سنگیت مارتنڈ پنڈت جسراج کی جدوجہد کی اچھوتی کہانی

0

جدوجہد کے دنوں میں کوئی میرے ساتھ ساتھ چلتا رہا

کامیابیوں کولگ سکتی ہے'میں' کی نظر

کسی بھی کامیابی کے پیچھے جدوجہد کی ایک طویل داستان چھپی ہوتی ہے۔ جدوجہد کی کہانیاں کبھی کبھی کسی کو پتہ چلتی ہیں، لیکن کبھی کبھی وہ کہانیاں وہ واقعات کامیابی کے تہوں میں گم ہو جاتی ہیں۔ مشکل سے ہی کسی دن تہیں، کھولتی جاتی ہیں اور جدوجہد کے انچھوئے پہلو سامنے آتے رہتے ہیں۔ ہندوستانی موسیقی کے آسمان پر طویل عرصے تک سورج بن کر چمکتے رہے سنگییت مارتڈ پنڈت جسراج آج اس دنیا کی سب سے سینئر فنکار کے طور پر موجود ہیں۔

سال بھر وہ کہیں بھی رہیں، لیکن نومبر کے آخری ہفتے میں حیدرآباد ضرور آتے ہیں اور جب وہ حیدرآباد آتے ہیں تو ان کے ماضی کی یادیں بھی لوٹ آتی ہیں۔ حیدرآباد میں ان یادوں کو تازہ کرنے کے لئے ایک ہی جگہ ہے اور وہ ہے، ان کے والد کی سمادھی، جہاں پر وہ گھنٹوں بیٹھ کر موسیقی کی اس بخشش کو یاد کرتے ہیں جو ان کو اپنے والد سے انہیں ملی تھیں۔

چار پانچ سال کی عمر زیادہ نہیں ہوتی اور اسی عمر میں باپ کا ساِہ سر سے اٹھنے کا غم وہی جان سکتا ہے، جس پر وہ گزری ہے اور یہیں سے شروع ہوتا ہے، جدوجہد کا طویل سلسلہ۔

حیدرآباد کے امبرپےٹھ میں والد کی سمادھی کے پاس یور اسٹوری سے بات چیت کے دوران پنڈت جی نے اپنے ماضی کے بہت سارے واقیعات سنائے۔ اپنی اس بڑی کامیابی کے پیچھے چھپے عناصر کے بارے میں پنڈت جسراج واضح طور پر قبول کرتے ہیں کہ ان کی جدوجہد جاری ہے، بلکہ ہر دن اور ہر لمحے کو وہ جدوجہد ہی تصور کرتے ہیں۔ اور یہ بھی مانتے ہیں کہ ہر مصیبت میں خدائے برترکی مدد انہیں ملتی رہی ہے۔

آج جو کہانی ہم سنا رہے ہیں، وہ کہانی کولکتہ کی گلیوں میں ماں کی دوا کے لئے بھٹکتے نوجوان جسراج کی ہے۔ ان دنوں کی یادیں تازہ کرتے ہوئے پنڈت جسراج کہتے ہیں، `باپ کی خدمت نہیں کر سکا تھا۔ ماں ساتھ تھیں، لیکن انہیں کینسر نے آ گھیرا۔ پچاس کی دہائی میں کینسر کا ہونا کیا ہو سکتا ہے، اس کا اندازہ آج لگانا مشکل ہے۔ وہ بتاتے ہیں،'' ڈاکٹر کی لکھی ادویات ڈھونڈتا ہوا پیدل ساوتھ کولکتہ سے سینٹرل کولکتہ پہنچا۔ بہت سی دوائی کی دکانوں میں اس وقت وہ دوائیں تھی ہی نہیں۔ جب آخر کار ایک دکان پر دوائیں ملی بھی تو جیب میں اتنے روپے نہیں تھے، جتنی مہنگی وہ دوائیں تھیں۔ جیب سے جتنے روپے نکل سکتے تھے، نکالنے کے بعد میں نے کہا کہ باقی پیسے بعد میں دوں گا۔ فارمیسی والے کا جواب تھا کہ دوائی کی دکان پر بھی کبھی اودھار ملنے کی بات سنی ہے؟۔۔۔ لیکن اسی وقت کسی نے اپنا ہاتھ كادھے پر رکھا اور دکان میں کھڑے شخص سے کہا کہ جتنے روپے ہیں، لے لو اور مکمل ادویات دے دو باقی روپے میرے اکاؤنٹ میں لکھ دینا ۔۔۔۔ وہ دکان کے مالک تھے۔ پتہ نہیں مجھے کس طرح جانتے تھے۔ ''

