دو نوجوانوں کی 'کوشش' ... پورے سماج میں تبدلیلی لانے کا عہد

0

'شمع جلانے کی کوشش ہے اس بستی میں میری، ستاروں کے شہر میں جہاں اندھیرا آج بھی ہے۔' شہروں کی بڑی بڑی اور اونچی اونچی بلند عمارتیں۔ ہموار چوڑی سڑکیں اور ان پر سرپٹ بھاگتی مہنگی چمچماتی ہوئی گاڑیاں۔ گلی محلے سے لے کر چوکوں تک ہر جگہ انسانوں کی چہل پہل۔ کشمکش بھری تیز رفتار زندگی اور اس میں ایک دوسرے سے آگے نکل جانے کا مقابلہ۔ کسی بھی بڑے شہروں کی کہانی بیان کرنے کے لئے کافی ہے۔ یہ ایک غیر اعلانیہ سا پیمانہ ہے، جس سے انسان کسی شہر کی خوشحالی کا میعار ہے۔ جہاں سب کچھ اچھا-اچھا لگتا ہے۔ لیکن شہروں کی اس چکاچوند اور بھاگ دوڑ میں اکثر شہری آبادی کا ایک بڑا حصہ پیچھے چھوٹ جاتا ہے۔ جدید شہری معاشرے میں بھی ان کی زندگی كشٹمش اور محرومیوں سے بھری رہتی ہے۔ ترقی کی راہ میں وہ آج بھی اپنے ہی شہر کے لوگوں سے سالوں پیچھے ہیں۔ وہ ناخواندہ ہیں، غریب ہیں اور زندگی کے بنیادی سہولیات سے محروم ہے۔ سرکاری غفلت، بے حسی اور لال فیتاشاہی کا شکار ہیں۔ ان کے دکھ درد اور مسائل کو سمجھنے والا شاید ہی کوئی ہوتا ہے۔ یہ حالات تقریبا ہر شہر کے ہیں۔ لیکن بھوپال میں ایسے لوگوں کی زندگی میں تبدیلی لانے کے لئے آگے آ گے آئے ہیں، دو نوجوان نینا یادو اور پون دوبے۔ ان دو نوجوانوں نے اپنے ہی شہر میں پسماندہ رہنے والوں کا درد محسوس کیا ہے ۔ یہ ان کی زندگی خوشحال بنانے کی کوششوں میں مصروف ہیں۔ شمع روشن کر ان کی زندگی سے اندھیرا دور کر رہے ہیں، ۔ ان کوششوں کو جہاں سماج نے سراہا ہے، وہیں علاقے کے عوامی نمائندے اور انتظامیہ بھی کے ان کاموں میں تعاون کر رہا ہے۔

بنیادی طور پر اندور کی رہنے والی 25 سالہ نینا یادو پیشے سے صحافی ہیں جبکہ اترپردیش کے مؤ ضلع کے رہنے والے 33 سالہ پون دوبے ایک آئی ٹی پروفیشنل ہیں۔ دونوں گزشتہ چار پانچ سالوں سے کام کے سلسلے میں بھوپال میں ہیں۔ جھیلوں کے اس شہر کی خوبصورتی ہر کسی کو اپنی جانب کھینچتی ہے۔ جو یہاں آتا ہے، یہیں کا ہو کر رہ جاتا ہے۔ نینا اور پون دوبے کا بھی بھوپال پسندیدہ شہر ہے یا یوں کہیں کہ بھوپال سے انہیں انتہائی محبت ہے۔ وہ دونوں اوروں سے تھوڑا سا مختلف سوچتے اورکام بھی ایسے ہی کرتے ہیں۔ وہ اس شہر کے لئے کچھ کرنا چاہتے تھے۔ اسی مقصد سے انہوں نے دو سال پہلے بھوپال کے پنچ شیل نگر میں 'کوشش' نام کی ایک تنظیم کی بنیاد رکھی تھی۔ ان کی کوشش ہے معاشرے کو تبدیل کرنے کی۔ کچھ منفرد کام کرنے کی اور کرانے کی۔ دوسروں کے لئے جینے کی اور جینے کا طریقہ سکھانے کی۔ پون اور نینا کی ایک چھوٹی سی کوشش آج بہت بڑی بن گئی ہے۔ ان کے ساتھ سینکڑوں لوگ جڑ گئے ہیں۔ طالبات سے لے کر کام کرنے والی خواتین، مرد اور علاقے کے لوگ، جو سماج تبدیل کرنے کے ارادے سے کام کرنے کی کوشش کررہے ہیں۔

