ہندوستان ڈیجیٹل نوآباد ملک بننے کا خطرہ: موہن پئی

پئی نے چین اور امریکہ کی جانب سے بڑے پیمانے پرہندوستان کی ڈیجیٹل معیشت میں سرمایہ کاری کو لے کر آگاہ کیا۔

0

 ہندوستانی سرمایہ کار اورماہر تعلیم موہن پئی نے چین اور امریکہ کی جانب سے بڑے پیمانے پر ہندوستان کی ڈیجیٹل معیشت میں سرمایہ کاری کو دیکھتے ہوئے آگاہ کیا ہے۔ انہوں نے کہا ہے کہ جب تک ہندوستانی کمپنیاں اس میں سرمایہ کاری نہیں کرتیں ہیں، ملک ڈیجیٹل کالونی بن سکتا ہے۔ اگر آپ ڈیجیٹل انقلاب سے چوکتے ہیں، ہماری بڑی کمپنیاں چینی سرمایہ سے کنٹرول ہو جائیں گی جو کافی خطرناک ہے۔

امریکہ اور چین کی جانب سے ہندوستان کی ڈیجیٹل معیشت میں بڑے پیمانے پر سرمایہ کاری کے ممکنہ نتائج کا ذکر کرتے ہوئے منی پال ورلڈ ایجوکیشن کے چیئرمین موہن پئی نے آگاہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہندوستان ڈیجیٹل کالونی بن سکتا ہے۔ انہوں نے کہا، 'امریکہ اور چین کے درمیان ڈیجیٹل طور پر دبدبے کو لے کر جنگ ہیں۔ اور ہندوستانی سرمایا کار کیلیفورنیا میں زمین جائداد خرید رہے ہیں۔

دنیا کی تیسری سب سے بڑی 'اسٹارٹپ ایکو سسٹم' والے ملک بھارت نے 8-10 ارب ڈالر کا سرمایہ حاصل کیا ہے، جس میں ہندوستانی سرمایہ محض 50 کروڑ ڈالر ہے۔

ساتھ ہی انہوں نے یہ بھی کہا کہ 'ہندوستانی سرمایہ کار بغیر کچھ نئی تخلیق کئے ہی اپنا حصہ چاہتے ہیں۔' انہوں نے ہندوستانی سرمایہ داروں سے رقم کی سرمایہ کاری کے لحاظ سے اس رخ میں تبدیلی لانے کی ترغیب دی۔

ادھر دوسری جانب ہندوستانی سیکورٹیز اینڈ ایکسچینج بورڈ (سیبی) ابتدائی سطح کے اسٹارٹپ ماحول کو فروغ دینے پر غور کر رہا ہے۔ ریگولیٹر کی منصوبہ بندی وینچر کیپیٹل یونٹوں کے لئے مینمم اینجل فنڈ سرمایہ کاری کو موجودہ 50 لاکھ روپے سے کم کر 25 لاکھ روپے کرنے کا ہے۔ سیبی شاید اپنی سرمایہ کاری قابل فنڈ کا 25 فیصد تک انجلہ فنڈوں کو غیر ملکی سرمایہ کاری کے طور پر کرنے کی اجازت دے سکتا ہے۔ یہ متبادل سرمایہ کاری فنڈوں (اے آئی ایف) کی طرز پرہوگا۔ ذرائع نے کہا کہ اس سے فنڈوں کو مختلف علاقوں میں اپنے خطرے کو بانٹنے میں مدد ملے گی۔

بہت سے اس طرح کے اسٹارٹپس ہیں جنہیں آغاز میں منظوری کے لئے کم رقم کی ضرورت ہوتی ہے۔ ایسے میں اس حد کو کم کرکے 25 لاکھ روپے کرنے سے اس طرح کی کمپنیوں کو فائدہ ہو گا۔