نابینا لوگوں کو ایک صحافی کی خاص سوغات

0

جب ہم دوسروں کی ضروریات کو پورا کرنا زندگی کا مقصد بنا لیتے ہیں تو اس مقصد کی کامیابی ہمیں وہ خوشی دیتی ہے، جس کاموازنہ کسی بھی چیز سے نہیں کیا جا سکتا - اپاسنا (upaasna)نام ہے اس صحافی کا جنہوں نے نابینا لوگوں کے لئے ایک میگزین نکالنا شروع کیا، اس امید سے کہ نابینا لوگوں کو بھی خبر سے الگ کچھ بہتر اور معلوماتی چیزیں پڑھنے کو ملے۔

ممبئی کی ایک پی آر کمپنی میں کام کرنے کے دوران بار-بار اپاسنا کے دل میں نابینا لوگوں کے لئے کچھ کرنے کا خیال آتا تھا- بہت غور کے بعدانھوں نے سوچا کیوں نہ بریل رسم الخط (Braille script) میں ایک طرز زندگی (Lifestyle) میگزین شائع کی جائے- اس بات کو اپاسنا نے اپنے ایک دوست کو بتایا اور پھر دونوں نے مل کر مئی 2013 میں ' وائٹ پرنٹ' نام سے 64 صفحات کی طرز زندگی پر مبنی ایک انگریزی میگزین لانچ کی- یہ میگزین اس لئے بھی خاص ہے کیونکہ اپنی نوعیت کی یہ پہلی بریل لپي کی 'طریقہ حیات ' میگزین ہے۔

ممبئی میں میگزین کا پرنٹ 'نیشنل انسٹی ٹیوٹ فاربلائنڈ س ' نے کیا- اس میں مختلف مسائل جیسے سیاست، موسیقی، فلم، تکنیکی موضوع، آرٹ، فوڈ اور سفر وغیرہ موضوعات پر مواد ہوتی ہے- مشہور صحافی برکھا دت بھی اس میگزین کے لئے لکھتی ہیں- اس کے علاوہ میگزین میں چھوٹی کہانیاں بھی شائع ہوتی ہیں- اس ماہانہ میگزین کا ایک اہم کالم ہے ریڈرز سیکشن- یہ سیکشن میگزین کے قارئین کے لئے ہے جس میں وہ کسی بھی صنف میں اپنا مضمون بھیج سکتے ہیں جیسے کہانی، شاعری، یادداشت، سفر نامہ وغیرہ- اپاسنا بتاتی ہیں کہ لوگ اکثر مجھ سے پوچھتے ہیں کہ وہ کس طرح نابینا لوگوں سے جڑیں ؟ انہیں آخر کس چیز نے نابینا لوگوں کے لئے کام کرنے کو آمادہ کیا ؟ اس کے جواب میں اپاسنا کہتی ہیں کہ صرف یہ میگزین' وائٹ پرنٹ' ہی ان کی زندگی کی پہلی چیز ہے جس کی وجہ سے وہ نابینا افراد سے جڑیں- کافی پہلے سے وہ دیکھنے سے معذور لوگوں کے لئے کچھ کرنا چاہتی تھیں- اسی دوران انھوں نے سوچا کہ نابینا لوگوں کے لئے کوئی میگزین مارکیٹ میں دستیاب نہیں ہے تو کیوں نہ اسی سمت میں کچھ کام کیا جائے- اور انہوں نے کام شروع کر دیا- دل سے کام کیا اور آج نتیجہ سب کے سامنے ہے۔

اپاسنا نے جے ہند کالج ممبئی سے ذرائع ابلاغ میں گریجویشن کیا - اس کے بعد اوٹاوا، کینیڈا کی یونیورسٹی سے کارپوریٹ کمیونکیشن کی تعلیم حاصل کی-

