لوگ ہی اسے خریدنے کی صلاحیت رکھتے تھے۔ شانتا بايوٹیكنكس نے کروڑوں بچوں کو خترناک بیماریوں کا شکار ہونے سے بچایا ہے۔

شانتا بايوٹیكنكس کی تاریخی کامیابی میں اہم رول خلیل احمد کابھی ہے۔ خلیل احمد نے اس وقت تک کی بچت، اپنی ساری رقم شانتا بايوٹیكنكس میں لگا دی تھی۔ وہ کمپنی کے ایگزیکٹیو ڈائریکٹر بنائے گئے تھے۔ بڑے مشکل بھرے حالات میں انہوں نے کمپنی کو کھڑا کرنے اور اسے کامیابی کی راہ پر لے جانے میں اپنی قیمتی شراکت ادا کی تھی۔ اسی کمپنی سے ہی بطور کاروباری انہوں نے جو کامیابی حاصل کی وہ ایک غضب کی مثال ہے۔ خلیل احمد کی کامیابی کی کہانی میں لوگوں کے لئے کئی سارے پیغام چھپے ہوئے ہیں۔ ایک اوسط طبقے کے خاندان میں جنم لینے کے بعد بھی کس طرح خلیل احمد نے نیا کاروبار کھڑا کرنے میں جو دلچسپی دکھائی اور کاروبار کیا وہ تحریک و ترغیب کی ایک شاندار مثال ہے۔

خلیل احمد کی کامیابی کی کہانی ممبئی سے شروع ہوتی ہے۔ ویسے تو خاندان بنیادی طور پر کرناٹک کے منگلور کا رہنے والا تھا، لیکن والد کی ریلوے میں کام کرتے تھے۔ گھر خاندان چلانے میں مدد کرنے کے مقصد سے ماں پڑوسیوں کے کپڑے بھی سلتی تھیں۔ وہ والد کو ریلوے کی طرف سے الاٹ کئے گئے فلیٹ میں رہتے تھے۔

خلیل احمد کے والد کی سوچ الگ تھی۔ وہ نہیں چاہتے تھے کہ ان کے بچے بھی سرکاری نوکری کریں۔ انہیں لگتا تھا کہ وقت پر ملنے والی تنخواہ، رہنے کے لئے دیی جانے والا مکان اور ریٹائرمنٹ پر ملنے والی پنشن کو دیکھ کر ان کے بچے بھی سرکاری ملازم بننے کی ہی سوچیں گے۔ اسی وجہ سے باپ ہمیشہ اپنے بچوں کو سرکاری نوکری کے پیچھے نہ پڑنے اور اس سے باہر کی دنیا میں بڑا کام کرنے کی ہدایت دیتے تھے۔ والد کی باتوں کا اثر خلیل احمد پر بھی پڑا۔ اسکول، کالج کی تعلیم مکمل کرنے کے بعد انہوں نے ممبئی میں ایک كنسلٹسی کمپنی میں کام کرنا شروع کیا۔ یہیں پر کام کرتے ہوئے انہیں عمان جانے کا موقع ملا۔ عمان میں انہیں وہاں کے وزیر خارجہ کے اسسٹنٹ کے اسسٹنٹ کی نوکری ملی تھی۔ عمان میں خلیل احمد نے خوب دل لگا کر کام دیا۔ اپنی قابلیت سے سب کو متاثر کیا۔ ان کی ترقی ہوتی چلی گئی۔ وہ وزیر خارجہ کے اسسٹنٹ بنے اور پھر آگے چل کر بزنس مینیجر۔ ایک وقت ایسا آیا جب وزیر خارجہ کے سارے کاروبار کو دیکھنے، سنبھالنے کی ذمہ داری خلیل احمد کے کندھوں پر آ گئی۔ اس ذمہ داری کو بھی وہ بخوبی نبھانے لگے۔ اسی دوران 1993 میں خلیل احمد کاروبار کے سلسلے میں ہندوستان آئے۔ وہ اس وقت عمان کے وزیر خارجہ کے بزنس منیجر تھے۔ ارادہ ذاتی ہوائی جہاز سروس شروع کرنے کا تھا۔ ہوائی سفر کے کاروبار کی باريكياں سمجھنے وہ ممبئی پہنچے تھے۔ ممبئی میں کچھ دوستوں نے خلیل احمد کو حیدرآباد میں بايوٹیکنالوجی کے میدان میں شروع کیے جا رہے ایک پروجیکٹ کے بارے میں بتایا۔ انہیں یہ پروجیکٹ پسند آیا۔ اس کے بعد وہ حیدرآباد آئے اور انہوں نے اس پروجیکٹ کو شروع کرنے والے ورپرساد ریڈی سے ملاقات کی۔ یہ ملاقات ایک تاریخی سفر کا آغاز تھا۔ اایک ایسے سفر کا آغاز، جو انقلابی تبدیلیوں کا حامل بنا، جس کی وجہ سے ہندوستان میں خطرناک اور جان لیوا بیماریوں سے بچانے والے ویکسین بننے لگے۔ ہندوستان میں اس طرح کی ویکسین بننا ایک بڑی کامیابی تو تھی ہی، ان ٹیکوں کو عام آدمی کی پہنچ میں لانا سب سے بڑی کامیابی تھی۔ ایک انتہائی خاص ملاقات میں ورپرساد ریڈی سے پہلی ملاقات کی یادیں تازہ کرتے ہوئے خلیل احمد نے کہا، "مجھے ورپرساد ریڈی بہت پسند آئے۔ ان کی باتیں پسند آئیں۔ کام کے تئیں غضب کا جنوں تھا ان میں۔"

