یہ چار كمپنياں یقینی طور پر دنیا کو تبدیل کرنے کے لئے آئی تھیں

0


ہم ایک دلچسپ وقت میں جی رہے ہیں۔ تاریخ میں ابھی تک کسی بھی وقت میں زندگی کا معیار اتنا بہتر اور اطلاعات کی منتقلی اتنی آسان نہیں تھی۔ بنیادی طور پر، ایسا لگتا ہے کہ ہم مستقبل کی دنیا کے اور قریب پہنچ رہے ہیں جیسا کہ گزشتہ سالوں میں ٹی وی پروگراموں جیسے اسٹارٹریك اور دی جیٹسنس میں دکھایا جاتا تھا۔ لیکن یہ پروگرام اس دنیا کی تعمیر میں کارپوریٹس کے کردار کا اندازہ کرنے میں ناکام رہے۔ ہم مسلسل ان اعلی درجے کے انوویٹو اسٹارٹپس کے بارے میں سنتے رہتے ہیں جو ہر دوسرے دن پوری دنیا کی ترقی میں اپنا اہم رول نبھا رہو ہیں۔ بلا شبہ، ان اسٹارٹپس نے، کارپوریٹس کے ساتھ مل کر مستقبل تابناک بنانے کی کوشش کی ہے۔ یہاں ان چار كمپنيوں کے بارے میں مختصر تعارف دیا جا رہا ہے، جو اپنے انقلابی اقدامات سے دنیا کو بدلنے کا کام کر رہی ہیں۔

آنر

آنر کا قیام 2014 میں سیتھ اسٹینبرگ اور سینڈی جین نے دنیا کے بزرگوں ان کے بچوں اور ان کی دیکھ بھال کرنے والو کے لئے ایک بہترپلیٹفارم مہیا کرانے کے لئے کیا تھا۔ امریکہ میں بذرگوں کی مناسب دیکھ بھال نہ ہونے کی وجہ سے انہیں اس کمپنی کی تعمیر کا خیال آیا۔ سی این این کو دیے اپنے ایک انٹرویو میں سیتھ اسٹینبرگ نے کہا، "عام طور پر سینئر لوگوں کے لئے بازار بکواس چیزوں سے بھرا ہوا ہے"

آنر نے ٹیکنالوجی کا استعمال کیا اور بذرگوں کے چہرے سے کھالی پن کو دور کیا۔ انہوں نے بزرگوں کی دیکھ بھال کرنے والوں کے لئے تحقیق اور اسائنمینٹ کی کارروائی اختیار کی۔ ان میں زبان، صحت سے متعلق ضرورتیں اور بہت کچھ ہو سکتا تھا۔ دیکھ ریکھ کرنے والوں کو بزرگوں کے پاس جانا پڑتا تھا اور ان کی سرگرمیوں کا علم رکھنا پڑتا تھا، جس سے ان کے خاندان والوں کو یہ کسٹم بِلٹ، آسانی سے استعمال کئے جانے والے، touchscreen آلات بھی دیے جس سے وہ دیکھ بھال کرنے والوں کو اپنی ضررتو سے آگاہ کراتے رہے، جس سے دیکھ ریکھ کرنے والے ان کا انتظام کرنے کے لئے اچھی طرح سے تیار رہے۔ ان چیزوں کے استعمال سے بزرگ اپنے استعمال میں آنے والی اشیاء کے بارے معلومات رکھ سکتے ہیں اور سروس کے معیار کا بھی اندازہ کر سکتے ہیں۔ رشتہ دار ان معلومات کو استعمال کر سکتے ہیں، جس سے وہ اپنی حالت کی جانچ پڑتال کرنے کے قابل ہو سکتے ہیں۔

آلٹ اسكول

آلٹ اسكول اساتذہ، ٹیکنولاجسٹ اور کاروباریوں کی ایک ٹیم ہے جو مختلف شعبوں سے آکر اسکولوں کا ایک ایسے نیٹ ورک بنانا چاہتے ہیں جو اس طرح کے طالب علم تیار کرے جو دنیا کو بدل کر اور بھی بہتر بنا سکے۔ اس کا قیام کمیونٹیز کو آپس میں مل کر تعلیم کو بہتر بنانے کے اصول پر ہوا۔

