T-HUB کی پہلی سالگرہ، تلنگانہ حکومت بنائے گی 100 کروڑ کا فنڈ

حیدرآباد میں قائم ملک کے پہلے ٹی ہب نے اپنی پہلی سالگرہ کے موقع پر اعلان کیا ہے کہ دنیا کے سب سے ٹاپ 10 انكيوبیٹر سینٹروں میں اپنا مقام بنانے کے لئے پوری کوشش کرے گا۔

0

تلنگانہ کے آئی ٹی، شہری انتظامیہ اور شہری ترقی وزیر کے ٹی راماراو نے آج اعلان کیا ہے کہ تلنگانہ حکومت ابتدائیہ'اسٹارٹپ' صنعتوں کا تعاون کرنے کے لئے 100 روپے کی ٹی ہب فنڈ قائم کرے گی اور یہ کام آئندہ 2 ماہ میں کیا جائے گا۔ اس سے نہ صرف سیلف ایمپلائمنٹ کو فروغ ملے گا، بلکہ شہری اور دیہی علاقوں میں جدت ترازی کو فروغ دیا جا سکے گا۔ ساتھ ہی انہوں نے کہا کہ ٹی ہب کو دنیا کے 10 اكيوبیٹر سینٹروں میں سے ایک بنانے کے لئے حکومت ہر ممکن تعاون کرے گی۔

تلنگانہ کے نوجوان وزیر كےٹی راماراو ٹی ہب کے قیام میں اپنا اہم کردار ادا کر چکے ہیں۔ آج سائبرسٹی كنونشن حال میں ٹی حب کی پہلا سالگرہ سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ مرکزی حکومت نے ڈیجیٹل انڈیا کے لئے 10 ہزار کروڑ روپے کا ہدف رکھا ہے۔ حیدرآباد ہندوستان کے اس مقصد میں سب سے آگے چلتے ہوئے ملک ہی نہیں بلکہ دنیا کے سب سے ٹاپ 10 ابتدائیہ مراکز میں سے ایک بنے گا۔ اس کے لئے تلنگانہ حکومت جلد ہی نہ صرف اپنی انوویشن پالیسی کا اعلان کر رہی ہے، بلکہ 100 کروڑ کا ایک فنڈ بھی قائم کر رہی ہے۔

آئی ٹی وزیر نے کہا کہ 2 سال پہلے جب نئی ریاست میں اسٹارٹپ صنعتوں کو فروغ دینے کی بات ہوئی تو اس میں حکومت کا واضح اشارہ تھا کہ اس میں حکومت معاون کا کردار نبھائے گی۔ براہ راست حکومت اس میں کوئی مداخلت نہیں کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ نئی ریاست میں کاروبار کو بڑھانے، آئی ٹی ایکو سسٹم انسٹال کرنے، ترقی کے نئے راستے ہموار ہونے کے لئے حکومت نے مختلف محاذوں پر کام شروع کیا تھا، اسی میں ایک ٹی ہب کا تعاون بھی تھا۔ ٹی ہب کے قیام میں نئے تخلیقی خیالات کی حوصلہ افزائی کرتے ہوئے ایک ہی ہدف تھا کہ نئے آئیڈیا کو پروان چڑھنے میں مدد کی جائے۔ یہی وجہ تھی کہ ترقی کے نئے نئے ذرائع اور شعبوں کی نشاندہی کی گئی۔ ان میں سے ایک ٹی ہب بھی تھا۔

كےٹی آر نے کہا کہ حکومت نے کبھی اس میں مداخلت نہیں کی، لیکن بنیادی ڈھانچہ اور اقتصادی تعاون کے لئے کبھی بھی قدم پیچھے نہیں ہٹائے گئے۔ نوجوانوں کے لئے ایک پلیٹ فارم کے طور پر اسے نصب کیا گیا اور آج یہ نوجوانوں کو اپنے انٹرپرائز سے جڑے خواب کو شرمندہ تعبیر کرنے میں مدد کر رہا ہے۔ نوجوان اپنے تخلیقی خیالات کو تشکیل دینے کی کوشش کر سکتے ہیں۔ اگر وہ ناکام بھی ہو جاتے ہیں تو ان کی زندگی میں ایک اہم تجربہ ملے گا۔

آئی ٹی وزیر نے کہا کہ ٹی ہب کے دوسرے مرحلے کا منصوبہ تیار ہے۔ اس کے ایک ویڈیو کے پیشکش کے بعد كےٹی آر نے کہا کہ 800 لوگوں کو کام کرنے کے لئے یہاں جگہ فراہم کی جائے گی، جبکہ ٹی ہب 1 میں 200 ابتدائیہ کی جگہ ہے۔ یہاں ایک بہترین بنیادی ڈھانچہ تیار کیا جائے گا۔ اس کو قائم کرنے کے لئے کاروباری راجو ریڈی سامنے آئے ہیں۔ اس میں نہ صرف ابتدائیہ کو نئی سمت ملے گی، بلکہ دیہی صلاحہتوں کو ٹکنالوجی کے میدان میں اپنے نئے آئیڈیا کو عملی جامہ پہنانے کا موقع ملے گا۔ راجو ریڈی نظام آباد میں کافی اہم کام کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ٹی ہب 2 دیہی ترقی کے لئے ٹکنالوجی پر اپنا کام کرے گا۔ حکومت بھی اس کا مکمل تعاون کرے گی۔ اس سے تلنگانہ میں اسٹارٹپ صنعت کو عالمی نقشے پر لانے میں اہم تعاون ملے گا۔

ٹی ہب کے بانی ڈائریکٹر بی۔ وی موہن ریڈی نے کہا کہ ٹی ہب کے قیام میں نہ صرف وژنری رہنما شامل رہے، بلکہ حیدرآباد میں اسٹارٹپ کا نیا ماحول بنانے کا وژن کھنے والے کاروباری بھی شامل تھے۔ آج یہاں پر اپنی کاروباری صلاحیتوں کو شروع کرنے والے 20 سے زائد ابتدائیہ نہ صرف ترقی کر رہے ہیں، بلکہ توسیع بھی کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ نئے ٹی حب میں نئے کاوروباریوں کی منصوبہ بندی کے ساتھ ساتھ انجینئرنگ کالجوں کو اس میں شمولیت لازمی ہے، تاکہ وہاں چھوٹے چھوٹے انكيوبیٹر سینٹروں کے قیام کیا جا سکے۔ موقع پر آئی ٹی سیکرٹری جيش رنجن ٹی ہب کے سی ای او سرانیواس كلی پارا، جے کرشنن اور شرينی راجو بھی موجود تھے۔

कहानियाँ मुझे विरासत में मिली हैं। माँ, बाप, चाचा, चाची, मासी, बुआ, नानी दादी, सब की अलग अलग कहानियाँ थीं। उसी विरासत को पास पड़ोस, दोस्त रिश्तेदार, नुक्कड, गली, मुहल्ला, शहर, देश और विदेश के चेहरों में छुपी कहानियों के साथ मिलाकर पेश कर रहा हूँ।

Related Stories