ورپرساد ریڈی سے ملنے کے بعد خلیل احمد واپس چلے گئے۔ وہاں انہوں نے وزیر خارجہ کو اپنے ہندوستانی سفر کے تجربے بتائے۔ ورپرساد ریڈی کے بايوٹیكنولجی پروجیکٹ کے بارے میں بھی بتایا۔ وزیر کو بھی پروجیکٹ بہت پسند آیا۔ وزیر نے فیصلہ کر لیا کہ وہ بھی اس پروجیکٹ سے جڑیںگے۔ عمان کے وزیر خارجہ کی اس پروجیکٹ میں دلچسپی کی ایک خاص وجہ تھی۔ وزیر کے کچھ رشتہ دار اور جان پہچان کے کئی لوگ ہیپاٹائٹس بی کا شکار تھے۔ بیماری کے علاج کے لئے انہیں امریکہ جانا پڑتا تھا۔ وزیر جانتے تھے کہ بیماری کا علاج بہت مہنگا ہے۔ انہیں اس بات کا احساس ہو گیا کہ اگر ہندوستان میں ہیپاٹائٹس بی سے بچانے والا ویکسین بن گیا تو لوگوں کی بہت بڑی مشکل دور ہو جائے گی۔ لوگوں کو آسانی سے واجب دام پر ویکسین مل جائے گا۔

عمان کے وزیر خارجہ حیدرآباد آئے۔ خلیل احمد ان کے ساتھ تھے۔ ورپرساد ریڈی سے ان کی ملاقات ہوئی۔ وزیر کو بھی بھروسہ ہوا کہ ورپرساد ریڈی بہت اچھے آدمی ہیں۔ ان کی ٹیم بھی اچھی ہے۔ وہ جان گئے کہ اگر پراجیکٹ کامیاب ہوا تو اس کا معاشرے پر بہت اچھا اثر پڑے گا۔ غریب لوگوں کو بہت فائدہ پہنچے گا۔ وزیر خارجہ نے ٹھان لی کہ وہ بھی اس سماجی انقلاب میں اپنا تعاون دیں گے۔ نتیجہ یہ ہوا کہ وزیر نے بھی اس بايوٹیكنولجی پروجیکٹ میں سرمایہ کاری کی۔

خلیل احمد نے بتایا کہ ان دنوں وہ اپنے وطن یعنی ہندوستان واپس آنا چاہتے تھے۔ انہیں بايوٹیكنولجی کے اس پروجیکٹ میں امید نظر آئی۔ خلیل احمد کے دماغ میں یہ خواہش بھی پیدا ہوئی کہ وہ خود بھی اپنی کمائی اس پروجیکٹ میں لگائیں۔ وہ کہتے ہیں،