شراب بندی ہے پہلا مقصد

یوں تو پردیش میں شراب کی دکان اور ٹھکے کھولنے کے لئے حکومت لائسنس جاری کرتی ہے۔ لیکن اس کے لئے کچھ شرائط اور قانون بھی لاگو ہیں، جن پر عمل کرنا ضروری ہے۔ اس کے باوجود سیاسی تحفظ اور بلند رسوخ کی وجہ سے ان قوانین کی خلاف ورزی کر شراب کی دکانیں کھولی جاتی ہے۔ 'کوشش' ایسی تمام دکانوں کے خلاف آواز بلند کرتی ہے جو غیر قانونی ہوں یا قوانین کی خلاف ورزی کر کھولی گئی ہوں۔ رهائشی علاقے میں کھولے گئے شراب کے معاہدوں اور دکانوں کو بند کرانے کے لیے یہ دھرنا دیکر سرکاری حکام پر دباؤ ڈالتی ہے۔ ادارے کی کوشش کی وجہ سے پنچ شیل نگر میں سالوں سے چل رہے شراب کے غیر قانونی ٹھکوں کو حکومت نے بند کروا دیا۔ اس ٹھیکے کی وجہ سے علاقے کے دس سے بارہ سال تک کے بچے شراب پینے کی لت کا شکار ہو گئے تھے۔ مزدور طبقے کے مرد کچی شراب پی کر اکثر اپنے گھر میں خواتین سے مار پیٹ کیا کرتے تھے۔ ان کے گھروں میں روز جھگڑا ہوتا تھا۔ ان کے گھروں کے بچے اسکول نہیں جاتے تھے۔ یہاں عصمت دری کے بھی کئی واقعات ہو چکے تھے۔ ادارے کی کوششوں کی وجہ سے اس علاقے میں تمام غیر قانونی شراب کے ٹھیکے بند ہو گئے ہیں۔ اس بات سے خوش علاقے کی عوام نے نینا یادو اور پون دوبے کے اعزاز میں حال ہی میں ایک پروگرام منعقد کیا۔ پیشے سے صحافی نینا نے ریاست میں شراب بندی کے لئے بھی مہم چلا رکھی ہے۔ انہوں نے حکومت کی شراب پالیسیوں کی مخالفت میں بیداری مہم چلائی ہے۔ وہ حکومت سے اس بات کا مطالبہ کر رہی ہیں کہ ریاست میں شراب کی کھلی فروخت کو محدود کیا جائے۔ نینا کہتی ہیں

"شراب سے ایک گھر، خاندان اور معاشرے سے لے کر پورے ملک کو نقصان ہو رہا ہے۔ اس کا سب سے زیادہ خمیازہ خواتین اور بچوں کو بھگتنا پڑتا ہے۔ حکومت آمدنی کے لالچ میں شراب پر پابندی نہیں لگا پاتی ہے جبکہ حاصل آمدنی سے کئی گنا زیادہ رقوم شراب سے پیدا ہونے والے مسائل پر حکومت سالانہ خرچ کرتی ہے۔ دیر سویر تمام ریاستی حکومتوں کو بہار کی طرح شراب بندی کی سمت میں سوچنا ہوگا۔ فی الحال مکمل شرابدي تک ہم اپنی لڑائی جاری رکھیں گے۔ "

گھریلو تشدد ختم کرنے اور خواتین کی تعلیم پر خاص زور

پون دوبے کہتے ہیں کہ یہاں کی جھگی جھوپڑيو میں رہنے والی خواتین سب سے زیادہ گھریلو تشدد کی شکار ہوتی ہیں۔ وہ اکثر اس پر خاموشی اختیار کر لیتی ہے۔ انہیں پتہ ہی نہیں ہے کہ حکومت نے گھریلو تشدد سے بچنے اور ان کا مسئلہ کے حل کے لئے ادارے قائم کر رکھے ہیں۔ پون دوبے کی ٹیم ان خواتین میں گھریلو تشدد کے بارے میں بیداری لانے کا کام کرتی ہے۔ ان مسائل کے حل کے لئے فیملی کورٹ، لوک عدالت، خاتون پولیس سیل اور خواتین کمیشن کے دروازے تک پہنچانے کا کام کرتی ہے۔ ٹیم نابالغ لڑکیوں کے درمیان جنسی استحصال کو لے کر بیداری مہم چلاتی ہے۔ اسکولوں اور محلوں میں ورکشاپ لگا کر بچیوں کو پیار، دلار کی آڑ میں استحصال کرنے والوں کی ہرکتوں کے بارے میں بتایا جاتا ہے۔ جو بچے اسکول سے باہر ہیں ان کی شناخت کر انہیں دوبارہ اسکول بھیجنے کا کام کیا جاتا ہے۔ خاص طور پر لڑکیوں کو اسکول بھیجنے کے لئے ان کے والدین سے اپیل اور ان کی مشاورت کی جاتی ہے۔ پون دوبے کہتے ہیں،

