"رئیس" تو بس ایک بہانہ ہے، ایک خاص کمیونٹی فرقہ  پرست رہنماؤں کا نشانہ ہے: اشوتوش

سابق ایڈیٹر / صحافی اشوتوش کی رائے ہے کہ -تخلیق مذمت کا ذریعہ نہیں بننی چاہئے

0

آخر اسے کیا کہا جائے؟ ایک فرقہ وارانہ لیڈر کا غیر شائستہ تبصرہ یا ناپسندیدہ شخص کا مذاق یا ایک متروک نظریہ کے شخص کا گھمنڈ؟ دو فلموں کا تقابل کرنا کوئی نئی بات نہیں ہے۔ بلکہ یہ تو مبصرین کا تخلیقی کام ہے۔ جو فلموں کی دنیا کو سمجھنے میں مدد کرتے ہوئے سامعین کے لئے نئے دروازے کھولتا ہے۔ یہ ایک ایسا عمل ہے جس میں نئے تخلیقی شعبےے کو بناتا ہے۔ یہ نئی توانائی کو وجود میں لاتا ہے، جو شخص شعور کی ایک نئی سطح پر لے جاتا ہے۔ بد قسمتی سے ہم ایک ایسے دور میں رہ رہے ہیں جہاں تخلیق مذمت کا ذریعہ بن گئی ہے۔ ہم ڈونالڈ ٹرمپ کے وقت اور "پوسٹ پھیكٹ" کی دنیا میں رہ رہے ہیں۔ ہم نئے وقت میں جی رہے ہیں۔ ایسے میں مجھے کیلاش وجےورگی کے نازیبا اظہار پر ذرا بھی حیرانی نہیں ہوئی۔ وہ لوگوں کو شاہ رخ خان پر فلمائی گئی فلم 'رئیس' سے دور رہنے کے لئے اکساتے ہیں، تو وہیں وہ ریتک روشن کی فلم 'قابل' کی تعریف بھی کرتے ہیں۔

بیرونی طور پر دیکھنے پر اس سب میں کوئی نقصان نظر نہیں آتی۔ یہ کسی خاص قسم کی فلم کو لے کر ان کی پسند ناپسند کے اظہار ہے، لیکن کیلاش وجےورگی کا ٹویٹ اتنا آسان نہیں ہے۔ ایک بار پھر پڑھیے کہ انہوں نے کیا لکھا ہے- جو "رئیس" ملک کا نہیں، وہ کسی کام کا نہیں۔ اور ایک "قابل" محب وطن کا ساتھ تو ہم سب کو دینا ہی چاہئے۔

کیلاش وجےورگی کوئی عام شخص نہیں ہیں۔ وہ بی جے پی کے قومی جنرل سکریٹری ہیں۔ انہیں متنازعہ شہ سرخیوں بنے رہنا پسند ہے اور یہ وہ بڑے فخر کے ساتھ کرتے ہیں۔ انہیں کئی بار اپنی ہی پارٹی کی جانب سے اس طرح کے بیانات کو لے کر لتاڑ پڑ چکی ہیں، پھر بھی وہ ہر بار کسی نئے متنازعہ بیان کے ساتھ واپس آ جاتے ہیں، لیکن ان کا موضوع ہمیشہ یکساں ہوتا ہے۔ ان کے یہ بیان  بے شرمی، فرقہ واریت، نفرت سے بھرپورہوتے ہیں اور ایک خاص کمیونٹی کو نشانہ بناتے ہیں۔

'رئیس' ایک biopic ہے۔ یہ فلم ایک ڈان کے بارے میں ہے، جس کا کردار شاہ رخ خان نے ادا کیا ہے۔ قابل ایک نابینا جوڑے کی محبت اور انتقام کی کہانی ہے، جس میں رتیک لیڈ رول میں ہیں۔ ان دونوں ہی فلموں کی ریلیز کی تاریخ 25 جنوری تھی۔ یہ ایک اتفاق کی بات بھی ہو سکتی ہے، لیکن اسے یا پھر ایک دوسرے کی فلم کو لے کر شاہ رخ یا پھر رتیک کی جانب سے ایسا کوئی بیان نہیں دیا گیا جو تنازعہ کھڑا کر سکتا تھا اور جس کو سیلز  حکمت عملی مان لیا جاتا۔