"مجھ میں انٹرپرینيور بننے کا جنون تھا۔ مجھے لگا کہ اس پروجیکٹ کے ذریعہ میں بھی انٹرپرینيور بن سکتا ہوں۔ مجھے اس میں بہت امکانات نظر آئیں تھیں۔"

اس کے بعد انہوں نے وزیر کو اپنی خواہش بھی بتائی۔ اس پر وزیر ہنس پڑے تھے۔ خلیل احمد نے بتایا، "وزیر نے مجھ سے پوچھا تھا - آپ کیوں رسک لینا چاہتے ہیں۔ آپ کی عمر بھی نہیں رسک لینے کی۔ سب کچھ ٹھیک چل رہا ہے، پھر خطرات لینے کا کیا فائدہ۔"

وزیر کی یہ بات صحیح تھی۔ عمان میں خلیل احمد کو کوئی تکلیف نہیں تھی۔ ترقی سے بھرپور زندگی تھی۔ عیش و آرام تھے۔ رہنے کوشاندار بنگلہ تھا۔ گھومنے پھرنے نے لئے مرسڈيز کار تھی۔ بزنس کلاس میں ہوائی سفر ہوا کرتے تھے۔ لیکن، خلیل احمد کا من بے چین تھا وطن لوٹنے کو۔ اتنا ہی نہیں دل و دماغ دونوں کاروباری بننے کی ترغیب دے رہے تھے۔ عمان کے وزیر خارجہ بھی خلیل احمد کے دماغ کی بات کو سمجھ گئے تھے۔ انہوں نے خلیل احمد کو بھارت واپس جانے کی اجازت دے دی۔ خلیل احمد کی خوشی کا ٹھکانا نہیں رہا۔ نئے خواب لئے، نئی توقعات سے بھرپور اعتماد کے ساتھ خلیل احمد بھارت لوٹے۔

لیکن، چیلنجز اور مشکلات اپنی باہیں پسارے ہندوستان میں ان کا استقبال کرنے کے لئے تیار کھڑی تھیں۔ بھارت پہنچتے ہی خلیل احمد کی زندگی پھر سے بدل گئی۔ مرسڈيز کار کی جگہ فیئٹ پدمنی کار نے لی۔ بزنس کلاس کی دورے بند ہوئے۔ مکان بھی عمان جتنا بڑا اور عالی شان نہیں رہا۔ سب سے بڑی تبدیلی دفتر کی تھی۔ عمان کے وزیر خارجہ کے خوبصورت اور تمام سہولیات سے لیس دفتر سے خلیل احمد براہ راست ایک چھوٹے سے دفتر میں آ گئے تھے۔ ان دنوں کی یادیں تازہ کرتے ہوئے خلیل احمد نے بتایا،

"ہم نے ایک چھوٹا سا دفتر لیا تھا۔ دفتر کے نام پر صرف ایک کمرہ تھا۔ حیدرآباد میں جوبلی ہلز کے روڈ نمبر 10 پر ہمارا یہ دفتر تھا۔ ورپرساد ریڈی، ہمارے فائنیشيل ایڈوائزر اور میں ایک ہی کمرے میں بیٹھ کر کام کرتے تھے۔ "