"جب تک معاشرے کی ایک ایک لڑکی تعلیم یافتہ نہیں ہو جاتی ہم اپنا مشن جاری رکھیں گے۔ حکومت نے لڑکیوں کو پڑھانے کے لئے تمام طرح کی اسکیمیں چلا رکھی ہیں، لیکن بیداری نہ ہونے کی وجہ سے ں ساماج کا محروم گروپ اس کا فائدہ نہیں اٹھا پایا ہمیں معاشرے کے آخری شخص تک تعلیم کو پہنچانا ہے۔ "

نینا یادو کہتی ہے کہ شہر کی گندی بستیوں میں رہنے والی خواتین اکثر صحت کے مسائل سےپریشان رہتی ہے۔ بیمار پڑنے پر وہ سرکاری ہسپتالوں اور ڈسپنسری میں جانے کی بجائے اکثر جھولاچھاپ ڈاکٹروں کے پاس پہنچتی ہیں جو ان کی بیماری ٹھیک کرنے کے بجائے اسے بڑھاتے زیادہ ہیں۔ ہم ان خواتین کو آگن باڑی مراکز، آشا کارکنوں اور سرکاری صحت کی خدمات کا بہتر استعمال کرنے کے لئے بیدارکر ان کی حوصلہ افزائی کرتے ہیں۔حفظان صحت کے بنیادی قوانین کی اس معلومات فراہم کرتے ہیں۔ ایڈز اور دیگر بیماریوں کے تئیں انہیں بیدار کیا جاتا ہے۔ وقت وقت پر ہیلتھ کیمپ منعقد کر ان کی صحت کی جانچ کی جاتی ہے۔ اس کے علاوہ حکومت کی طرف سے ان کے مفاد میں چلائی جا رہی تمام طرح کی اسکیموں کی معلومات اور اس کا فائدہ دلانے میں ان کی مدد کی جاتی ہے۔

ذاتی اخراجات میں کمی

نینا یادو کہتی ہیں، "سماجی کاموں پر خرچ کرنے کے لئے ہمیں کہیں سے کوئی مالی مدد نہیں ملتی ہے۔ ابھی تک ارکان ہی اپنی آمدنی میں سے کچھ خرچ نکالتے ہیں۔ ہم میں سے زیادہ تر ارکان ماكھنلال یونیورسٹی کے طالب علم ہیں۔ طالب علم اپنے روزانہ کی چائے، كولڈڈرنك، فاسٹفوڈ اور گھومنے -پھرنے پر خرچ ہونے والے پیسے اس ادارے کو سب سکریپشن دیتے ہیں۔ گھر کی ردی کا پیسہ ادارے کو ڈونیٹ کرتے ہیں۔ کچھ نوکری پیشہ رکن خود کی جیب سے بھی پیسے خرچ کرنے کے لئے آگے آتے ہیں۔ "

خبروں سے ملی کچھ کرنے کی ترغیب

نینا اور پون دونوں ایک ہی نیوز چینل میں نوکری کرتے ہیں۔ چینل میں ویسے لوگوں پر ایک خاص پروگرام چلایا جاتا ہے، جس نے سماج اور ملک کی تعمیر میں کوئی کردار ادا کیا ہو، یا لیک سے ہٹ کر کچھ مختلف کام کیا ہو۔ نینا کہتی ہیں، "ایسی ہی خبروں سے خیال آیا کہ کیوں نہ میں بھی کچھ نیا کروں، اور پھر ہم نے شروع کر دی کچھ مختلف کرنے کی چھوٹی سی کوشش۔ ابتدائی دور میں لگا کہ کام کرتے ہوئے دوسروں کے لئے ایسے کاموں کے لیے وقت نکالنا مشکل ہوگا، لیکن ایسا بالکل نہیں ہے۔ اچھےکام کا آغاز کبھی بھی نتائج کی فکر کئے بغیر کرنا چاہئے۔ میں نے ایسا ہی کیا۔ آج میرے کام میں لوگ رضاکارانہ طور پر مدد کرنے آتے ہیں۔ "