دفاعی پیداوار میں خود کفیل بننے کے لئے ہندوستانی تاجروں سے خریدداری کو ترجیح : پاریکر

0


ملک کو دفاعی پیداوار میں خود کفیل بنانے کے لئے 'میک ان انڈیا' سمیت کئی اقمدام اٹھائے گئے ہیں۔ گزشتہ تین سالوں کے دوران ہندوستانی فوج کی طرف سے سرمایہ حصول پر کل اخراجات کا 75 فیصد سے زیادہ آرڈر ہندوستانی فرموں کو دیئے گئے ہیں۔

لوک سبھا میں نتيانند رائے کے سوال کے تحریری جواب میں وزیر دفاع منوہر پاریکر نے کہا کہ عوامی اور خانگی شعبے کی صلاحیتوں کا استعمال کرتے ہوئے دفاعی پیداوار میں خود انحصاری حاصل کرنے کے لئے کئی اقدامات اٹھائے گئے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ دفاعی پیداوار میں ہر شعبے میں مقامی پیداوار ممکن نہیں ہے۔ کیونکہ بہت سی چیزوں کی ہمیں کم رقم کی ضرورت ہوتی ہے اور اس کی پیداوار کا خرچ زیادہ ہوگا، جبکہ اوپن مارکیٹ میں یہ دستیاب ہوتا ہے۔ تاہم دفاعی شعبہ میں ملکی پیداوار کی حوصلہ افزائی کرنے کی سمت میں ہم مسلسل آگے بڑھ رہے ہیں۔

وزیر دفاع نے کہا کہ ان اقدامات کے تحت ہندوستانی تاجروں سے خریدداری کو ترجیح دینا، لائسنسنگ نظام کا لبرلائزیشن اور دفاع کے شعبے میں براہ راست غیر ملکی سرمایہ کاری کی حد کو بڑھاتے ہوئےہندوستانی صنعت کے لئے جدید ٹیکنالوجی تک رسائی حاصل کرنا اہم ہیں۔

پاریکر نے کہا کہ حال کے دنوں میں زیادہ تر بحری جہاز اور آبدوزوں کی تعمیر ہندوستانی شپ یارڈ میں کی جا رہی ہے.

انہوں نے کہا کہ گزشتہ تین سال کے دوران ہندوستانی فوج کی طرف سے سرمایہ حصول پر کل اخراجات کے 75 فیصد سے زیادہ آرڈر ہندوستانی فرموں کو دیئے گئے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ نئے دفاعی حصول کے قوانین 2016 بھی ایک اپریل 2016 سے مؤثر ہو گئی ہے۔ اس کے تحت 'میک ان انڈیا' کو ترجیح دی گئی ہے۔ میک ان انڈیا کے تحت چھوٹی صنعتوں کیلئے 10 کروڑ روپے حکومت کی طرف سے مالی امداد سے اور 3 کروڑ روپے: صنعت کی طرف سے فنڈز فراہم کررہی: ترقی لاگت منصوبوں کی نشاندہی کی گئی ہے۔

وزیر دفاع نے کہا کہ بنیادی طور پر امریکہ، روس، اسرائیل اور فرانس جیسے ممالک کے غیر ملکی تاجروں کو جاری کیے گئے ارڈرو میں 2013.14 میں اخراجات 35082 کروڑ روپے تھے جو 2014.15 میں گھٹ کر 24992 کروڑ روپے ہو گیا اور 2015.16 میں یہ 22422 کروڑ روپے رہ گیا۔ پاریکر نے کہا کہ دفاع لاجسٹک کی درآمد کے لئے کوئی ہدف مقرر نہیں کیا جاتا ہے اور اس وجہ سے ایسے ہدف کےلئے الگ سے کوئی بجٹ مختص نہیں ہوتا ہے۔