خلیل احمد نے اپنی اب تک کی کمائی کا بہت بڑا حصہ بايوٹیكنولجی پروجیکٹ میں لگا دیا تھا۔ انہیں شانتا بايوٹیكنكس میں ایگزیکٹیو ڈائریکٹر بنایا گیا تھا۔ وہ کمپنی کے فل ٹائم ڈائریکٹر تھے۔ بطور ایگزیکٹو ڈائریکٹر جب خلیل احمد نے شانتا بايوٹیكنكس کے لئے کام کرنا شروع کیا، انہیں احساس ہو گیا کہ حالات برعکس ہیں۔ سامنے چیلنجز بہت ہی بڑ\ے ہیں۔ راستہ آسان نہیں بلکہ بہت ہی مشکل ہے، لیکن نیت نیک تھی، حوصلے بھی بلند تھے اور خطرے تو اٹھا لیے تھے، کوششیں جاری رہیں۔ خلیل احمد نے بتایا، "شانتا بايوٹیكنكس کی پہلی لیبارٹری عثمانیہ یونیورسٹی کے مائکروبایڈلاجی ڈپارٹمنٹ میں بنی تھی۔ محکمہ کی حالت بہت خراب تھی۔ لیبارٹری 'ليكگ ٹوالیٹ' کے پاس میں تھی۔ آغاز گیتا شرما کی قیادت والی سائنسدانوں کی ٹیم نے کیا۔ تقریبا ایک سال تک 'ليكگ ٹوالیٹ' کے پا س کام کرنے کے بعد شانتا بايوٹیكنكس کے سائنسدانوں کو کام کرنے کے لئے ایک بہت اچھی جگہ ملی تھی۔ شانتا بايوٹیكنكس کا سینٹر فار سیلولر اینڈ ملكيولر بائلوجی (سي سي ایم بي) سے قرار ہو گیا۔ اس وقت سي سي ایم بي کی گنتی ہندوستان کے سب سے اچھے اور مشہور تحقیقی مراکز میں ہوتی تھی۔ سہولیات یہاں بہت ہی اچھی تھیں۔ سي سي ایم بي میں ڈیڑھ سال کام کرنے کے بعد شانتا بايوٹیكنكس کے ملازمین کو اپنی خود کی جگہ اور لیبارٹری مل گئی۔ کمپنی نے اپنا خود کا تحقیق- مرکز بنا لیا تھا۔ حیدرآباد سے کچھ دور میڈچل علاقے میں شانتا بايوٹیكنكس کا یہ ریسرچ سینٹر تعمیر کیا گیا تھا۔ "

ایسا بھی نہیں تھا کہ صرف تحقیق کے لئے اچھی سی جگہ حاصل کرنے میں ہی دقتیں آئی تھیں۔ مصیبتیں اور بھی تھیں۔ شانتا بايوٹیكنكس میں جو سرمایہ کاری ہوئی تھی اس میں سے بڑی رقم تحقیق پر ہی لگائی گئی تھی۔ پھر بھی تحقیق کے لئے اور بھی تگڑی رقم کی ضرورت تھی۔ کمپنی کے دوسرے کاموں کے لئے بھی روپیوں کی ضرورت محسوس کی جانے لگی تھی۔ تحقیق کو انجام تک پہنچانے کے لئے کمپنی کے بانی ورپرساد ریڈی اور ایگزیکٹو ڈائریکٹر خلیل احمد نے بینکوں کا دروازہ کھٹکھٹانا شروع کیا، لیکن بینکوں سے قرض لینے کی ساری کوششیں ناکام رہیں۔

"حیدرآباد میں ایسا کوئی بینک نہیں تھا جہاں ہم نہیں گئے تھے۔ ہر بینک نے ہمارے ایپلی کیشنز کو رجیکٹ کر دیا تھا۔ ہمیں ذلیل بھی کیا گیا۔ کئی جگہ ہمیں دھکے مار کر باہر نکالا گیا۔ ورپرساد ریڈی الیکٹرانکس انجینئر تھے۔ میں نے مینجمنٹ اور مارکیٹنگ کا کام کیا تھا۔ بینك والوں کا یہی سوال ہوتا کہ ایک الیکٹرانکس انجینئر اور ایک مارکیٹنگ کا آدمی بايوٹیكنولجی میں کس طرح کام کریںگے۔"

خلیل احمد اس کو خدا کی عنایت ہی مانتے ہیں کہ تحقیق اور دوسرے ضروری کاموں کے لئے شانتا بايوٹیكنكس کو روپے مل گئے تھے۔ اس بار بھی مدد عمان ہی آئی تھی۔ وزیر خارجہ نے اپنی ذاتی ضمانت دے کر عمان سے شانتا بايوٹیكنكس کو قرض دلوایا تھا۔

