2015 میں مراٹھی سنیما کا شاندار مظاہرہ ۔۔ قومی ایوارڈ سے لے کر آسکر تک

0

بالی ووڈ میں خان اور کپورجیسے سوپراسٹاروں کی بدولت باکس آفس پر خوب کمائی کا نئے ریکارڈ بنائے جا رہے ہیں، وہیں دوسری جانب  مراٹھی سنیما کا نئے سرے سے عروج ہو رہا ہے اور اپنے مواد اور کہانیوں سے وہ منفرد تاثر چھوڑ رہا ہے۔

اس سال جن مراٹھی فلموں کی بحث ہورہی ان میں 'کورٹ'، 'قلعہ'، 'كٹيار كلجت گھشالی'، 'ہائی وے، 'ممبئی پونے ممبئی -2' اور 'ڈبل سیٹ' شامل ہیں۔

ان سب میں زیادہ کامیاب اورموضوع بحث رہی قومی ایوارڈ یافتہ فلم 'کورٹ' جس ڈائریکٹر چیتنیہ تامهانے نے اپنی اس پہلی فلم میں عدالت کے کمرہ موضوع بنا کر ہندوستانی عدالتی نظام کی تصویر پیش کرنے کی کوشش کی۔

ایک ہندوستانی فلم کے طورپرسب سے زیادہ قومی اور بین الاقوامی ایوارڈ تقریبا 18 ایوارڈ جیتنے والی فلم 'کورٹ' کو ہندوستان کی سرکاری اندراج کے طور پر 88 ویں اکیڈمی: آسکر: ایوارڈ کے لئے بہترین غیر ملکی زبان کی فلم زمرے میں بھیجا گیا۔

ڈائریکٹر اویناش ارون کی پہلی فلم 'کلّا' (قلعہ) کو بھی ناقدین نے تعریفوں سے نوازا۔ اس میں مراٹھی سنیما کے روایت کو برقرار رکھا گیا جیسے کہ زیادہ تر مراٹھی فلموں کی کہانی بچوں پر مبنی ہوتی ہے۔ ایرانی فلموں کی طرح۔ 'قلعہ' میں ایک 11 سال کے لڑکے کی کہانی ہے جو اپنے والد کی موت کے بعد ایک مشکل دور سے گزر رہا ہوتا ہے۔

'قلعہ' کو بہترین مراٹھی فلم کا قومی ایوارڈ ملا۔ اویناش 'مسان' کے بھی سنیماٹوگراپھر ہیں جسے کان فلم فیسٹیول میں دو ایوارڈ ملے۔

جہاں 'کورٹ' اور 'قلعہ' کا فنکارانہ پہلو بہت بہتر تھا وہیں ایک اور نئے ڈائریکٹر سبودھ بھاوے کی پہلی فلم 'كٹيار كلجت گھشالي' مراٹھی سنیما کی بلاک بسٹر ہٹ رہی۔

اس فلم میں شنکر مهادیون اور سچن پلگاوكر نے اہم کردار نبھایا ہیں۔ مهادیون نے اس فلم سے پہلی بار اداکاری کے میدان میں قدم رکھا۔

اسی طرح 'ہائی وے'، 'ممبئی پونے ممبئی -2' اور 'ڈبل سیٹ' جیسی فلموں نے بھی اپنی چھاپ چھوڑی۔