ہاتھی چھاپ کاغذ کی دلچسپ کہانی

0

آپ جب کسی چیز کی تلاش میں نہیں ہوتے ہیں، کئی بار وہی آپ کے سامنے سب سے اچھی کہانی بن کر سامنے آ جاتی ہے۔ دھرم شالہ میں ایک ایسے جوڑے سے بات کر رہا تھا جو ایک اسٹارٹپ شروع کر رہے تھے اور جس کے لئے وہ امریکہ جانے کی تیاری میں تھے۔ کمپنی کا نام تھا اولڈ یاک بازار اور جو چیز وہ بیچتے تھے ان میں ہاتھی کے اسٹول سے بنے کاغذ بھی شامل ہیں۔ میں نے ان کے اس کاروبار کے بارے میں مزید معلومات حاصل چاہتا تھا، اب جبکہ اولڈ یاک بازار ایک دوسری کہانی کا موضوع تھا، میں نے ان سے کاغذ بنانے والوں کے بارے میں مزید معلومات جمع کرنے کا فیصلہ کیا۔ مجھے معلوم ہوا کہ اس کاغذ کے پیچھے وجیندر شیخاوت اور عما مہرا کا ہاتھ ہے۔

2003 میں یہ کام شروع کرنے کے بعد ان کی مقبولیت مسلسل بڑھتی گئی کیونکہ ان کا کام ہی کچھ الگ تھا اور جس کا مقابلہ کرنا تھوڑا مشکل تھا، پر ان کی کہانی ایسی تھی جس کا ذکر کرنا ضروری تھا۔ جے پور میں ایک مٹھ میں رہنے کے دوران مہیما نے وجیندر کو ان کے سامنے جمع ہاتھی کے اسٹول کے پہاڑ کے بارے میں بتایا تھا۔ تب انہوں نے ہاتھی کے اسٹول کو نظر انداز کیا، لیکن بعد میں انہیں اس کا احساس ہوا اوروہ اس کے صحیح استعمال کے بارے میں سوچنے لگے۔ ہاتھی کے اسٹول کی فنک، اس کی ساخت اور اس کی گندگی کو درکنار کیا اور وجیندر کی دلچسپی کو دیکھتے ہوئے اس کام میں جٹ گئی۔ وہ ہمیشہ سے ہی مختلف چیزوں سے کاغذ بنانے کا استعمال کرتے رہتے تھے اور ان کے لئے یہ بھی ایک تجربہ ہی تھا جس کے لئے بہت کچھ کیا جانا تھا۔

انہوں نے ہاتھی کا تھوڑا سا اسٹول اٹھایا اور پھر اس پر کام کرنا شروع کیا۔ کافی مشقت کے بعد وہ اس کا کاغذ بنانے میں کامیاب ہوئے - اور اس طرح ہاتھی پرنٹ کاغذ برانڈ وجود میں آیا۔

آخر یہ کیسے بنا؟

ہاتھی کے اسٹول سے کاغذ بنانے کا طریقہ كمو بیش ویسا ہی ہے جیسا ہاتھ سے بنائے جانے والے کسی بھی کاغذ کو بنانے کا طریقہ۔ جی ہاں، ہاتھی کے اسٹول میں زیادہ مقدار میں تنت ہونے کی وجہ سے اس میں تھوڑا تبدیلی کرنا پڑا۔ دونوں نے بتایا، "ہمارے لئے سب سے بڑا چیلنج یہ طے کرنا تھا کہ ہم جس چیز سے کاغذ بنا رہے ہیں وہ نہ تو ہمارے لئے نقصانده ہو اور نہ ہی اسے استعمال کرنے والوں کو کوئی خطرہ ہو، تو اس کو وائرس سے آزاد بنانے کے لئے ہم نے اس میں ادویات کا استعمال کیا۔ "

ہاتھی کا پاخانہ جمع کرنا

ہاتھی کے اسٹول کی صفائی

پکانا

چھنٹائی کرنا

گودا بنانا

پرت بنانا

سکھانا

کیلنڈرنگ

ترقی

شروع کے چار سال تک اس کی مصنوعات کو جرمنی برآمد کیا گیا، پھر 2007 میں ہندوستان میں اس کی فروخت شروع کی گئی۔ کمپنی جے پور میں واقع ہے اور گزشتہ چھ سال کے دوران ہاتھی چھاپ نے اپنی پہنچ 50 اسٹورز تک بنا لی ہے اور اس کے ساتھ ہی کچھ آن لائن اسٹورز میں اس پروڈکٹ فروخت ہو رہے ہیں۔ کمپنی کی زیادہ تر آمدنی برآمد سے آتی ہے اور گزشتہ مالی سال میں کمپنی نے تقریبا 35 لاکھ روپے کی آمدنی کی تھی۔

اس کی صلاحیت اور اس طرح کے دوسرے کاروبار

ہندوستان میں اس طرح کے کام کی کوئی کمی نہیں ہے اور اس طرح کے کاروبار کو فروغ دینا کافی فائدہ مند ہوتا ہے۔ چاہے آپ کو دو بچوں کے ساتھ ماكو ٹیکسٹائل کی بات کریں یا اوومو وےهكل کی کریں، ملک میں ایسے کئی لوگ ہیں جو الگ الگ چیزوں پر کام کر رہے ہیں۔

قلمکار ساحل

مترجم ذلیخا نظیر

Related Stories