محنت نہیں رکی تھی۔ کوششیں مسلسل جاری تھی۔ تحقیق زوروں پر تھا۔ شانتا بايوٹیكنكس کے ہر ملازم اور سائنسدان نے خود کو 'تفسیر بننے کے مشن' میں وقف کر دیا تھا۔ یہی وجہ تھی کہ نتیجہ اچھا نکلا۔ ورپرساد ریڈی کا خواب سچ ہوا۔ خلیل احمد کا مقصد کامیاب ہوا۔ شانتا بايوٹیكنكس نے ہیپاٹائٹس بی سے بچانے والا ویکسین بھارت میں بنا لیا۔ یہ ایک بہت بڑی کامیابی تھی۔ بھارت میں نئی انقلاب کا آغاز تھا

ان سب سے بڑی بات ایک اور تھی۔ جان لیوا اور خطرناک بیماری ہیپاٹائٹس بی سے بچنے کے لیے ضروری ویکسین اب عام آدمی کی پہنچ میں آ گیا تھا۔ اس کامیابی سے پہلے ہندوستان میں غیر ملکی کمپنیوں نے ایک ویکسین کی قیمت آٹھ سو روپے سے زیادہ مقرر کی تھی۔ شانتا بايوٹیكنكس نے اسی ویکسین کو ڈیڑھ سو روپے میں فروخت کیا تھا۔ خلیل احمد نے بتایا کہ اس کامیابی کے بعد بھی تکلیفیں جاری رہیں۔ ان کے الفاظ میں،

"کامیابی آسان نہیں تھی، لیکن اس کے بعد بھی دقتیں آئیں۔ ویکسین بنا لینے کے بعد بھی بینکوں نے ہمیں قرض نہیں دیا۔ انہیں لگتا تھا کہ ہم نے 'فلوك' میں ویکسین بنا لیا ہے۔ بینک والے کہتے تھے کہ ہم نے ویکسین بنانے میں کامیابی تو حاصل کر لی ہے، لیکن ہم مارکیٹنگ میں فیل ہو جائیں گے۔ ایک شخص نے تو یہ کہا کہ - یو ول بی كلڈ ان مارکیٹنگ "مایوس کرنے والے ان الفاظ کا کچھ اثر تو ضرور پڑا تھا، لیکن خلیل احمد نے ہمت نہیں ہاری۔ ورپرساد ریڈی، خلیل احمد اور ان کی ساری ٹیم نے وہی جوش اور پکے ارادوں کے ساتھ کام جاری رکھا۔

اسی درمیان مارکیٹنگ میں آ رہی چیلنجوں کو ذہن میں رکھتے ہوئے ورپرساد ریڈی اور خلیل احمد نے مشہور فارما کمپنی ڈاکٹر ریڈیز لیب سے سمجھوتہ کرنے کی سوچی۔ بات چیت شروع ہوئی۔ معاہدہ ہونے کے دہانے پر پہنچا جس میٹنگ میں سمجھوتہ طے ہو جانا تھا اس اجلاس میں ایسا کچھ ہوا کہ ورپرساد ریڈی اور خلیل احمد نے واک آؤٹ کر دیا۔ اس واقعہ کا ذکر کرتے ہوئے خلیل احمد نے بتایا،

"قرار تقریبا ہو گیا، لیکن کچھ ایسی شرائط تھیں جس کی وجہ سے ہم نے اس میٹنگ سے واک آؤٹ کر دیا تھا۔ رات کے قریب ساڑھے گیارہ بجے اميرپیٹ میں ایک چوراهے پر ورپرساد ریڈی اور میں نے یہ فیصلہ لیا تھا کہ ہم شانتا بايوٹیكنكس کو انڈیپینڈنٹ ہی رکھیں گے۔ " اپنے اس فیصلے پر خلیل احمد پھولے نہیں سماتے۔

انہوں نے کہا، "اگر وہ معاہدہ ہو جاتا تو ہمارا نام و نشان نہیں ہوتا۔ ہماری ہستی شاید مٹ گئی ہوتی۔ ہمارے بارے میں کسی کو پتہ ہی نہیں چلتا۔"