پنڈت جسراج مانتے ہیں کہ جدوجہد، محنت، مشقت، ریاض ساری چیزیں زندگی میں ضروری ہیں، لیکن ان سب کے ساتھ اوپر والے کی مہربانی بھی ضروری ہے۔ وہی جدوجہد میں ساتھ دیتا ہے۔ پنڈت جی نے اپنی زندگی میں ہزاروں لوگوں کو زمین سے آسمان کی راہ دکھائی ہے۔ ان کی اپنی زندگی کے کئی کہانیاں ہیں جو لوگوں کو نئی راہ دے سکتی ہیں۔

ایک اور واقعہ کا ذکر کرتے ہوئے پنڈت جی بتاتے ہیں، ''ماں کے لئے ادویات کا انتظام تو ہو گیا تھا۔ ڈاکٹر نے کہا تھا کہ دن میں دو بار انہیں انجکشن لگانا ہوگا۔ اس کے لئے ڈاکٹر نے ایک دورے کے لئے 15 روپے پوچھے۔ ایک دن میں تیس روپے جٹا پانا بہت مشکل تھا، لیکن سوال ماں کا تھا میں نے حامی بھر دی۔ دوسرے دن جب ڈاکٹر صاحب جا رہے تھے، تو میں نے ان سے گزارش کی کہ آج شام کو آل انڈیا ریڈیو سنئے، اس پرمیں گا رہا ہوں۔ انہوں نے کہا، مجھے گانے میں دلچسپی نہیں ہے اور میں اپنی بھانجی کے گھر دعوت میں جا رہا ہوں۔ '۔۔۔ میں مایوس ہو گیا، لیکن جب دوسرے دن ڈاکٹر صاحب آئے تو ان کا موڑ بالکل بدلا ہوا تھا۔ انہوں نے کہا میں نے تمہارا گانا سنا۔ جانتے ہو یہ گانا میں نے اپنی بھانجی کے گھرپر سنا اور بھانجی نے کہا کہ اس گانے والے کے پاس پیسے نہیں رہتے ۔'۔۔۔ ان وہ بھانجی گیتا رائے تھی، جو بعد میں گلوکارہ گیتا دت کے نام سے مشہور ہوئی۔ ڈاکٹر صاحب نے اس دن کے بعد برائےنام صرف 2 روپے فی دورہ لینے شروع کیا۔ اس طرح جدوجہد کے دنوں میں کوئی میرے ساتھ ساتھ چلتا رہا۔ '

پنڈت جسراج مانتے ہیں کہ جدوجہد سے كاميابيا ملتی ہیں، لیکن ساتھ ہی وہ یہ بھی مانتے ہیں کہ ان کامیابیوں کو 'میں' کی نظر نہیں کرنا چاہئے۔ آدمی کو جب اپنے آپ پر گھمنڈ آتا ہے تو وہ ختم ہو جاتا ہے۔ اس جدوجہد کے معنی بھی کھو جاتے ہیں۔

پنڈت جسراج کے بچپن کے کچھ دن حیدرآباد کے گلی کوچوں میں گزرے ہیں۔ یہاں گولی گڈا چمن اور نام پلّی ایسے محلے ہیں جہاں پنڈت جی کے بچپن کی بہت سی یادیں ہیں۔

انہیں اسکول کے راستے کی وہ ہوٹل بھی یاد ہے، جہاں رک کر وہ بیگم اختر کی غزل ۔۔۔

دیوانہ بنانا ہے تو دیوانہ بنا دے

، ورنہ کہیں تقدیر تماشا نہ بنا دے ۔۔۔۔ سنا کرتے تھے۔

اس غزل نے ان کا اسکول چھڑوا دیا اور پھر وہ طبلا بجانے لگے۔ برسوں بعد لاہور میں انہں گلوکار آرٹسٹ کے طور پر اسٹیج کا اہم کردار بننے کی سوجھی اور پھر گلوکار بننے کے لئے بھی طویل جدوجہد کا سلسلہ جاری رہا۔

پنڈت جی مانتے ہیں کہ اس طویل زندگی سے کچھ تحریک و ترغیب اگر لی جا سکتی ہے تو یہی کہ مسلسل کام کرتے رہنا چاہئے۔ گانے کا شوق ہے تو سیکھتے رہو اور ریاض کرتے رہو اور اس اوپر والے کی مہربانی کا انتظار کرو۔

(یہ کہانی پنٹت جسراج کے ساتھ اروند یادو کے انٹریو کے اختباسات کی بنیاد پر لکھی گئی ہے۔ )