'ہندوستان کا مظاہرہ دیگر ممالک کے مقابلے بہتر'

0

ہندوستان کی شرح ترقی میں 2017-18 میں 7.8 فیصد کا اضافہ درج کرنے کے اندازے کے درمیان اقوام متحدہ کے ایک ماہر نے کہا کہ محتاط مربوط و اقتصادی پالیسیوں، کم افراط زر اور کچھ بنیادی ڈھانچہ میں اصلاحات سے ملک کو عالمی اقتصادی نرمی کے ماحول میں نسبتاً بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کرنے میں مدد ملی ہے۔

ایشیا اور بحر الکاہل کے لئے اقوام متحدہ اقتصادی اور سماجی سروے رپورٹ - 2016 میں اندازہ ظاہر کیا گیا کہ ہندوستانی معیشت کی ترقی کی شرح 2016-17 میں 7.6 فیصد رہنے کا اندازہ ہے اور 2017-18 میں یہ بڑھ کر 7.8 فیصد رہے گی۔ ایسا اہم طور پر گھریلو صارفین کی طلب اور مستحکم روزگار اور نسبتاً کم افراط زر کی مدد سے ہوگا۔

اقوام متحدہ کی اقتصادی اور سماجی معاملہ محکمہ کے اقتصادی امور کے افسر سیبسٹین ورگارا نے یہ رپورٹ جاری کرنے کے موقع پر نامہ نگاروں سے کہا کہ ہندوستان نسبتا 'بہت اچھی' طرح کی کارکردگی کے پیچھے بنیادی ڈھانچہ کے عنصر کام کر رہے ہیں.

ورگارا نے کہا، '' حالیہ برسوں میں اقتصادی پالیسی، خاص طور پر مالی لحاظ سے محتیاط رہی ہے۔ یہ صارفین کو رجھان بہتر کرنے کا اچھا ڈھانچہ مہیا کرانے کی نظر سے مثبت ہے۔ '' انہوں نے کہا کہ مانیٹری پالیسی کا رول بھی حالیہ برسوں میں افراط زر کی شرح کم کرنے میں اہم رہا ہے۔