اميرپیٹ کے ایک چوراهے پر لیا گیا وہ فیصلہ آگے چل کر تاریخی ثابت ہوا۔ ڈاکٹر ریڈيز لیب سے قرار کے امکانات کو ختم کرنے کے بعد ورپرساد ریڈی اور خلیل احمد نے اپنی ٹیم کے ساتھ نئے سرے سے کام شروع کیا۔ اس ٹیم نے کچھ ڈاکٹروں کی مدد سے لوگوں میں ہیپاٹائٹس بی سے بچنے کے اقدامات کے بارے میں بیداری لانا شروع کیا۔ لائنز کلب، روٹری کلب اور دوسرے غیر سرکاری اداروں کی مدد لی۔ اجتماعی ویکسینیشن پروگرام کئے۔ سیلز اور مارکیٹنگ کے لئے نئےنئے طریقے آزمائے۔ ان سب کی وجہ سے جلد شانتا بايوٹیكنكس کا ٹیکہ مقبول ہو گیا۔ لاکھوں لوگ اپنے بچوں کو ہیپاٹائٹس بی سے بچانے کے ورپرساد ریڈی اور خلیل احمد کی ٹیم کی طرف سے بنائےویکسین لگوانے لگے۔

خلیل احمد نے بتایا، "شروع میں تو ہمیں ڈاکٹروں نے نظر انداز کیا، لیکن جیسے جیسے ہماری مقبولیت بڑھتی گئی، انہوں نے بھی ہماری بنائی چیزوں کو پرسكرائب کرنا شروع کیا۔ کچھ ہی دنوں میں شانتا بايوٹیكنكس کا مارکیٹ شیئر چالیس فیصد ہو گیا۔ اس کے بعد ہم نے پیچھے مڑ کر نہیں دیکھا۔ "

شانتا بايوٹیكنكس نے جو کیا وہ ملک اور دنیا میں بڑی مثال بنی۔ ہیپاٹائٹس بی کے بعد دوسری جان لیوا اور خوفناک بیماریوں سے بچانے والے ویکسین بنائے۔ دنیا کے مختلف ممالک نے یہ ویکسین منگوائے اور ضرورت مند افراد کو دئے گئے۔ شانتا بايوٹیكنكس کو یونیسیف سے بھی آرڈر ملے۔ کمپنی نے خوب شہرت حاصل کی۔ خوب منافع بھی کمایا۔ کمپنی میں سرمایہ کاری کرنے والے ہی نہیں، بلکہ تمام ملازم بھی مالا مال ہو گئے۔ آگے چل کر سنوفی نام کی ایک مشہور کمپنی نے شانتا بايوٹیكنكس کے حصص یافتگان کے لیے بھاری قیمت دے کر ان کے اسٹاک خریدے تھے۔ خاص بات یہ تھی کہ کمپنی کے بانیوں نے تمام ملازمین کو اسٹاک دیے تھے اور تمام اسٹاک سنوفي کو بیچ کر تگڑی رقم کے مالک بن گئے۔ ایک سوال کے جواب میں خلیل احمد نے کہا، "شہرت، دولت ملی، یہ تو اچھی بات تھی۔ لیکن شانتا بايوٹیكنكس میں کام کرتے ہوئے جو تسسلی اور خوشی زندگی میں وہی سب کچھ ہے میرے لئے۔ ویسی تسسلی مجھے کہیں نہیں ملی۔ "

اپریل 2009 میں خلیل احمد نے شانتا بايوٹیكنكس کو چھوڑ دیا۔ کیوں کہ کام کاج کے کچھ طور طریقے بدلے تھے۔ خلیل احمد نے بتایا، "مجھے بھی لگا کہ ہر کام مینجمنٹ انفارمیشن نظام کے تحت ہو رہا ہے۔ مجھے ایم ای ایس رپورٹ بنانے میں مزہ نہیں آ رہا تھا۔ ایک کثیر القومی کمپنی جس طرح کام کرتی تھی، اس طرح شانتا بايوٹیكنكس میں بھی کام ہونے لگا تھا۔ میں نے کمپنی چھوڑ دی۔ " چونکہ کمپنی چھوڑتے وقت خلیل احمد نے معاہدہ کیا تھا وہ کمپنی کے کام کاج سے منسلک کسی بھی شعبے میں کام نہیں کر سکتے تھے۔ یہ قرار پانچ سال کا تھا۔ اور اس معاہدہ کے لئے بھی سنوف نے خلیل احمد کو موٹی رقم دی تھی۔