اس کے برعکس دونوں ہی ایکٹر ایک دوسرے کا احترام کرتے ہیں اور عوامی طور پر بھی دوستانہ رویہ رکھتے ہیں۔ ایسے میں اس بات کا سوال ہی نہیں اٹھتا کہ ٹویٹر کو دونوں فلموں کے بارے میں سرخیاں بنانے اور 'رئیس' کو نقصان پہنچانے کے لئے استعمال کیا گیا ہو۔ مجھے نہیں لگتا کہ رتیک روشن اس طرح کے شخص ہیں جو اس طرح کی حرکت کریں۔ یہ کیلاش وجےورگی کی اپنی خود کی پیداوار ہے۔

وہ ایک ایسے سیاسی ادارے سے آتے ہیں جو اقلیتی کمیونٹی کے خلاف تعصب رکھتا ہے۔ ارایس ایس اور بی جے پی کھلے طور پر ایک ایسے ہندو قوم کی حمایت کرتے ہیں، جہاں اقلیتوں کے پاس دوسرے درجے کی شہریت ہوگی۔ بنیادی طور پر ان کے پرانے لیڈر اور نظریات اس سطح تک پہنچ چکےہے جو شہریت کا حق ہی نہیں دئے جانے کی طرف اشارہ کرتے ہیں۔ نظریاتی سوچ کے مطابق آر ایس ایس اور بی جے پی بھارت کی تقسیم کے لئے مسلمانوں کو ذمہ دار مانتی ہے۔ ان کا خیال ہے کہ قرون وسطی کی تاریخ میں جو پریشانیاں ہوئی تھی اس کے لئے بھی مسلمان زمہ دار تھے۔ ان کے حساب سے سیاست تہذیبوں کا تصادم ہے۔

بھارتی تناظر میں، سنگھ کانظریہ  ہے کہ بھارتی تہذیب میں کمی تب آئی جب مسلمانوں نے صدی کے آغاز میں جنوبی ایشیا میں داخل ہوئے۔ آر ایس ایس کے حساب سے ہندوستانی تاریخ لازمی طور سے "ہندو تاریخ" ہے، مسلمان اور يسا غیر ملکی ہے۔ آر ایس ایس کی مفروضہ مثالی بہادر ساورکر ہیں، جن کا ماننا تھا کہ اصلی بھارتی وہی لوگ ہیں جو بھارت کو ہی اپنے وطن اور مقدس زمین، دونوں سمجھتے ہیں۔ ساورکر کا خیال تھا کہ مسلمان اور عیسائیوں کے مذہبی مقام مختلف زمین پر ہیں اسی لئے ان کی ہمارے ملک کے تئیں خلوص پر سوالیہ نشان لگا رہے گا۔ انہی بنیادی وجوہات کی وجہ سے آر ایس ایس اقلیتوں کے تئیں اتنی نفرت رکھتی ہے۔

جنوبی ایشیا میں بھارتی فلم انڈسٹری کا دور اب تک کا سب سے زیادہ ادار وقت رہا ہے۔ اس نے کبھی مذہب اور ذات کے نام پر تعصب نہیں کیا۔ اس نے صرف پرتیبھا کی حوصلہ افزائی کی اور کامیاب بنایا ہے۔ کامیابی اور ناکامی کے معیار طے کرنے کے لئے کبھی بھی مذہب اور ذات کا سہارا نہیں لیا گیا۔ اگر راج کپور اور دیو آند 50 کے دہائی کے سپر اسٹار رہے ہیں تو دلیپ کمار عرف یوسف خان بھی اپنے دور کے سب سے بڑےاداکار ہیں۔ اگر 70 اور 80 کی دہائی میں امیتابھ بچن نے سٹار ڈم کی نئی تعریف دی ہے تو وہ نصیر الدین شاہ تھے جو "نئی مووی" کی نئی روشنی بن کر ابھرے تھے اور دونوں کو ہی بھارتی ناظرین نے قبول کیا ہے۔

ہندوستانی سنیما کی سیکولرازم میں ۹۰ کی دہائی نے ایک نیا باب لکھا جب فرقہ وارانہ سیاست عروج پر تھی، رام مندر تحریک پر اور بی جے پی کا رویہ  بہت جارحانہ تھا، لیکن دوسری جانب خان برادران نے بالی ووڈ پر اس طرح اپنا تسلط قائم کر لیا تھا جیسا پہلے کبھی نہیں ہوا تھا۔ عامر خان، سلمان خان، شاہ رخ خان، سیف علی خان اور اب عرفان خان، نواذالدين صدیقی بادشاہوں کی طرح حکومت کر رہے ہیں۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ رتیک، اکشے کمار، امیتابھ، اجے دیوگن بھی انتہائی کامیاب رہے ہیں لیکن ان کا خان برادران سے کوئی مقابلہ نہیں ہے۔ 50 کی عمر میں بھی عامر، سلمان اور شاہ رخ کو ان کے شائقین سے بے حد پیار مل رہا ہے۔ اور ان کے ساتھ کام کرنا کسی بھی پروڈیسر، ڈائریکٹر، اداکار اور اداکارہ کا خواب رہا ہے۔