2013 میں قائم اس کمپنی نے "چائلڈ سینٹرڈ لرننگ" ماڈل کا استعمال کیا، جس میں اساتذہ نے طلباء کی قدرتی دلچسپی کی کو بڑھاوا دینے کا کام کیا۔ اس کےتحت بچے مختلف عمر کے بچوں کے ساتھ ان کی کلاس میں شامل ہوئے، جہاں وہ پروجیکٹ سیکھنے اور اپنے ذاتی ماڈیول 'پلے لسٹ' کے درمیان ادلا بدلی کر سکتے تھے۔ اساتذہ اور طالب علموں کے درمیان تناسب 1: 7 تھا، لیکن نیٹ ورک کے بڑھنے کے ساتھ یہ 1: 10 کے قریب ہو جائے گا۔

2015 میں، آلٹ اسكول کے بانی فنڈ میں 100 ملین ڈالر کا اضافہ ہوا اور فیس بک کے بانی مارک ذكربرگ نے بہت بڑے پیمانے پر اسکولوں کے نیٹ ورک کے زریعہ تعلیم کو خانگیانے کی جانب قدم بڑھایا۔

ٹیسلا

پیپال کے شریک بانی، ایلن مسک، ٹیسلا کےساتھ نہ صرف ٹرانسپورٹ کے شعبے (اور پاور گرڈ) میں تبدیلی لانے کا کام کیا، بلکہ سپیس ایكس کے ساتھ خلائی سفر اور سولر سٹی ساتھ توانائی تعمیرکا کام بھی کیا۔ ٹیسلا کے روڈسٹر مکمل طور پر پہلی الیکٹرک اسپورٹس کار تھی۔ اس کے بعد ٹیسلا نے ماڈل ایس، ماڈل X اور ماڈل 3 پیش کئے۔ 2008 میں اپنی پہلی کار Tesla کے روڈسٹر سے لے کر 31 مارچ 2106 تک ٹیسلا موٹرز نے پوری دنیا میں تقریبا 125000 الیکٹرک کاریں فروخت کیں۔

مسک نے کے مطابق سولر سٹی، ٹسلا موٹرز اور سپیس ایكس کا ہدف دنیا اور انسانیت کو تبدیل کرنا ہے۔ ان کا مقصد "میکنگ لائف ملٹی پلینٹری" کے تحت مریخ پر انسانوں کی کالونی بنا کر یقینی توانائی کی پیداوار اور کھپت کرنا سے گلوبل وارمنگ اور 'انسانی نسلوں کے ختم ہونے کے خطرے' کو کم کرنا تھا۔

گوگل

گوگل دنیا کی سب سے بڑی کمپنیوں میں سے ایک ہے۔ بنیادی طور پر اس کے پاس اتنی طاقت اور صلاحیت ہے کہ آسٹریلیا کے سابق وزیر اعظم، پال کیٹنگ نے اس کا موازنہ "نان نیشن اسٹیٹ" سے کیا ہے۔

گوگل کے اس دور نے دنیا کو ایک بڑے پیمانے پر ڈیٹا کی تلاش کرنے کے قابل بنایا۔ بنیادی طور پر، اس میں دنیا کے اہم مسائل جیسے عالمی وارمگ، تفصیلی اعداد و شمار بھی موجود ہیں۔ گوگل ایكس پہلے ہی بغیر ڈرائیور کے چلنے والی کار بنائی۔ ٹیکنالوجی کو ایک الگ مقام عطا کیا۔ گوگل کی منصوبہ انٹرپرائز گریڈ کمپیوٹنگ پر غلبہ حاصل ہونا ہے اور کلاؤڈ سروس جیسے کہ ایمیزون ویب سروسز اور مائیکروسافٹ اذيور کو ٹکر دینا ہے۔ پراجیکٹ فائی نیکسم 6 کا استعمال کر رہے امیركیوں کے پاس موجود ہے، جس میں اتنی صلاحیت ہے کہ یہ ہمارے فون کال کے طریقوں کو تبدیل کر کے رکھ دے۔ گوگل کے پاس حادثوں کے وقت کام آنے والا ایک محکمہ بھی موجود ہے جس کے پاس ایک ایسا آلہ ہے جو مسئلہ کے وقت دوستوں، پیاروں اور کھوئے ہوئے لوگوں سے رابطہ کراتا ہے اور تباہی کے وقت ان کی مدد کرتا ہے۔

تحریر: شویتا داش

Related Stories