شانتا بايوٹیكنكس چھوڑنے کے بعد خلیل احمد نے بجلی کی پیداوار کے میدان میں اپنے قدم بڑھائے۔ انہوں نے اپنے دوستوں كےساتھ توانائی وینچرز میں سرمایہ کاری کی۔ آگے چل کر انہوں نے "حیدرآباد هاوس" کو خریدا اور فوڈ بزنس میں اپنے پاؤں جمانے شروع کئے۔ خلیل احمد نے فوڈ كرافٹرس اینڈ سروسز کمپنی بنائی اور اسی کے ذریعہ پکوانوں کا کاروبار کر رہے ہیں۔ انہوں نے مشہور باورچی پردیپ کھوسلا کو کمپنی کا سی ای او بنایا ہے۔ پردیپ کھوسلا نے کئی سالوں تک تاج گروپ کو اپنی خدمات دی ہیں۔

خلیل احمد نے بطور کاروباری، سرمایہ کار اور کاروباری خوب نام کمایا ہے، لیکن ان دنوں وہ بطور سوشل ورکرانتہائی مقبول ہیں۔ وہ اپنا زیادہ تر وقت معاشرے کی خدمت میں لگا رہے ہیں۔ مختلف سماجی اور غیر سرکاری اداروں سے وہ جڑے ہوئے ہیں۔ تعلیم، طبی، صحت جیسے کئی شعبوں میں وہ اپنی خدمات دے رہے ہیں۔ ایک سوال کے جواب میں خلیل احمد نے کہا، "معاشرے سے مجھے بہت کچھ ملا۔ اب میری ذمہ داری معاشرے کو دینے کی ہے، میں مانتا ہوں کہ سب کو ترقی کرنا چاہئے۔ ملک میں بہت سے لوگ غریب اور بے روزگار ہیں۔ تمام لوگوں کو تعلیم کا موقع بھی ملنا چاہئے۔ اسی وجہ سے میں غریب بچوں کی تعلیم کا انتظام کرنا چاہتا ہوں۔ مجھ سے جو کچھ ہوگا میں کروں گا۔ "

یہ پوچھے جانے پر کہ انہیں ان سب کاموں کے لئے تحریک کہاں سے ملتی ہے، خلیل احمد نے اپنی زندگی کے سب سے مشکل بھرے دنوں کے بارے میں بتایا، "میرا بیٹا هيموفيليا کا شکار تھا۔ یہ جینیاتی بیماری مانی جاتی ہے۔ مجھے سمجھ میں نہیں آ رہا تھا کہ جب ماں باپ دونوں کو کوئی پریشانی نہیں تب بیٹے کو یہ کیسے ہو گیا۔ میں بہت پریشان رہنے لگا تھا۔ ایک دن میرے بیٹے کو برین ہیمریج ہو گیا۔ اسے ہسپتال میں داخل کرایا گیا۔ اس کی حالت دیکھ کر ڈر لگنے لگا تھا کہ وہ ہمارا ساتھ چھوڑ دے گا، لیکن خدا کی مہربانی تھی کہ وہ بچ گیا۔ آج وہ ڈاکٹری کی تعلیم حاصل کر رہا ہے۔ میں اسے جب بھی دیکھتا ہوں، مجھے ہمت ملتی ہے۔ اسی کو دیکھ کر خوشی بھی ملتی اور کام کرنے کی طاقت بھی۔ "

Dr Arvind Yadav is Managing Editor (Indian Languages) in YourStory. He is a prolific writer and television editor. He is an avid traveler and also a crusader for freedom of press. In last 19 years he has travelled across India and covered important political and social activities. From 1999 to 2014 he has covered all assembly and Parliamentary elections in South India. Apart from double Masters Degree he did his doctorate in Modern Hindi criticism. He is also armed with PG Diploma in Media Laws and Psychological Counseling . Dr Yadav has work experience from AajTak/Headlines Today, IBN 7 to TV9 news network. He was instrumental in establishing India’s first end to end HD news channel – Sakshi TV.

Related Stories