کسی بھی نئے کاروبار کو کھڑا کرنے میں کچھ دقتیں تو آتی ہی ہیں- اپاسنا کے سامنے بھی دقتیں آئیں- جب دقتیں آنی شروع ہوئیں تو ان کی مدد کے لئے آگے آنے کے بجائے لوگوں نے انہیں نوکری اور اپنے کیریئر پر توجہ دینے کا مشورہ دیا- لیکن اپاسنا تو طے کر چکی تھیں کہ چاہے کتنی ہی دقتیں آئے وہ اس کام کو ضرور کریں گی۔

فنڈ اکٹھا کرنا سب سے بڑا چیلنج

اپاسنا کے آگے اپنے اس مقصد کو پورا کرنے کے لئے سب سے بڑی ضرورت تھی فنڈ- لیکن پیسہ آئے کہاں سے؟ وائٹ پرنٹ ایک چیرٹی کاروبار نہیں ہے جسے لوگوں کے تعاون سے چلایا جا سکے- میگزین میں زیادہ تر اشتہارات تصاویر کے ذریعے ہی ہوتے ہیں- لیکن اب اپاسنا نے میگزین کے لئے آڈیو اشتہارات کے امکانات کو تلاش کیا -

کارپوریٹ کی حمایت

میگزین کو گزشتہ چند ماہ میں بڑی بڑی کمپنیوں جیسے کوکاکولا، ریمنڈس اور ٹاٹا گروپ کا تعاون ملا - تاہم اشتہارات کے لئے کمپنیوں کو سمجھانے میں اب بھی بہت دقت آتی ہے- آج ہر ماہ وائٹ پرنٹ کی تین سو کاپیاں چھپتی ہیں- جنھیں ملک کے مختلف حصوں میں فروخت کیلئے بھیجا جاتا ہے- اپاسنا بتاتی ہیں کہ سب سے زیادہ خوشی اس وقت ہوتی ہے جب کسی دور پردیش سے میگزین کی مانگ آتی ہے- اس کے ساتھ ہی ہمیں فون، ای میل اور خطوط کے ذریعے بھی لوگوں کی رائے معلوم ہوتی ہے- جب لوگ اپنی مثبت راۓ میگزین کے بارے میں دیتے ہیں تو یہ ہماری حوصلہ افزائی کرتا ہے کہ ہم اسے اوربہتر بنائیں- مجھے یاد ہے ایک بار شمالی بھارت سے ایک فون آیا اور اس لڑکی نے مجھ سے کہا کہ وہ ایک ہی دن میں مکمل میگزین پڑھ چکی ہے اور نئے شمارے کا انتظار کر رہی ہیں- اس کی بات سن کر میری خوشی کا ٹھکانا نہیں رہا۔

قیمت اور میگزین کی توسیع

وائٹ پرنٹ میگزین کی قیمت صرف تیس روپے ہے اس ریونیو کے لئے میگزین کو مکمل طور پر اشتہارات پر انحصار کرنا پڑتا ہے- سوشل میڈیا نے میگزین کے فروغ میں اہم کردار ادا کیا ہے- اس کے علاوہ مختلف ذرائع سے لوگوں کو میگزین کے بارے میں معلومات دی جاتی ہے- تاکہ زیادہ سے زیادہ اشتہارات مل سکیں اور میگزین کی توسیع ہو سکے۔

مقصد

اپاسنا بتاتی ہیں کہ ہمارا مقصد بہت بڑا ہے- ہم چاہتے ہیں کہ مستقبل میں زیادہ سے زیادہ لوگوں تک میگزین پہنچے- صرف ہندوستان ہی نہیں بلکہ ہم بین الاقوامی سطح پر بھی اس میگزین کو لے جانا چاہتے ہیں- ہم نے ایک چھوٹی سی میوزیکل فلم، 'بی فار بریل' بھی بنائی ہے جو کہ یو ٹیوب پر موجود ہے- اس سے بھی بریل لپي کی تشہیر ہو گی - ہم جانتے ہیں کہ موسیقی لوگوں تک اپنی بات پهچانے کا بہترین ذریعہ ہے اس لئے ہم نے موسیقی کا سہارا لیا۔