ایک وقت تھا جب میڈیا کے ایک حصے اور رايٹسٹ گروپوں نے ریتک روشن کو ان کا قریبی مسابقتی قرار دیا تھا۔ کچھ اہم میگذنس میں کور اسٹوريزبھی شائع کی گئی، لیکن ان کا کوئی اثر نہیں ہوا۔ ان تمام خان برادران نے ہندو عورتوں سے شادی کی تھی، اسی لئے لو جہاد کی گاڑی کو بھی ان سےجوڑا کر دیا گیا تھا۔ ہر موقع کا استعمال انہیں غدار یا کم محب وطن ثابت کرنے کے لئے کیا گیا۔ شاہ رخ کی فلم 'مائی نیم از خان' کو ہدف بنایا گیا اور یہ عامر کا یہ  بیان، کہ 'ان کی بیوی بھارت سے باہر جانا چاہتی ہے' کو بے وجہ طول دے کر فرقہ وارانہ بنا دیا گیا۔ ملک کے تئیں ان کی وفاداری پر شک کرنے کا کوئی موقع گیا نہیں چھوڑا گیا۔

"رئیس" تو بس ایک بہانا ہے، یہ شاہ رخ کی حب الوطنی پر سوال اٹھانے کا ایک ذریعہ ہے اوران کی پوری کمیونٹی کی حب الوطنی کو بھی نشانہ بنایا گیا ہے۔ یہ بھی دکھایا گیا ہے کہ اکثریت کبھی غدار نہیں ہوتے۔ ایسا صرف دیگر قومیں ہی کرتی ہیں۔ یہ ایک انتہائی خطرناک خیال ہے۔ لیکن گزشتہ دو ڈھائی سال سے، اس طرح کی مثالیں دے کر ایک خاص فرقہ کو حاشیے پر رکھا جا رہا ہے۔ یہ ملک بنانے کے عمل میں کبھی بھی تعاون نہیں کرے گا۔ یہ صرف بربادی کو دعوت دے گا۔

جدید، سیکولرزم اور شہریانے  وجہ سے اقلیتوں کے تئیں بھارتی نظریے میں ہوئے تبدیلیوں کے باوجود بھی وہ لوگ وقت کے اس جال میں پھنسے ہوئے ہیں، اور سوچ کے اس دائرے سے باہر آنا ہی نہیں چاہتے۔ اسی سوچ کا اثر ہے کہ  سنگھ اور بی جے پی لیڈروں کا آج بھی فرقہ واریت کو لے کر غصہ پھٹتا ہے۔ کیلاش وجيورگيي نے جو کیا اور کہا ہے وہ کوئی نیا کام نہیں ہے، وہی پرانا گھسا فلاپ کوشش ہے۔ وجيورگی نے کسی فلم کو ٹارگٹ نہیں کیا، بلکہ ان کا ہدف شاہ رخ خان ہے۔ شاہ رخ پر یہ سب  ان کی مذہبی شناخت کی وجہ سے ہو رہا ہے، کیونکہ انہوں نے اس گینگسٹر کا کردار نبھایا ہے جو شاہ رخ کے ہی مذہب کا ہے۔ شاہ رخ کو ٹارگٹ کرنا کیلاش اور ان کے حامیوں کے لئے وردان ثابت ہو گیا ہے۔

رتیک روشن کو ایک اداکار کے طور پر نہیں بلکہ ایسے شخص کے طور پر دیکھا جا رہا ہے جو مختلف مذہب کا ہے اور ان کی سوچ کے مطابق جس کا تصادم تاریخی طور پر شاہ رخ کی شناخت سے ہے۔ اس قصے کی ناہمواری نے ہماری فلم انڈسٹری کے دو عظیم ااداکاروں- شاہ رخ اور رتیک کی صلاحیت  کو مسترد کر ان کی اصل شناخت تک محدود کر دیا ہے، جو بدقسمتی بھی ہے اور تاریخی طور پر غلط بھی ہے۔ کیلاش وجےورگی کی نظر میں، 'رئیس' اور 'قابل' دو فلمیں نہیں ہیں بلکہ دو تہذیبوں کا اپنا تسلط قائم کرنے کی جدوجہد ہے۔